Wednesday, 29 February 2012

hum nay apna sab kuch haar diya hai teray jooay men




abhi talak aankhon kay baadal men kuch paani baqi hai
lagta hai jeevan men koi gharri suhani baqi hai

hum nay apna sab kuch haar diya hai teray jooay men
aik shikast bachi hai baqi aik veerani baqi hai

yaad hai tum nay aik dafa ik bosa bheja tha mujh ko
dil chaahay to lay jana jo aik nishani baqi hai

kabhi kabhi kaanta sa chubh jata hai seenay men
waqt kay peechay shayd koi yaad puraani baqi hai


Wo Chehray Kesey Hotay Hain Keh " Jin Sey Chaand Sharmaye




Zara Si Dair Ko Sab Kuchh Bhula K Dekh Letey Hain
Tujhey Hum Saamnay Apnay Bitha K Dekh Letey Hain,

Suna Hai Madh Bhari Nazrain Teri Peenay Nahi Detin
Ijazat Ho To Hum Nazrain Mila K Dekh Letey Hain,

Wo Chehray Kesey Hotay Hain Keh " Jin Sey Chaand Sharmaye
Terey Rukh Sey Siyah Zulfain Hata k Dekh Letay Hain,

Shama K Paas Ja Kar Kis Tarah Jaltay Hain Parwaanay
Zara Hum Bhi Terey Nazdeeq Aa K Dekh Letey Hain,

Kahin Be-Taab Dil Ko Es Tarah Sey Chain Aa Jaye
Teri Tasweer Ko Dil Sey Laga K Dekh Letey Hain,

Khayalon Men Tarasha Hai Tera Pekar Bhi Ay Janaa`n
Kabhi Khawabon Men" Tujh Ko Bhi Basa k Dekh Letey Hain !

Titlee jo ek mujh ko mili thi kitaab men




Titlee jo ek mujh ko mili thi kitaab men
Woh apna aks chhorr gayi meri khuwaab men

Ab tak woh merey zehen men uljha sawaal hai
Shaamil rahi jo har gharri merey nisaab men

Aankhon men neend hai na koi khawaab door tak
Rehtey hain hum bhi aaj kal waisey azaab men

Milta hai gardishon sey galay lag k chaand bhi
Aaye they simat k faasley kitney saraab men

Aakhir meri wafa ka mujhey kaya sila mila
Likha na aik harf bhi us ney jawaab men

kitni baateN, keh na kehna thiiN, woh keh bheji hain




Be 'rukhi tum ney bhi kii, uzar-e-zamana kar k
hum bhi mehfil say uth aaey hain, bahana kar k

kitni baateN, keh na kehna thiiN, woh keh bheji hain
ab pashemaan hain, qaasid ko ravana kar k

jaanty hain, wo tunak khoo hay, so apna ehvaal
hum suna dety hain, aouroN ka fasana kar k

kaya kahen, kaya hay un aankhoN men, keh rakh deti hain
aik achay bhalay insaaN ko deewana kar k

koi veerana-e-hasti ki khabar kaya lataa
khud bhi hum bhool gaey, dafn khazana kar k

aankh masroof-e-nazara thi, to hum khush thay Faraz
uss ney kaya zulm kiya, dil men thikana kar k

kabhi hum Bheegtey hein chaahton ki taiz barish men



kabhi hum Bheegtey hein chaahton ki taiz barish men
Kabhi barson nahin miltey kissi halki sii ranjish men


Tum he men devtaaoun ki koii khuu buu nah thii warnah
kamii koii nahinn thii merey andaz-e-parastish men


yeh soch lo phir aur bhi tanha nah ho jana
ussey chuuney ki khwaish men, ussey paaney ki chaahat men


bohat sey zakhm hein dil men magr aik zakhm hai aisa
jo jal uth'ta hai raaton men, jo lauu deta hai barish men


Tuesday, 28 February 2012

bheegi palken


bheegi palken

dard sey chhalakti aankhen

aankhon men laal dorey

gaalon pey phisalta moti

lab kat'te hoye

main aksar usey

bari mehviyat se dekhta hon

pagli!

tujhey kaya maloom

tujhey rula kar

main teri aankhon men

saarey jahaan ka husn dekhta hoon!!!!

بھیگی پلکیں
درد سے چھلکتی آنکھیں
آنکھوں میں لال ڈورے
گالوں پہ پھسلتا موتی
لب کٹتے ہوئے
میں اکثر اسے
بڑی محویت سے دیکھتا ہوں
پگلی
تجھے کیا معلوم
تجھے رلا کر
میں تیری آنکھوں میں
سارے جہاں کا حسن دیکھتا یوں

محبت



میں جسم و جاں کے تمام رشتوں سے چاہتا ہوں
نہیں سمجھتا ایسا کیوں ہے

نہ خال و خد کا جمال اُس میں ، نہ زندگی کا کمال کوئی
جو کوئی اُس میں ہنر بھی ہو گا
تو مجھ کو اُس کی خبر نہیں
نہ جانے پھر کیوں

میں وقت کے دائروں سے باہر کسی تصور میں اڑ رہا ہوں
خیال میں ، خواب و خلوت ِ ذات و جلوت ِ بزم میں شب و روز
مرا لہو اپنی گردشوں میں اُسی کی تسبیح پڑھ رہا ہے
جو میری چاہت سے بے خبر ہے

کبھی کبھی وہ نظر چرا کر قریب سے میرے یوں بھی گزرا
کہ جیسے وہ باخبر ہے
میری محبتوں سے
دل و نظر کی حکایتیں سن رکھی ہیں اُس نے
مری ہی صورت

وہ وقت کے دائروں سے باہر کسی کے تصور میں اڑ رہا ہے
خیال میں خواب و خلوت ِ ذات و جلوت ِ بزم میں شب و روز
وہ جسم و جاں کے تمام رشتوں سے چاہتا ہے
مگر نہیں جانتا یہ وہ بھی
کہ ایسا کیوں ہے
میں سوچتا ہوں، وہ سوچتا ہے

کبھی ملے ہم تو آئینوں کے تمام باطن عیاں کریں گے
حقیقتتو ں کا سفر کریں گے




Wo shakl pighli to har shay men dhal gayi jaisey



Misaal uski kahan hai koi zamaaney men
Keh saarey khoney k gham paaye hamen paaney men

Wo shakl pighli to har shay men dhal gayi jaisey
Ajeeb baat hui hai usey bhulaney men

Jo muntazir na mila wo to hum hain sharminda
Keh ham ney dair laga di palat k aaney men

Samajh liya tha kabhi ik saraab ko dariya
Par ik sukoon tha hum ko faraib khaaney men

Jhuka darakht hawa sey to aandhiyon ney kaha
zayada fark nahin jhukney men toot jaaney men


Kabhi sehra, kabhi darya, Kabhi jugnu, kabhi aansu,



Muhabbat phir muhabbat hai?
Kabhi dil sey nhi jaati,
Hazaron rang hain is k,
Ajab hi dhang hain is k,

Hazaron roop rakhti hai,
Badan jhulsa k jo rakh day,
Kabhi wo dhoop rakhti hai,
Kabhi ban ker yeh ek jugnu,
Shab-e-gham k andheron men,
Dilon ko aas deti hai,
Kabih manzil kinaarey per,
Piyasa maar deti hai,
Azziyat hi azziyat hai,
Magar yeh bhi haqiqat hai,
Mohabat phir muhabat hai,
Kabhi dil sey nhi jaati?.


RAAT AUR INTAZAAR





Raat bhar girti rahi
ashk ki soorat shabnam
raat bhar chalti rahi
bheegi hui sard hawa
narm podon men guzarti hui
madham madham,
raat bharr chaand sulagta raha
holay holay
chandni roti rahi
meray dareechay say paray
raat bhar raqs men masroof thay
khushboo kay qadam
raat bhar main,
meri maghmoom nigahen,
meri yaas,
teray aanay ki sarr-e-shaam lagi thi
jo mujhay
wohi damm torti aas,
dill men mehka huwa gham
aur yeh palken pur namm,
meri maghmoom nigahen be'khawab
raat bharr jaltay rahay

apnay hi shoalon men gulaab!!!

Aa jaaye mera naam teray naam kay hamrah




Aa jaaye mera naam teray naam kay hamrah,
Ho jaaye kisi roz to pehchan mukammal,

عہدِ وفا اِک شَغل ہے بے کار لوگوں کا


چلو چھوڑو!
محبت جھوٹ ہے
عہدِ وفا اِک شغَل ہے بے کار لوگوں کا
’’طَلَب ‘‘ سوکھے ہوئے پتوں کا بے رونق جزیرہ ہے
’’ خلش ‘‘ دیمک زدہ اوراق پر بوسیدہ سطروں کا ذخیرہ ہے
’’ خُمارِ وصل ‘‘ تپتی دھوپ کے سینے پہ اُڑتے بادلوں کی رائیگاں بخشش!
’’ غبارِ ہجر ‘‘ صحرا میں سَرابوں سے اَٹے موسم کا خمیازہ

چلو چھوڑو!
کہ اب تک میں اندھیروں کی دھمک میں سانس کی ضربوں پہ
چاہت کی بنا رکھ کر سفر کرتا رہا ہوں گا
مجھے احساس ہی کب تھا
کہ تُم بھی موسموں کے ساتھ اپنے پیرہن کے
رنگ بدلوگی!

چلو چھوڑو!
وہ سارے خواب کچّی بھُر بھُری مٹی کے بے قیمت گھروندے تھے
وہ سارے ذائقے میری زباں پر زخم بن کر جم گئے ہوں گے
تمہارے اُنگلیوں کی نرم پوریں پتھروں پر نام لکھتی تھیں میرا لیکن
تمہاری اُنگلیاں تو عادتاً یہ جُرم کرتی تھیں

چلو چھوڑو!
سفر میں اجنبی لوگوں سے ایسے حادثے سرزد ہوا کرتے ہیں
صدیوں سے

چلو چھوڑو!
میرا ہونا نہ ہونا اِک برابر ہے
تم اپنے خال و خد کو آئینے میں پھر نکھرنے دو
تم اپنی آنکھ کی بستی میں پھر سے اِک نیا موسم اُترنے دو!
’’ میرے خوابوں کو مرنے دو ‘‘
نئی تصویر دیکھو
پھر نیا مکتوب لکھّو
پھر نئے موسم نئے لفظوں سے اپنا سلسلہ جوڑو
میرے ماضی کی چاہت رائیگاں سمجھو
میری یادوں سے کچّے رابطے توڑو

چلو چھوڑو
محبت جھوٹ ہے
عہدِ وفا اِک شَغل ہے بے کار لوگوں کا

میرا سکون میرا اعتبار واپس کر




میرا سکون میرا اعتبار واپس کر
مجھے تُو میرا وہ کھویا قرار واپس کر

ترے سلوک نے دل کر دیا سپردِ خزاں
نہ چھین مجھ سے تو میری بہار واپس کر

ملےگا کیا تجھے لے کر میرے شفق رخسار؟
اے عمرِ رفتہ تو میرا نکھار واپس کر

میرا خلوص تھا میری عبادتوں جیسا
ہے قرض تجھ پہ تو میرا اُدھار واپس کر

تجھی کو یہ تیرا پتھر کا دل مبارک ہو
مجھے تُو میرا دلِ لالہ زار واپس کر


Monday, 27 February 2012

Wo duur ho k bhi rehta hai saat-saat meray



Yeh dil mera jo bohat beqaraar rehta hai
na jaaney kiska isay intezaar rehta hai


Wo duur ho k bhi rehta hai saat-saat meray
meray khayal k rath par sawar rehta hai


Kaha tha ishq na karna kisi sey dil mairay
junoon men khud pay kahaan ikhteyaar rehta hai


Udaasi jheel sii ankhon say jab tapakti hai
kinaray aab koi sogwaar rehta hai


Ye dil darakta hai bas teri chaap k sadqay
mareez-e-shab ko tera intezaar rehta hai


Kabhi to khul kay baras ja meri zameenon pay
keh dasht-e-hijr men her suu ghubaar rehta hai


Tu mujh Ebaad ko izn-e-beyaan ataa kar day
Keh baat karnay ko dil beqaraar rehta hai


Abhi Tak Uski Jholi Men Whi Pindaar Hai Sahib




DASTOOR E WAFA











ay Kash Tujhey Aisa Ik Zakhm-e-Judai Doon


ay Kash Tujhey Aisa Ik Zakhm-e-Judai Doon 
jab tees koi chamkey mein tujh ko dikhayi doon 

haan mein ney tujhey chaaha inkaar nahi mujh ko 
yeh jurm to saabit hai, kaya is ki safaii doon? 

jis rooz kabhi tera deedar na ho paaye 
mein apni he aankhon ko na'beena dikhai doon 

maghroor hai tu kitna sirf aik sanam bun ker 
tu chaahey to mein tujh ko tun mun ki khudai doon 

tujh sa koi dil wala mehsoos karay mujh ko 
mein geet nahi aisa jo sub ko sunayi doon 

main waz'aa daar e sitam hoo'n mujhey rulana matt



tasalli dey k mera sabr aazmana matt 
main waz'aa daar e sitam hoo'n mujhey rulana matt 

main soch hi nahi sakta kisi k baarey men 
meri shikast ka baiis mujhey batana matt 

abb aur tootney ka hausla nahi mujh men 
jamal e yaar mujhey aaina banana matt 

ham ahl e ishq palatna mahaal kar dengey 
hamarey sath kahee'n do qadam bhi jana matt 

terey hisab sey ham hairati hi achhey thay 
kaha na tha keh hamari samajh men aana matt 

isi zameeN men rehNa pasand hai hamko 
hamrey parr bhi nikal aayain tau urraana matt


Kabhi main zabt men itna kamaal rakhta tha



Labon pay harf na hi koi sawaal rakhta tha 
Kabhi main zabt men itna kamaal rakhta tha 

Khaber kahan thi mujhay woh bhool jaaye ga 
Aik aik cheez jo meri sanbhaal rakhta tha 

Bichartay waqt bazahir to kuch na bola tha 
Mager nigah men so so sawal rakhta tha 

Woh muskura kay bohat dair chup sa raha 
Hansi ki aarr men jaisey malaal rakhta tha 

Suna hai ab log usay bohat satatay hain 
Jis aik shakhs ka main bohat khayal rakhta tha

Gham kaa na dil men ho guzar vasl kii shab ho yuuN basar


kaisey chhupaauuN raaz-e-Gham diidaa-e-tar ko kayaa karuuN 
dil kii tapish ko kayaa karuuN soz-e-jigar ko kayaa karuuN 

shorish-e-aashiqii kahaaN aur merii saadgii kahaaN 
husn ko terey kayaa kahuuN apanii nazar ko kayaa kahuuN 

Gham kaa na dil men ho guzar vasl kii shab ho yuuN basar 
sab yeh qubuul hai magar Khauf-e-sehar ko kayaa karuuN 

haal meraa thaa jab badtar tab na huii tumhen Khabar 
baad merey huaa asar ab main asar ko kyaa karuuN




ہجر کا زمانہ بھی کیا غضب زمانہ تھا


ہر قدم گریزاں تھا‘ ہر نظر میں وحشت تھی 
مصلحت پرستوں کی رہبری قیامت تھی 

منزل تمنا تک کون ساتھ دیتا ہے! 
گردِ سعِی لا حاصل ہر سفر کی قسمت تھی 

آپ ہی بگڑتا تھا‘ آپ من بھی جاتا تھا 
اس گریز پہلو کی یہ عجیب عادت تھی 

اُس نے حال پوچھا تو یاد ہی نہ آتا تھا 
کِس کو کِس سے شکوہ تھا‘ کس سے کیا شکایت تھی! 

دشت میں ہواﺅں کی بے رُخی نے مارا ہے 
شہر میں زمانے کی پوچھ گچھ سے وحشت تھی 

یوں تو دن دہاڑے بھی لوگ لُوٹ لیتے ہیں 
لیکن اُن نگاہوں کی اور ہی سیاست تھی 

ہجر کا زمانہ بھی کیا غضب زمانہ تھا 
آنکھ میں سمندر تھا‘ دھیان میں وہ صورت تھی

تمہی نے پاﺅں نہ رکھا وگرنہ وصل کی شب


حضورِ یار میں حرف التجا کے رکھے تھے 
چراغ سامنے جیسے َہوا کے رکھے تھے 

بس ایک اشکِ ندامت نے صاف کر ڈالے 
وہ سب حساب جو ہم نے اُٹھا کے رکھے تھے 

سمومِ وقت نے لہجے کو زخم زخم کیا 
وگرنہ ہم نے قرینے صَبا کے رکھے تھے 

بکھر رہے تھے سو ہم نے اُٹھا لیے خود ہی 
گلاب جو تری خاطر سجا کے رکھے تھے 

ہوا کے پہلے ہی جھونکے سے ہار مان گئے 
وہی چراغ جو ہم نے بچا کے رکھے تھے 

تمہی نے پاﺅں نہ رکھا وگرنہ وصل کی شب 
زمیں پہ ہم نے ستارے بچھا کے رکھے تھے! 

مٹا سکی نہ انہیں روز و شب کی بارش بھی 
دلوں پہ نقش جو رنگِ حنا کے رکھے تھے 

حصولِ منزلِ دُنیا ُکچھ ایسا کام نہ تھا 
مگر جو راہ میں پتھر اَنا کے رکھے تھے

سپنے بیچنے آ تو گئے ہو‘ لیکن دیکھ تو لو



ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں‘ فرصت کتنی ہے 
پھر بھی تیرے دیوانوں کی شہرت کتنی ہے! 

سورج  گھر سے نکل چکا تھا کرنیں تیز کیے 
شبنم گُل سے پوچھ رہی تھی ”مہلت کتنی ہے!“

بے مقصد سب لوگ مُسلسل بولتے رہتے ہیں 
شہر میں دیکھو سناٹے کی دہشت کتنی ہے! 

لفظ تو سب کے اِک جیسے ہیں‘ کیسے بات کھلے؟ 
دُنیا داری کتنی ہے اور چاہت کتنی ہے! 

سپنے بیچنے آ تو گئے ہو‘ لیکن دیکھ تو لو 
دُنیا کے بازار میں ان کی قیمت کتنی ہے! 

دیکھ غزالِ رم خوردہ کی پھیلی آنکھوں میں 
ہم کیسے بتلائیں دل میں وحشت کتنی ہے! 

ایک ادھورا وعدہ اُس کا‘ ایک شکستہ دل‘ 
لُٹ بھی گئی تو شہرِ وفا کی دولت کتنی ہے! 

میں ساحل ہوں امجد اور وہ دریا جیسا ہے 
کتنی دُوری ہے دونوں میں‘ قربت کتنی ہے

ہم کو خوشی کے ساتھ رہا اِک ملال بھی



دِل کو حصارِ رنج و اَلم سے نکال بھی 
کب سے بِکھر رہا ہوں مجھے اب سنبھال بھی 

آہٹ سی اُس حسین کی ہر سُو تھی‘ وہ نہ تھا 
ہم کو خوشی کے ساتھ رہا اِک ملال بھی 

سب اپنی اپنی موجِ فنا سے ہیں بے خبر 
میرا کمالِ شاعری‘ تیرا جمال بھی 

حسنِ اَزل کی جیسے نہیں دُوسری مثال 
ویسا ہی بے نظیر ہے اُس کا خیال بھی! 

مت پوچھ کیسے مرحلے آنکھوں کو پیش تھے 
تھا چودھویں کا چاند بھی‘ وہ خوش جمال بھی 

جانے وہ دن تھے کون سے اور کون سا تھا وقت! 
گڈ مڈ سے اب تو ہونے لگے ماہ و سال بھی! 

اِک چشمِ التفات کی پیہم تلاش میں 
ہم بھی اُلجھتے جاتے ہیں‘ لمحوں کا جال بھی! 

دنیا کے غم ہی اپنے لئے کم نہ تھے کہ اور 
دل نے لگا لیا ہے یہ تازہ وبال بھی! 

اِک سرسری نگاہ تھی‘ اِک بے نیاز چُپ 
میں بھی تھا اُس کے سامنے‘ میرا سوال بھی! 

آتے دنوں کی آنکھ سے دیکھیں تو یہ کھُلے 
سب کچھ فنا کا رزق ہے ماضی بھی حال بھی! 

تم دیکھتے تو ایک تماشے سے کم نہ تھا 
آشفتگانِ دشتِ محبت کا حال بھی! 

اُس کی نگاہِ لُطف نہیں ہے‘ تو کچھ نہیں 
امجد یہ سب کمال بھی‘ صاحبِ کمال بھی

اب کے برس بہار کی‘ رُت بھی تھی اِنتظار کی



اب کے سفر ہی اور تھا‘ اور ہی کچھ سراب تھے 
دشتِ طلب میں جا بجا‘ سنگِ گرانِ خواب تھے 

حشر کے دن کا غلغلہ‘ شہر کے بام و دَر میں تھا 
نگلے ہوئے سوال تھے‘ اُگلے ہوئے جواب تھے 

اب کے برس بہار کی‘ رُت بھی تھی اِنتظار کی 
لہجوں میں سیلِ درد تھا‘ آنکھوں میں اضطراب تھے 

خوابوں کے چاند ڈھل گئے تاروں کے دم نکل گئے 
پھولوں کے ہاتھ جل گئے‘ کیسے یہ آفتاب تھے! 

سیل کی رہگزر ہوئے‘ ہونٹ نہ پھر بھی تر ہوئے 
کیسی عجیب پیاس تھی‘ کیسے عجب سحاب تھے! 

عمر اسی تضاد میں‘ رزقِ غبار ہو گئی 
جسم تھا اور عذاب تھے‘ آنکھیں تھیں اور خواب تھے 

صبح ہوئی تو شہر کے‘ شور میں یوں بِکھر گئے 
جیسے وہ آدمی نہ تھے‘ نقش و نگارِ آب تھے 

آنکھوں میں خون بھر گئے‘ رستوں میں ہی بِکھر گئے 
آنے سے قبل مر گئے‘ ایسے بھی انقلاب تھے 

ساتھ وہ ایک رات کا‘ چشم زدن کی بات تھا 
پھر نہ وہ التفات تھا‘ پھر نہ وہ اجتناب تھے 

ربط کی بات اور ہے‘ ضبط کی بات اور ہے 
یہ جو فشارِ خاک ہے‘ اِس میں کبھی گلاب تھے 

اَبر برس کے کھُل گئے‘ جی کے غبار دُھل گئے 
آنکھ میںرُونما ہوئے‘ شہر جو زیرِ آب تھے 

درد کی رہگزار میں‘ چلتے تو کِس خمار میں 
چشم کہ بے نگاہ تھی‘ ہونٹ کہ بے خطاب تھے

پیڑ کو دیمک لگ جائے یا آدم زاد کو غم


پیڑ کو دیمک لگ جائے یا آدم زاد کو غم 
دونوں ہی کو امجد ہم نے بچتے دیکھا کم 

تاریکی کے ہاتھ پہ بیعت کرنے والوں کا 
سُورج کی بس ایک کِرن سے گھُٹ جاتا ہے دَم 

رنگوں کو کلیوں میں جینا کون سکھاتا ہے! 
شبنم کیسے رُکنا سیکھی! تِتلی کیسے رَم! 

آنکھوں میں یہ پَلنے والے خواب نہ بجھنے پائیں 
دل کے چاند چراغ کی دیکھو‘ لَو نہ ہو مدّھم 

ہنس پڑتا ہے بہت زیادہ غم میں بھی انساں 
بہت خوشی سے بھی تو آنکھیں ہو جاتی ہیں نم

تیرے دیارِ حسن پہ میں بھی کِن مِن کِن مِن برسوں گا



اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا 
جس پر تیرا نام لکھا ہے اُس تارے کو ڈھونڈوں گا 

تم بھی ہر شب دیا جلا کر پلکوں کی دہلیز پہ رکھنا 
میں بھی روز اک خواب تمہارے شہر کی جانب بھیجوں گا 

ہجر کے دریا میں تم پڑھنا لہروں کی تحریریں بھی 
پانی کی ہر سطر پہ میں کچھ دل کی باتیں لکھوں گا 

جس تنہا سے پیڑ کے نیچے ہم بارش میں بھیگے تھے 
تم بھی اُس کو چھو کے گزرنا‘ میں بھی اُس سے لپٹوں گا 

”خواب مسافر لمحوں کے ہیں‘ ساتھ کہاں تک جائیں گے“ 
تم نے بالکل ٹھیک کہا ہے‘ میں بھی اب کچھ سوچوں گا 

بادل اوڑھ کے گزروں گا میں تیرے گھر کے آنگن سے 
قوسِِ قزح کے سب رنگوں میں تجھ کو بھیگا دیکھوں گا 

رات گئے جب چاند ستارے لُکن میٹی کھیلیں گے 
آدھی نیند کا سپنا بن کر میں بھی تم کو چھو لوں گا 

بے موسم بارش کی صورت‘ دیر تلک اور دُور تلک 
تیرے دیارِ حسن پہ میں بھی کِن مِن کِن مِن برسوں گا 

شرم سے دوہرا ہو جائے گا کان پڑا وہ بُندا بھی 
بادِ صبا کے لہجے میں اِک بات میں ایسی پوچھوں گا 

صفحہ صفحہ ایک کتابِ حسن سی کھلتی جائے گی 
اور اُسی کو لَو میں پھر میں تم کو اَزبر کر لوں گا 

وقت کے اِک کنکر نے جس کو عکسوں میں تقسیم کیا 
آبِ رواں میں کیسے امجد اب وہ چہرا جوڑوں گا

کسی کے دھیان میں پَل پَل یہ دھیان ٹوٹتا ہے


زمین جلتی ہے اور آسمان ٹوٹتا ہے،
مگر گریز کریں ہم تو مان ٹوٹتا ہے !!

کوئی بھی کام ہو انجام تک نہیں جاتا !
کسی کے دھیان میں پَل پَل یہ دھیان ٹوٹتا ہے

کہ جیسے مَتن میں ہر لفظ کی ہے اپنی جگہ
جو ایک فرد کٹے، کاروان ٹوٹتا ہے

نژادِ صبح کے لشکر کی آمد آمد ہے
حصارِ حلقئہ شب زادگان ٹوٹتا ہے

اگر یہی ہے عدالت ! اور آپ ہیں مُنصِف!
عجب نہیں جو ہمارا بیان ٹوٹتا ہے

وفا کے شہرکے رستے عجیب ہیں امجد
ہر ایک موڑ پہ اِک مہربان ‘ ٹوٹتا ہے

کوئی بھی لمحہ کبھی لوٹ کر نہیں آیا


وہ شخص ایسا گیا پھر نظر نہیں آیا 
کوئی بھی لمحہ کبھی لوٹ کر نہیں آیا

وفا کے دشت میں رستہ نہیں ملا کوئی 
سوائے گرد سفرہم سفر نہیں آیا 

پَلٹ کے آنے لگے شام کے پرندے بھی 
ہمارا صُبح کا بُھولا مگر نہیں آیا 

کِسی چراغ نے پُوچھی نہیں خبر میری 
کوئی بھی پُھول مِرے نام پر نہیں آیا 

چلو کہ کوچہء قاتل سے ہم ہی ہو آئیں 
کہ نخلِ دار پہ کب سے ثمر نہیں آیا! 

خُدا کے خوف سے دل لرزتے رہتے ہیں 
اُنھیں کبھی بھی زمانے سے ڈر نہیں آیا 

کدھر کو جاتے ہیں رستے ، یہ راز کیسے کُھلے 
جہاں میں کوئی بھی بارِدگر نہیں آیا 

یہ کیسی بات کہی شام کے ستارے نے 
کہ چَین دل کو مِرے رات بھر نہیں آیا 

ہمیں یقین ہے امجد نہیں وہ وعد ہ خلاف 
پہ عُمر کیسے کٹے گی ، اگر نہیں آیا

دل کے دریا کو کسی روز اُتر جانا ہے


اتنا بے سمت نہ چل، لوٹ کے گھر جانا ہے
دل کے دریا کو کسی روز اُتر جانا ہے

اُس تک آتی ہے تو ہر چیز ٹھہر جاتی ہے
جیسے پانا ہی اسے، اصل میں مر جانا ہے

بول اے شامِ سفر، رنگِ رہائی کیا ہے؟
دل کو رُکنا ہے کہ تاروں کو ٹھہر جانا ہے

کون اُبھرتے ہوئے مہتاب کا رستہ روکے
اس کو ہر طور سوئے دشتِ سحر جانا ہے

میں کِھلا ہوں تو اسی خاک میں ملنا ہے مجھے
وہ تو خوشبو ہے، اسے اگلے نگر جانا ہے

وہ ترے حُسن کا جادو ہو کہ میرا غمِ دل
ہر مسافر کو کسی گھاٹ اُتر جانا ہے

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets