Monday, 23 September 2013

تیری طرح ملال مجھے بھی نہیں رہا


تیری طرح ملال مجھے بھی نہیں رہا
جا، اب ترا خیال مجھے بھی نہیں رہا

تُو نے بھی موسموں کی پذیرائی چھوڑ دی
اب شوقِ ماہ و سال مجھے بھی نہیں رہا

میرا جواب کیا تھا ، تجھے بھی خبر نہیں
یاد اب ترا سوال، مجھے بھی نہیں رہا

جس بات کا خیال نہ تُو نے کیا کبھی
اُس بات کا خیال مجھے بھی نہیں رہا

توڑا ہے تُو نے جب سے مرے دل کا آئینہ
اندازہء جمال مجھے بھی نہیں رہا

باقی میں اپنے فن سے بڑا پُرخلوص ہوں
اِس واسطے زوال مجھے بھی نہیں رہا

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets