Tuesday, 27 August 2013

ہم اُس کی یاد کی چادر کو خود پہ تان لیتے ہیں


ہوائیں سرد ہو جائیں
یا لہجے برف ہو جائیں
ہم اُس کی یاد کی چادر کو
خود پہ تان لیتے ہیں
سُنو! درویش لوگوں کی
کوئی دنیا نہیں ہوتی
ملے جو خاک رستے میں
اُسی کو چھان لیتے ہیں
اگر وہ روٹھ جاتا ہے
ہماری جان نکلتی ہے
یہ سانسیں جاری رکھنے کو
ہم اُس کی مان لیتے ہیں

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets