Tuesday, 18 December 2012

تجھے کھو کے سوچتا ھوں


کبھی تونے خود بھی سوچا کہ یہ پیاس ھے تو کیوں ھے
تجھے پا کے بھی مرادل جو اداس ھے تو کیوں ھے

مجھے کیوں عزیز تر ھے یہ دھواں دھواں سا موسم
یہ ھوائے شام ہجراں مجھے راس ھے تو کیوں ھے

تجھے کھو کے سوچتا ھوں مرے دامن طلب میں
کوئی خواب ھے تو کیوں ھے کوئی آس ھے تو کیوں ھے

میں اجڑ کے بھی ھوں تیرا تو بچھڑ کے بھی ھے میرا
یہ یقین ھے تو کیوں ھے یہ قیاس ھے تو کیوں ھے

مرے تن برہنہ دشمن اسی غم میں گھل رھے ھیں
کہ مرے بدن پہ سالم یہ لباس ھے تو کیوں ھے

کبھی پوچھ اس کے دل سے کہ یہ خوش مزاج شاعر
بہت اپنی شاعری میں جو اداس ھے تو کیوں ھے

ترا کس نے دل بجھایا مرے اعتبار ساجد
یہ چراغ ہجر اب تک ترے پاس ھے تو کیوں ھے
 


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets