Tuesday, 6 August 2013

صدیوں کا بن باس لکھے گی اب کے برس بھی


صدیوں کا بن باس لکھے گی اب کے برس بھی
تنہائی اتہاس لکھے گی اب کے برس بھی

اب کے برس بھی جھوٹ ہمارا پیٹ بھرے گا
سچائی افلاس لکھے گی اب کے برس بھی

اب کے برس بھی دنیا چھینی جائے گی ہم سے
مجبوری سنیاس لکھے گی اب کے برس بھی

آس کے سورج کو لمحہ لمحہ ڈھونڈیں گے
اور تاریکی یاس لکھے گی اب کے برس بھی

پہلے بھی دریا دریا برسی تھی برکھا
صحرا صحرا پیاس لکھے گی اب کے برس بھی

جس میں وش کا واس ہوا کرتا ہے آذر
جان وہی وشواس لکھے گی اب کے برس بھی

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets