Friday, 9 August 2013

کسی شام اے میرے بے خبر


جو اُتر گیا ، تیرے دھیان سے ، کِسی خواب سا
سرِ دشتِ غم
کِسی بنتے مِٹتے سراب سا
کِسی اُجڑے گھر میں دھری ہوئی
کِسی بے پڑھی سی کتاب سا
... میں ہوں گم اُسی کی مثال ، گردِ سوال میں
کِسی زیرِ لب سے جواب سا
مُجھے دیکھ ، مُجھ پہ نگاہ کر
کہ میں جی اُٹھوں تیرے دھیان میں
مُجھے راستوں کی خبر ملے اِسی دشت ریگِ روان میں
تُو پڑھے جو مجھ کو ورق ورق
مرا حَرف حَرف چمک اُٹھے
تو دمک اُٹھے وہ حدیثِ دل جو نہاں ہے عرضِ بیان میں
کسی شام اے میرے بے خبر
وُہی رنگ دے میری آنکھ کو، وہی بات کہہ میری کان میں
کسی شام اے میرے بے خبر
وُہی رنگ دے میری آنکھ کو ، وہی بات کہہ میری کان میں

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets