Wednesday, 7 August 2013

داؤ پہ اپنی ساری کرامات مت لگا


داؤ پہ اپنی ساری کرامات مت لگا
دل دشت ہے ۔۔۔۔۔ تو دشت میں باغات مت لگا

بنتی نہیں ہے بات تو سب رنگ پھینک دے
تصویر مت بگاڑ ۔۔۔۔۔ علامات مت لگا

سائے میں میرے بیٹھ مگر احتیاط سے
دیوارِ خستگی ہوں ۔۔۔۔۔ مجھے ہاتھ مت لگا

کیا اعتبار ہے ترے آگے دلیل کو
اپنے بیاں کے ساتھ ۔۔۔۔۔ حکایات مت لگا

اے راہبر تو جان لے ۔۔۔۔۔ نیت پہ ہے مراد
مقصد کے ساتھ اپنے ۔۔۔۔۔ مفادات مت لگا

اے سعد ۔۔۔۔۔ اپنے کان کسی بات پر نہ دھر
اے سعد ۔۔۔۔۔ اپنے دل کو کوئی بات مت لگا

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets