Wednesday, 14 August 2013

دِل کی سنسان حویلی میں‌چُھپایئں‌کب تک


اِک تری یاد ہٹانے سے نِکل آتا ہے
ہجر کا سانپ خزانے سے نِکل آتا ہے

دِل کی سنسان حویلی میں‌چُھپایئں‌کب تک ۔۔۔۔!!۔۔۔
شب کو ہر درد ٹھِکانے سے نِکل آتا ہے

چشم ِ‌نمناک سُلگتی ہے، سُلگ جانے دو۔۔۔!!۔۔
کُچھ دُھواں‌ آگ بُجھانے سے نِکل آتا ہے

پا بہ زنجیر بنایا ہے مگر پہلو سے
دِل تری اوَر، بہانے سے نِکل آتا ہے

پچھلی تعبیر کے چھالے ہیں‌ ابھی پیروں‌ میں‌ ۔۔!!۔۔
پھر نیا خواب سرھانے سے نِکل آتا ہے
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets