Monday, 5 August 2013

عشق پیچاں کی صندل پر جانے کس دن بیل چڑھے


عشق پیچاں کی صندل پر جانے کس دن بیل چڑھے
کیاری میں پانی ٹھہرا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیواروں پر کائی ہے

حسن کے جانے کتنے چہرے حسن کے جانے کتنے نام
عشق کا پیشہ حسن پرستی ۔۔۔۔۔۔ عشق بڑا ہرجائی ہے

آج بہت دن بعد میں اپنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کمرے تک آ نکلا تھا
جوں ہی دروازہ کھولا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اس کی خوشبو آئی ہے

ایک تو اتنا حبس ہے پھر میں سانسیں روکے بیٹھا ہوں
ویرانی نے جھاڑو دے کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔گھر میں دھول اڑائی ہے
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets