Tuesday, 10 September 2013

رات کے اُترتے ہی دل کی سُونی گلیوں میں


تیری راہ میں رکھ کر اپنی شام کی آہٹ
دم بخود سی بیٹھی ہے میرے بام کی آہٹ

کیوں ٹھہر گئی دل میں اُس قیام کی آہٹ
کیوں گزر نہیں جاتی اُس مقام کی آہٹ

ہاتھ کی لکیروں سے کس طرح نکالوں میں
تیری یاد کے موسم تیرے نام کی آہٹ

جب یہ دل رفاقت کی کچی نیند سے جاگا
ہر طرف سنائی دی اختتام کی آہٹ

رات کے اُترتے ہی دل کی سُونی گلیوں میں
جاگ اُٹھتی ہے پھر سے تیرے نام کی آہٹ

بیٹھ جاتی ہے آکر در پہ کیوں میرے
تیرے ساتھ کی خوشبو، تیرے گام کی آہٹ
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets