Friday, 20 September 2013

خوب ہوتے ہيں چاہت کے يہ ميٹھے رشتے


کس طرح ياد کروں کيسے بھلاؤں تجھ کو 
تو کوئی رسم نہيں ہے کہ نبھاؤں تجھ کو 

روز آنکھوں سے بکھرتا ہے نيا خواب کوئی 
دل يہ کہتا ہے نہ آنکھوں ميں سجاؤں تجھ کو 

خوب ہوتے ہيں چاہت کے يہ ميٹھے رشتے 
بھول کر بھی کبھی دشمن نا بناؤں تجھ کو 

تيرے جانے پہ مچلتا ہے بہت دل ليکن 
ضبط اتنا ہے کہ پھر بھی نہ بلاؤں تجھ کو 

زندگی کون سا تاروں کا فلک ہے فراز 
کس طرح اپنا ستارہ ميں بناؤں تجھ کو

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets