Friday, 13 September 2013

وہ ایک معصوم سی چاہت


وہ ایک معصوم سی چاہت 
 وہ ایک بے نام سی الفت 

وہ میری ذات کا حصہ 
وہ میری ذات کا قصہ 

مجھے محسوس ہوتا ہے
 وہ میرے پاس ہے اب بھی 

وہ جب جب یاد آتا ہے
 نگاہوں میں سماتا ہے 


زبان خاموش ہوتی ہے
 مگر یہ آنکھ روتی ہے 

میں خود سے پوچھ لیتا ہوں 
 جسے میں یاد کرتا ہوں 

اسے کیا پیار ہے مجھ سے 
 جواب ہاں سوچ لیتا ہوں 

اسے بھی پیار ہے شاید . . . 

اسی شاید سے وابستہ ہے اب تو ہر خوشی میری 

یہی ایک لفظ شاید بن گیا ہے زندگی میری 

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets