Friday, 12 July 2013

آنکھوں کی پُوری ہو یہ عبادت رہی سہی


آنکھوں کی پُوری ہو یہ عبادت رہی سہی
پڑھ لیں رُخوں پہ لِکھّی عبارت رہی سہی

کب تک ہو چِلمَنوں سے عَطَا حُسنِ خِیرہ کُن
مِل جائے اب نظَر کو اجازت رہی سہی

بے پردَگِی کی آس لگائے ہُوئے ہے دِل!
ہو دُور درمیاں سے قباحت رہی سہی

اب تاب ہی کہاں، کہ سَہے بندِشیں کوئی
حاصِل ہو دِل کو دِل سے اجازت رہی سہی

غم اِنتہا کا، مُجھ کو نہ لے جائے اُس جگہ
بُھولوں میں، اُس کی یاد کی راحت رہی سہی

مولا کرے ، ہو موت تصوّر لِئے تِرا
پوری ہو دل کی آخری حاجت رہی سہی

خَلوَت میں مُنتَظِر ہے تِری دِید کا خلش
چاہے پھر آئے اُس پہ قیامت رہی سہی

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets