Friday, 8 February 2013

آنکھوں سے اُس کو چُومتے، تعزیر جو بھی تھی


ہم تو اسیرِ خواب تھے تعبیر جو بھی تھی
دیوار پر لِکھی ہُوئی تحریر جو بھی تھی

ہر فرد لا جواب تھا ، ہر نقش بے مثال
مِل جُل کے اپنی قوم کی تصویر بھی تھی

جو سامنے ہے ، سب ہے یہ ،اپنے کیئے کا پھل
تقدیر کی تو چھوڑئیے، تقدیر جو بھی تھی

طالب ہیں تیرے رحم کے ہم عَدل کے نہیں
جیسا بھی اپنا جُرم تھا، تقصیر جو بھی تھی

ہاتھوں پہ کوئی زخم نہ پیروں پہ کُچھ نشاں
سوچوں میں تھی پڑی ہُوئی، زنجیر جو بھی تھی

آیا اور اِک نگاہ میں برباد کر گیا
ہم اہلِ انتظار کی جاگیر جو بھی تھی

قدریں جو اپنا مان تھیں ، نیلام ہوگئیں
ملبے کے مول بِک گئی تعمیر جو بھی تھی

یہ اور بات چشم نہ ہو معنی آشنا
عبرت کا ایک درس تھی تحریر جو بھی تھی

امجد ہماری بات وہ سُنتا تو ایک بار
آنکھوں سے اُس کو چُومتے، تعزیر جو بھی تھی


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets