Tuesday, 24 September 2013

تین منظر


                                                                                                                              تصور

شوخیاں مضطر نگاہِ دید سرشار میں

عشرتیں خوابیدہ رنگِ غازہ ء رخسار میں

سرخ ہونٹوں پر تبسم کی ضیائیں جس طرح

یاسمن کے پھول ڈوبے ہوں مے گلنار میں


                                                                                                                              سامنا

چھنتی ہوئی نظروں سے جذبات کی دنیائیں

بے خوابیاں، افسانے، مہتاب، تمنائیں

کچھ الجھی ہوئی باتیں، کچھ بہکے ہوئے نغمے

کچھ اشک جو آنکھوں سے بے وجہ چھلک جائیں

                                                                                                                      رخصت

فسردہ رخ، لبوں پر اک نیاز آمیز خاموشی

تبسم مضمحل تھا، مرمریں ہاتھوں میں لرزش تھی

وہ کیسی بے کسی تھی تیری پر تمکیں نگاہوں میں

وہ کیا دکھ تھا تری سہمی ہوئی خاموش آہوں میں

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets