Wednesday, 25 September 2013

حیراں ہے آنکھ جلوۂ جاناں کو کیا ہوا


حیراں ہے آنکھ جلوۂ جاناں کو کیا ہوا
ویراں ہیں خواب گیسوئے رقصاں کو کیا ہوا ؟

     قصرِ حسیں خموش ہے ، ایوان پر سکوت
                                                          آوازہائے سروِ خراماں کو کیا ہؤا ؟

پردوں سے روشنی کی کرن پھوٹتی نہیں
       اس شمع رنگ و بو کے شبستاں کو کیا ہوا ؟

                                                                                                            دنیا سیاہ خانۂ غم بن رہی ہے کیوں
اللہ! میرے ماہِ خراماں کو کیا ہوا ؟

        طوفاں اٹھا رہی ہیں مرے دل کی دھڑکنیں
      اس دستِ نرم و ساعدِ لرزاں کو کیا ہوا ؟

                                                                                                           نادان آنسوؤں کو ہے مدت سے جستجو
آرام گاہِ گوشۂ داماں کو کیا ہوا ؟

        سیراب کارئ لبِ گل گوں کدھر گئی
              ہیں تشنہ کام، ساغرِ جاناں کو کیا ہوا ؟

                                                                                                               کشتِ مراد ہو چلی نذرِ سمومِ غم
یارب نمودِ ابر خراماں کو کیا ہوا ؟

              روتا ہے بات بات پہ یوں زار زار کیوں ؟
اختر ، خبر نہیں دل ناداں کو کیا ہوا ؟

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets