Friday, 2 August 2013

شبِ غم نہ پُوچھ کیسے تِرے مُبتلا پہ گُزری


کبھی اُن کا نام لینا کبھی اُن کی بات کرنا
میرا ذوق اُن کی چاہت میرا شوق اُن پہ مرنا

وہ کسی کی جھیل آنکھیں وہ میری جُنوں مِزاجی
کبھی ڈُوبنا اُبھر کر کبھی ڈُوب کر اُبھرنا

تِرے منچلوں کا جگ میں یہ عجب چلن رہا ہے
نہ کِسی کی بات سُننا نہ کِسی سے بات کرنا

شبِ غم نہ پُوچھ کیسے تِرے مُبتلا پہ گُزری
کبھی آہ بھر کے گِرنا کبھی گِر کے آہ بھرنا

وہ تِری گلی کے تیور وہ نظر نظر پہ پہرے
وہ مِرا کِسی بہانے تُجھے دیکھتے گُزرنا

کہاں میرے دِل کی حسرت کہاں میری نارسائی
کہاں تیرے گیسوؤں کا تِرے دوش پر بِکھرنا

چلے لاکھ چال دُنیا ہو زمانہ لاکھ دُشمن
جو تِری پناہ میں ہو اُسے کیا کِسی سے ڈرنا

وہ کریں گے ناخُدائی تو لگے گی پار کشتی
ہے نصیر ورنہ مُشکل تِرا پار یوں اُترنا

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets