Tuesday, 18 December 2012

سوچ کر جرم تمنا کی سزا دو ھم کو


نہ سیو ھونٹ نہ خوابوں میں صدا دو ھم کو
مصلحت کا یہ تقاضا ھے ، بھلا دو ھم کو

جرم سقراط سے ھٹ کر نہ سزا دو ھم کو
زہر رکھا ھے تو یہ آب بقا دو ھم کو

بستیاں آگ میں بہہ جائیں کہ پتھر برسیں
ھم اگر سوئے ھوئے ھیں جگا دو ھم کو

خضر مشہور ھو الیاس بنے پھرتے ھو
کب سے ھم گم سم ھیں ھمارا تو پتہ دو ھم کو

زیست ھے اس سحرو شام سے بیزار و زبوں
لالہ گل کی طرح رنگ قبا دو ھم کو

شورش عشق میں ھے حسن برابر کا شریک
سوچ کر جرم تمنا کی سزا دو ھم کو


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets