Wednesday, 25 September 2013

خامشی درد کی ترسِیل بھی ہو سکتی ہے


یہ چمک دھُول میں تحلیل بھی ہو سکتی ہے 
کائنات اِک نئی تشکیل بھی ہو سکتی ہے 

تم نہ سمجھو گے کوئی اور سمجھ لے گا اِسے 
خامشی درد کی ترسِیل بھی ہو سکتی ہے 

کچھ سنبھل کر رہو اِن سادہ ملاقاتوں میں 
دوستی عشق میں تبدیل بھی ہو سکتی ہے 

میں ادھُورا ہوں مگر خُود کو ادھُورا نہ سمجھ
مجھ سے مل کر تری تکمیل بھی ہو سکتی ہے 

کاٹنا رات کا آسان بھی ہو سکتا ہے 
دل میں اِک یاد کی قندِیل بھی ہو سکتی ہے 

اس قدر بھی نہ بڑھو دامنِ دل کی جانب 
یہ محبت کوئی تمثِیل بھی ہو سکتی ہے 

ہاں دل و جان فدا کر دو ظہیر اس پہ مگر
یہ بھی اِمکان ہے تذلِیل بھی ہو سکتی ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets