Monday, 9 September 2013

میں تو سمجھا تھا بھر چکے سب زخم​


اوّل اوّل کی دوستی ہے ابھی​
اک غزل ہے کہ ہو رہی ہے ابھی​

میں بھی شہرِ وفا میں نو وارد​
وہ بھی رُک رُک کے چل رہی ہے ابھی​

میں بھی ایسا کہاں کا زُود شناس​
وہ بھی، لگتا ہے، سوچتی ہے ابھی​

دل کی وارفتگی ہے اپنی جگہ​
پھر بھی کچھ احتیاط سی ہے ابھی​

گرچہ پہلا سا اجتناب نہیں​
پھر بھی کم کم سپردگی ہے ابھی​

کیسا موسم ہے کچھ نہیں کھِلتا​
بُوندا باندی بھی دھوپ بھی ہے ابھی​

خود کلامی میں کب یہ نشّہ تھا​
جس طرح روبرو کوئی ہے ابھی​

قربتیں لاکھ خوبصورت ہوں​
دُوریوں میں بھی دلکشی ہے ابھی​

فصلِ گُل میں بہار پہلا گلاب​
کس کی زلفوں میں ٹانکتی ہے ابھی​

رات کس ماہ وش کی چاہت میں​
یہ شبستاں سجا رہی ہے ابھی​

میں کسی وادیِ خیال میں تھا​
برف سی دل پہ گر رہی ہے ابھی​

میں تو سمجھا تھا بھر چکے سب زخم​
داغ شاید کوئی کوئی ہے ابھی​

دور دیسوں سے کالے کوسوں سے​
کوئی آواز آ رہی ہے ابھی​

زندگی کوئے نا مرادی سے​
کس کو مڑ مڑ کے دیکھتی ہے ابھی​

اس قدر کھِچ گئی ہے جاں کی کماں​
ایسا لگتا ہے ٹوٹتی ہے ابھی​

ایسا لگتا ہے خلوتِ جاں میں​
وہ جو اک شخص تھا، وہی ہے ابھی​

مدتیں ہو گئیں فراز مگر​
وہ جو دیوانگی سی تھی، ہے ابھی​

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets