Wednesday, 25 September 2013

اک عمر جسے خواب کی مانند ہی دیکھا


رستہ ہی نیا ہے ، نہ میں انجان بہت ہوں
پھر کوئے ملامت میں ہوں ، نادان بہت ہوں

اک عمر جسے خواب کی مانند ہی دیکھا
چُھونے کو ملا ہے تو پریشان بہت ہوں

مُجھ میں کوئی آہٹ کی طرح سے کوئی آئے
اک بند گلی کی طرح سنسان بہت ہوں

دیکھا ہے گریز اُس نگاہِ سرد کا اتنا
مائل بہ توجہّ ہے تو حیران بہت ہوں

اُلجھیں گے کئی بار ابھی لفظ سے مفہوم
سادہ ہے بہت وہ نہ میں آسان بہت ہوں‎

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets