Sunday, 16 December 2012

اِک انوکھے ملال کی خُوشبُو


چارسُو ھے خیال کی خُوشبُو
وقت کے سُر کی تال کی خُوشبُو

جیسے تھامے ھُوئے ھو قوسِ قزح
نُقطۂِ اِتّصال کی خُوشبُو

دیکھنا تھا گراں کہ پھیلی تھی
ھر طرف دیکھ بھال کی خُوشبُو

آتی رھتی ھے آج بھی اکثر
زخم سے اندمال کی خُوشبُو

پاس آیا جو تُو تو آئی مُجھے
اِک انوکھے ملال کی خُوشبُو

باغ میں ساتھ ساتھ چلتی ھے
سبزۂِ پائمال کی خُوشبُو

اُس گلی میں گیا تو لوٹ آئی
وصل کے ماہ و سال کی خُوشبُو

بابِ امسال کھولا ھی تھا ابھی
آگئی پِچھلے سال کی خُوشبُو

چارسُو کوئی بھی نہیں لیکِن
رھتی ھے خدّ و خال کی خُوشبُو

مَیں رھا راستے پہ لیکِن پھِر
آ گئی احتمال کی خُوشبُو

بھر گئی رات میرا جام نوید
ایک خالی خیال کی خُوشبُو


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets