Friday, 2 August 2013

نکال اب تیر سینے سے کہ جانِ پُر الم نکلے


نکال اب تیر سینے سے کہ جانِ پُر الم نکلے
جو یہ نکلے تو دل نکلے، جو دل نکلے تو دم نکلے

تمنا وصل کی اک رات میں کیا اے صنم نکلے
قیامت تک یہ نکلے گر نہائت کم سے کم نکلے

نہ اُٹھےمر کے بھی ایسے تیرے کوچے میں ہم بیٹھے
محبت میں اگر نکلے، تو ہم ثابت قدم نکلے

سمجھ کر رحم دل تم کو دیا تھا ہم نے دل اپنا
مگر تم تو بلا نکلے، غضب نکلے، سِتم نکلے

دمِ پُرسش دیکھا جو، اُس بتِ سفاک کو مضطر
صفِ محشر سےدل پکڑے ہوئے گھبرا کے ہم نکلے

گئے ہیں رنج و غم اے داغ بعدِ مرگ ساتھ اپنے
اگر نکلے تو یہ اپنے رفیقانِ عدم نکلے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets