Sunday, 10 February 2013

دور تک کوئی ستارہ ہے نہ جگنو کوئی



یہ  جو  دیوانے  سے  دو  چار  نظر   آتے  ہیں
ان   میں  کچھ  صاحب  اسرار  نظر   آتے  ہیں


تیری محفل کا بھرم  رکھتے  ہیں سو جاتے  ہیں
ورنہ   یہ   لوگ   تو    بیدار   نظر   آتے   ہیں


دور   تک   کوئی   ستارہ  ہے  نہ  جگنو  کوئی
مرگ    امید    کے    آثار    نظر    آتے    ہیں


میرے دامن میں شراروں کے سوا کچھ بھی نہیں
آپ    پھولوں   کے   خریدار   نظر   آتے   ہیں


کل جنھیں چھونہیں  سکتی تھی فرشتوں کی  نظر
آج    وہ    رونق     بازار     نظر    آتے    ہیں


حشر   میں   کون   گواہی  میری  دے  گا  ساغر
سب  تمہارے  ہی  طرف   دار   نظر   آتے  ہیں


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets