Sunday, 10 February 2013

نِگاہِ یار پہ پَلکُوں کی گَر لَگام نہ ہَو


نِگاہِ یار پہ پَلکُوں کی گَر لَگام نہ ہَو

بَدن میں دُور تَلک زِندگی کا نام نہ ہَو


وہ بے نَقاب جَو پِھرتا ہے گَلی کُوچُوں میں

تَو کَیسے شَہر کے لَوگُوں میں قَتلِ عام نہ ہَو


مُجھے یَقیں ہے کہ دُنیا میں دَرد بَڑھ جائیں

اَگر یہ پِینے پِلانے کا اَہتمام نہ ہَو


بِٹھا کے سامنے بَس دَیکھتا رَہُوں تُجھ کَو

تَیرے سِوا مُجھے دُنیا کا کَوئی کام نہ ہَو


جَو اُس کَو دَیکھ لے مَہتاب اِک نَظر

مَیرے شَہر کی فِضاؤں میں کَبھی شام نہ ہَو

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets