Wednesday, 7 August 2013

میں تری آنکھ سے ڈھلکا ہوا اک آنسو ہوں


شاخِ مژگانِ محبت پہ سجا لے مجھ کو 
برگِ آوارہ ہوں صرصر سے بچا لے مجھ کو 

رات بھر چاند کی ٹھنڈک میں سلگتا ہے بدن 
کوئی تنہائی کے دوزخ سے نکالے مجھ کو

میں تری آنکھ سے ڈھلکا ہوا اک آنسو ہوں 
تو اگر چاہے، بکھرنے سے بچا لے مجھ کو 

شب غنیمت تھی کہ یہ زخمِ نظارہ تو نہ تھا 
ڈس گئے صبحِ تمنا کے اجالے مجھ کو 

میں منقش ہوں تری روح کی دیواروں پر 
تو مٹا سکتا نہیں بھولنے والے ، مجھ کو 

تہ بہ تہ موجِ طلب کھینچ رہی ہے محسن 
کوئی گردابِ تمنا سے نکالے مجھ کو


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets