Friday, 20 December 2013

لہو کی حدت کو سرد کرتا رگوں میں جمتا یہ زرد پڑتا ملال کیا ھے ۔۔؟

آؤ جاناں ۔۔۔ تمہیں دکھاؤں
 
وہ خواب جاناں

جو میری آنکھیں سلگتے لمحوں میں دیکھتی ھیں 

یہ دیکھتی ھیں

سنہری شامیں بدن پہن کر تمہارے ہمراہ چل رہی ھیں 

جمیل صبحیں وصال اوڑھے تمہاری باھوں میں آگری ھیں 

یہ خواب کیا ھیں ۔۔۔

یہ دھند کیسی ۔۔؟

یہ میری آنکھوں کو کیا ھوا ھے ۔۔

یہ آنسوؤں کی نمی سی کیا ھے ۔۔؟

یہ خواب بہہ کر کہاں چلے ھیں

جو ان گنت بے شمار راتوں کے رتجگوں سے کشید کرکے سمبھال 

رکھے تھے

کیا ھوۓ ھیں 
؟
لہو کی حدت کو سرد کرتا رگوں میں جمتا یہ زرد پڑتا ملال کیا ھے ۔۔؟
تو جا چکا ھے 

وہ کون ھوگا جو یاد رکھے 

میرے دکھوں کا حساب رکھے 

جو خاک اوڑھے کبھی ملوں تو 

بے آب گِل کو بھی آنسوؤں سے سراب رکھے 

میرے مقدر کی خاک پر جو 

بہار رت کا گلاب رکھے


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets