Wednesday, 14 August 2013

یہ کسی کی بزمِ نشاط ہے یہاں قطرہ قطرہ پگھل کے رو


 تُو کہ شمعِ شامِ فراق ہے دلِ نامراد سنبھل کے رو
یہ کسی کی بزمِ نشاط ہے یہاں قطرہ قطرہ پگھل کے رو

کوئی آشنا ہو کہ غیر ہو نہ کسی سے حال بیان کر
یہ کٹھور لوگوں کا شہر ہے کہیں دُور پار نکل کے رو

کسے کیا پڑی سرِ انجمن کہ سُنے وہ تیری کہانیاں
جہاں کوئی تجھ سے بچھڑ گیا اُسی رہگزار پہ چل کے رو

یہاں اور بھی ہیں گرفتہ دل کبھی اپنے جیسوں سے جا کے مِل
ترے دکھ سے کم نہیں جن کے دکھ کبھی اُن کی آگ میں جل کے رو

ترے دوستوں کو خبر ہے سب تری بے کلی کا جو ہے سبب
تُو بھلے سے اُس کا نہ ذکر کر تُو ہزار نام بدل کے رو

غمِ ہجر لاکھ کڑا سہی پہ فرازکچھ تو خیال کر
مری جاں یہ محفلِ شعر ہے تو نہ ساتھ ساتھ غزل کے رو

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets