Sunday, 23 June 2013

یہ بستیاں ہیں کہ مقتل دعا کیے جائیں


یہ  بستیاں  ہیں  کہ  مقتل  دعا کیے جائیں
دعا  کے  دن  ہیں  مسلسل  دعا  کیے  جائیں

کوئی  فغاں، کوئی نالہ، کوئی بکا، کوئی بین
کھلے    گا    باب   مقتل   دعا   کیے   جائیں

یہ    اضطراب   یہ   لمبا   سفر،   یہ   تنہائی
یہ   رات   اور  یہ  جنگل  دعا  کیے  جائیں

بحال  ہو  کے  رہے  گی  فضائے  خطۂ خیر
یہ   حبس   ہوگا   معطل   دعا   کئے  جائیں

گزشتگان   ِ   محبت  کے  خواب  کی  سوگند
وہ   خواب   ہوگا   مکمل   دعا   کیے   جائیں

ہوائے  سرکش  و  سفاک کے مقابل بھی
یہ دل بجھیں گے نہ مشعل دعا کیے جائیں

غبار    اڑاتی    جھلستی    ہوئی    زمینوں   پر
امنڈ  کے  آئیں  گے بادل دعا کیے جائیں

قبول   ہونا   مقدر   ہے  حرف  خالص  کا
ہر  ایک  آن  ہر  اک  پل دعا کیے جائیں

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets