Tuesday, 18 December 2012

مجھ میں اُتر گیا ہے وہ سرطان کی طرح



دشمن ہے اور ساتھ رہے جان کی طرح
مجھ میں اُتر گیا ہے وہ سرطان کی طرح

جکڑے ہُوئے ہے تن کو مرے ‘ اس کی آرزو
پھیلا ہُوا ہے جال سا شریان کی طرح

دیوار و در نے جس کے لیے ہجر کاٹے تھے
آیا تھا چند روز کو ، مہمان کی طرح

دکھ کی رُتوں میں پیڑ نے تنہا سفر کیا
پتّوں کو پہلے بھیج کے سامان کی طرح

گہرے خنک اندھیرے میں اُجلے تکلّفات
گھر کی فضا بھی ہو گئی شیزان کی طرح

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets