Wednesday, 4 September 2013

ابھی محبت نئی نئی ھے


ابھی تو ملنے کی ُجستجو ھے
ابھی تو مبہم سی گُفتگو ھے
ابھی ھے شکوے شکائتوں کا حساب باقی
محبتوں کا ابھی ھے سارا نصاب باقی
ابھی تعاقب میں رتجگے ھیں
ابھی تو خوابوں کے سلسلے ھیں
بہت سے دُشوار مرحلے ھیں
ابھی تو آنکھوں میں زندگی ھے
ابھی تو چہرے پہ تازگی ھے
ابھی محبت نئی نئی ھے۔۔۔۔۔۔۔

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets