Tuesday, 30 April 2013

Intesaab


Mein apna sab kuch,
uss sey mansoob ker to duun lekin,
darta hun,
kahin woh merey naam sey,
ruswa na ho jaaye!

بےکار جائیں اپنی دعائیں تو کیا کریں ؟



اُن کو بُلائیں اور وہ نہ آئیں تو کیا کریں؟
بےکار جائیں اپنی دعائیں تو کیا کریں ؟

اِک زہرہ وش ہے آنکھ کے پردوں میں جلوہ گر
نظروں میں آسماں نہ سمائیں تو کیا کریں!

مانا کہ سب کے سامنے ملنے سے ہے حجاب
لیکن وہ خواب میں بھی نہ آئیں تو کیا کریں؟

ہم لاکھ قسمیں کھائیں نہ ملنے کی سب غلط
وہ دُور ہی سے دل کو لُبھائیں تو کیا کریں

بدقسمتوں کا ، یاد نہ کرنے پہ ہے یہ حال
اللہ ، گر وہ یاد نہ آئیں تو کیا کریں؟

ناصح، ہماری توبہ میں کچھ شک نہیں مگر
شانہ ہلائیں آ کے گھٹائیں تو کیا کریں؟

میخانہ دُور ، راستہ تاریک ، ہم مریض
منہ پھیر دیں اُدھر جو ہوائیں تو کیا کریں؟

راتوں کے دل میں یاد بسائیں کسی کی ہم!
اخترحرم میں وہ نہ بلائیں تو کیا کریں؟

انتساب



میں اپنا سب کچھ

اس سے

منسوب کر تو دوں لیکن

ڈرتا ہوں

کہیں وہ میرے نام سے

رسوا نہ ہوجائے

آج آنکھوں میں خواب سلگ جانے دو



دن کا اجلا ماتھا چومو

رات سے گہری بات کرو

گنگناوَ گیت سرمئی شام کی چاہت کا

افق سی کوئی سنہری بات کرو

ذکر چھیڑو آج چاند ستاروں کا

بچھڑے ہوئے سب پیاروں کا

پلکوں پہ تکے آنسو برسنے دو

سینے میں مچلنے دو ارمانوں کو

درد کے دریا کو احساس کے پار اترنے دو

آنچ دینے دو سب زخموں کو

آج کی رات تو غم کا سرمایہ ہے

سرمائے کو کاوِ عشق میں لگ جانے دو

جی بھر کے رو لو آج کی رات 

آج آنکھوں میں خواب سلگ جانے دو

نہ کر توہینِ محبت ، یوں وفا کی گواہی مانگ کر


اسیری  میں  مر  جانے  دے ، قید  سے  اب  آزاد  نہ  کر

تجھے   واسطہ  میری تباہی کا یہ ظلم میرے صیاد نہ کر


نہ   کر   توہینِ   محبت ، یوں  وفا  کی  گواہی  مانگ  کر


مجھے بھول چکی  ہے دنیا ، اب تو بھی مجھے یاد نہ کر



بات  تیری  انا   کی  تھی  ،  میں  تو  یوں  بھی  چپ  تھا


ہونا  تھا  جو ،  ہو بھی  چکا ، رو رو کہ اب فریاد نہ کر



کھیل  نصیبوں  کا  دیکھ  لیا ، میں نے تنہا رہنا سیکھ لیا


فقط  اپنی  محبت  کی  خاطر ، میری جستجو برباد نہ کر



تجھے چھوڑ جانے کی عادت ، مجھے تنہائیوں کا خوف


اس خالی کمرے کو اے دوست میرے پھر سے آباد نہ کر


نظروں سے جو پلا دی تو پیمانہ کدھر جائیگا


ہم    نے   مانا  وہ   حُسن  و  غنا   کا   پیکر   لیکن

ہم رونق افروز نہ ہوں ، پہلوئے جانانہ کدھر جائیگا



یہ محفل نہ رہی، کہیں اور سہی، محفل تو جمے گی


بادہ کش ہی جو نہ ہونگے تو مے خانہ کدھر جائیگا



ابھی رات جواں ہے، ابھی سے نہ بجھاوَ شمعوں کو


شمع   جو   بجھا   دی   تو    پروانہ   کدھر  جائیگا



بس   یہی  کام   ہے  زمانے  کو  زمانے  بھر  میں


ہماری  باتیں  گر  نہ ہونگیں  تو زمانہ کدھر جائیگا



مجھ   کو   یہی    لگتا   ہے   بے   رُخی   کا  سبب


نظروں   سے   جو   پلا دی  تو پیمانہ کدھر جائیگا



خدا    رکھے   سلامت ،  نا   خدا   کا   شوقِ   سفر


یہ   مشغلہ   بھی   نہ  رہا  تو  دیوانہ  کدھر جائیگا



چل   رہا   ہونہی  چلنے   دو   کاروبارِ  ہستی  کو


بات  نکلی   تو  شیخ  جی  کا  آستانہ  کدھر جائیگا


خواہش ہے کہ عُمر تیرے ساتھ کرکے بسر دیکھوں



 کبھی  ، اے    کاش ،  میں  یہ  معجزہ ِ  ہُنر  دیکھوں

تیرے   مزاج   پہ    اپنے    لہجے  کا  اثر   دیکھوں   


 ترک ِ خواہش  ہی  ہوئی  تکمیل ِ حسرت نہیں دیکھی

خواہش  ہے کہ عُمر تیرے ساتھ کرکے بسر دیکھوں


تلخ  یادیں  ہیں ، تشنہ  کامی  ہے ، حسرتیں ہیں مگر

جنوں  کہتا  ہے  کہ  عمرِ رفتہ  کو  بارِ  دگر دیکھوں


تجھ  کو  زمانے  کی  فکر  بھی ،  انجام کا خوف بھی

میں  یہ  کہتا   ہوں ، جو  کرنا  ہے  بس  کر  دیکھوں


تنہا  ہوں ،  تو  گھر  میں   بھی   صحرا  سی  وحشت

تُو   ہم  سفر جو  ہو ،  تو صحرا کو بھی گھر دیکھوں

محبت مرحلہ نہیں سفر ہے اک عمر بھر کا

پھر تیری یاد آئی پھر درد پُرانے جاگے


خانہء دل  میں  یاد ِ ماضی  کے خزانے جاگے

پھر  تیری   یاد   آئی   پھر  درد  پُرانے  جاگے



خوابیدہ تھے  کب   سے گلستاں ہاےَ  خیال میں


اک  تیرے غم سے کتنے غم کے بہانے جاگے



جواں      پھر       ہوئی      رُت     بہار    کی


دل   میں   پھر   گزرے  ہوےَ   زمانے  جاگے



مچلنے لگی  وہی پہلی  سی  قربتوں کی خواہش


پہلو   میں  پھر  بچھڑے  ہوےَ  یارانے  جاگے



راز کی طرح جو سینہ ہاےَ جہاں میں دفن تھے


آج  پھر سے تیرے  میرے  وہ  فسانے  جاگے


دُور ہو کہ دل میں بسنے والے ، غم کا سبب بننے والے


چارہ  گرو  میری  زندگی  کِس  رنگ  میں  ڈھلتی جا رہی ہے

میرا  غم   غلط   ہو رہا   ہے  کہ   اُداسی  سُلگتی  جا رہی  ہے



دل     کی    ویرانیوں    سے     کہو    خاطر    جمع    رکھیں


یونہی   خامشی  میرے  بام  و  در  پہ  بھی  اُترتی جا رہی ہے



اے   مُحبت ِ   ناکام  ،  میرے   ہاتھ   کی   ریکھاوَں  میں  اک 


ریکھا  ،  کُچھ    زندگی   سے  آگے  تلک  چلتی  جا رہی  ہے



دُور  ہو  کہ  دل  میں بسنے والے ، غم  کا  سبب  بننے  والے


تیری یاد کا غم، تُجھے بُھول جا نےکی خوشی بنتی جارہی ہے



میں  اک   چراغ ِ  الم   ہوں  اور   قربت ِ  ہوا   کا   شوق   ہے


وائے حسرت، یونہی شوق میں زندگی، جلتی بُجھتی جارہی ہے



تیری یادوں سے گریزاں تیرے خیالوں میں لرزاں جانِ قریشی


کٹ رہی ہے زندگی یوں کہ جیسے قید کوئی گھٹتی جارہی ہے


                       

عام سے لمحے کی بہت خاص گھڑی تھی کہ محبت ہوئی



پُرانے   تعلق   کو    نئے   رابطوں   کی   حاجت   ہوئی

دل   کو    پھر   تیری   دھڑکنوں   کی   ضرورت  ہوئی


میرے  دن   ہوئے  تیرے چہرے  کی  ضو  سے  روشن

نیند   تو    جیسے    تیرے   خوابوں   کی   امانت   ہوئی


وہ   پت  جھڑ  تھا  ،  نہ   ہی   پھول   کھلنے   کا   موسم

عام سے لمحے کی بہت خاص گھڑی تھی کہ محبت ہوئی


کبھی  تو  ہوا  وصال  لمحوں  میں  بھی   فرُقتوں کا خیال

کبھی   فاصلوں   میں   بھی   وصل    سی   راحت  ہوئی 

                                                                           
                                                                                 
                                                           

سمجھ سے با لاتر ہے یہ ماجرا محبت کا



خُم  و ساغر سے نہ بادہ  و پیمانے سے

محفلِ تو سجتی ہے یار کے آ جانے سے


عقیدت ہے یا مجبوری، بات کوئی بھی ہو

تیرا ذکر آ ہی  جاتا ہے کِسی  بہانے سے


سمجھ سے با لاتر ہے یہ ماجرا محبت کا

گرہیں اور بھی لگتی ہیں ، سُلجھانے سے


انہی لوگوں  میں  رہتا  ہے  روز  و  شب

پھر  بھی  کتنا  جدا  لگتا ہے  زمانے سے


کتنی   ہی  اُونچی  کیوں  نہ   کر لے  اُڑان

پنچھی  کبھی غافل  نہیں ہوتا آشیانے  سے

                                        

Monday, 29 April 2013

ہم تو سمجھے تھے اک زخم ہے بھر جائے گا

اپنی یادیں اپنی باتیں لے کر جانا بھول گیا

تم کو اداس آنکھیں بلاتی ہیں

اپنا آپ شاید وہیں پہ بھول آئ ہوں

اجنبی شہر میں

عشق میں بس یہ خرابی ہے

ہم جو ٹوٹے

تیری مسیحائ کو ہمیشہ یاد رکھوں گا

خود کو تیری ذات میں ڈھلتا ہوا دیکھوں

تجھ سے ملنے کی خواہش تو ادھوری رہ جائے گی

اجازت

دوستی کے اس سفر میں

اک دعا گو نے رفاقت کی تسلی دیکر

متاع شام

دوستی

دسمبر لوٹ آیا ہے

نشانی

بھیگی ہوئی ایک شام

مقدر کے ہارے کبھی جیتا نہیں کرتے

موسموں کے کھیل ہیں سب

تمہارے لوٹ آنے کا ابھی امکان باقی ہے

اک بے نام اذیت کے سوا کچھ بھی نہیں

اگر تم ساتھ دیتے

اپنے پیمان یاد رکھنا

اک خسارہ اور ہے

تم ساتھ نبھایا کرنا

میری چاہت۔۔۔تیری چاہت

اسی جگہ پہ کھڑا ہوں جہاں وہ بچھڑا تھا

Sunday, 28 April 2013

Barish-e-sang-e-malamat men sharaboor rahey



Barish-e-sang-e-malamat men sharaboor rahey
Harf aaye naa tujh par, tujh say door rahey,

Aatish e qalb bhujaney say kahan bhujtee hay
Dil men khawabeedaa agar yaad kay sharrar rahey,

Natawaan jism o jaan, duniyaa say woh takkar laynaa
Hum aisi baat pay had darjaa maghroor rahey,

Dard barh jaaye to khud aap marham hotaa hay
Suna jo hum nay to phir hum bhee zakhm choor rahey,

Hansatey rehtay hain sar e bazm, hay aadat apnee
Hum to woh hain keh dukh uthaa kay bhee masroor rahey,

Barh gayee had say sharafat to kuchlay jaao gay
Yaad har pal tumhain duniya kaa yeh dastoor rahey,

Ghazal men haal jo hum apna bayaan kar baithey
Es dil kay hathon bohat majboor rahey.

ہمیں تو ایک نظر سے نواز اے ساقی


ہم اپنی شام کو جب نذر_جام کرتے ہیں
ادب سے ہم کو ستارے سلام کرتے ہیں

گلے لگاتے ہیں دشمن کو بھی سرور میں ہم
بہت برے ہیں مگر نیک کام کرتے ہیں

سجائیں کیوں نہ اسے یہ سراۓ ہے دل کی
یہاں حسین مسافر قیام کرتے ہیں

حیات بیچ دیں تھوڑے سے پیار کے بدلے
یہ کاروبار بھی تیرے غلام کرتے ہیں

ہمیں تو ایک نظر سے نواز اے ساقی
ہم اپنے ہوش و خرد تیرے نام کرتے ہیں

"قتیل" کتنے سخن ساز ہیں یہ سناٹے
سکوت شب میں جو ہم سے کلام کرتے ہیں


کچھ ستارے خریدنا ہیں مجھے



مسکراہٹ ادھار دینا ذرا

کچھ ستارے خریدنا ہیں مجھے


ایک آنسو کا مول کیا لو گے؟

آج سارے خریدنا ہیں مجھے


بول تتلی کے دام کتنے ہیں؟

رنگ پیارے خریدنا ہیں مجھے


سرخوشی میں جو بیچ آیا تھا

غم وہ سارےخریدنا ہیں مجھے


زندگی کے جوار بھاٹے سے

کچھ شرارے خریدنا ہیں مجھے


میں سمندر خرید بیٹھا ہوں

اب کنارے خریدنا ہیں مجھے


زندگی کا خراج کتنا ہے

گوشوارے خریدنا ہیں مجھے


معزرت 
کہ منیم جی اب تو

بس خسارے خریدنا ہیں مجھے


ڈگمگاتی ہے زندگی عاطف

کچھ سہارے خریدنا ہیں مجھے


ہم تری محبت کے جُگنوؤں کی آمد پر


اشک اپنی آنکھوں سے خُود بھی ہم چھُپائیں گے
تیرے چاہنے والے شور کیا مچائیں گے

صُبح کی ہَوا تجھ کو وہ ملے تو کہہ دینا
شام کی منڈیروں پر ہم دیئے جلائیں گے

ہم نے کب ستاروں سے روشنی کی خواہش کی
ہم تمہاری آنکھوں سے شب کو جگمگائیں گے

تُجھ کو کیا خبر جاناں ہم اُداس لوگوں پر
شام کے سبھی منظر اُنگلیاں اٹھائیں گے

ہم تری محبت کے جُگنوؤں کی آمد پر
تِتلیوں کے رنگوں سے راستے سجائیں گے


رات یوں رُخسار پہ تیری یاد کے آنسو مہکے



رات  یوں  رُخسار  پہ  تیری  یاد  کے  آنسو مہکے

اندھیری  رات  میں  جیسے تنہا  کوئی جگنو مہکے


پاکیزہ  چاندنی  سے کیسے مُعطر  ہورہی ہے فضا

تیرے  پہلو کی خوشبو سے جیسے میرا پہلو مہکے


تیز  ہوا   یوں   پتوں  سے  ٹکرا  کے  گزرتی  ہے

اک لمبی خامشی کے بعد جیسے تیری گفتگو مہکے


میں  اور  اک  غزل  لکھ  رہا  ہوں  تیرے  نام سے

تیرے  خیال  سے  میرے  وجدان  کی  آرزو مہکے


اک  بار  یوں  رکھ  دے میرے سینے  پہ  اپنا  ہاتھ

چاک گریباں رہے  نہ رہے تمام عمر یہ رفُو مہکے


مین چلی جاؤں گی یادوں کو مقفل کرکے

اب کے محبتوں میں یہ کیا معجزے ہوئے



اب کے محبتوں میں یہ کیا معجزے ہوئے
ہم خود کو سوچتے ہیں تجھے سوچتے ہوئے 

اک بار تجھ کو سوچا سر شام اور پھر 
اک اور رات بیت گئی جاگتے ہوئے

ہم منزل عدم کے اندھیروں میں کھو گئے 
جب سے الگ تمہارے مرے راستے ہوئے 

جب آگہی کی نبض تھمی تو پتہ چلا 
کتنے برس گزر گئے تجھ سے ملے ہوئے

میں نے کہا کہ دنیا میں کوئی نہیں مرا 
اس نے کہا کہ آج سے ہم آپ کے ہوئے

میری محبت



میری محبت کوئلوں جیسی ہے

کہ جلتی بجھتی رہتی ہے

کبھی یہ گماں بھی ہوتا ہے

کہ کوئلہ بجھ چکا ہوگا

مگر پھر اچانک سے

ذرا سے ہوا کے جھونکے سے

سرخی دمکنے لگتی ہے

آگ بھڑکنے لگتی

پھر وہی حرارت ہوگی

ہھر وہی شرارت ہوگی

میری محبت اس ننھے بلب جیسی ہے

جو گھر کے باہر لان میں

مدتوں جلتا رہتا ہے

دن کو سورج کی روشنی میں

اوروں کی موجودگی میں

اسکی ہستی گم گم رہتی ہے

مگر جیسے ہی شام ڈھلتی ہے

آنگن میں اندھیرا ہوتا ہے

وہی ننھا منا بلب ہماری

راتیں روشن کرتا ہے۔۔۔

ترکِ مراسم


صبحیں بھی وہی، ہے شام بھی وہی

کاروبارِ ہستی بھی، زیست کا ہنگام بھی وہی


غمِ ہستی بھی وہی، دردِ انجام بھی وہی


ہم بھی وہی، تلخیء ایام بھی وہی


ہاں مگر تم سے بچھڑ کر اب ہر پل


دل بوجھل بوجھل رہتا ہے


اور سچ بھی ہے کہ جیتے جیتے


مرنا کس کو اچھا لگتا ہے


پر سچ سنتی ہو تو دیکھو


مجھ سے بچھڑ کر تم خوش ہو


اور دل کی کہوں تو جاناں


اپنی خواہش سے بھی زیادہ


ہنستا کھلتا چہرہ تمھارا


مجھ کو اچھا لگتا ہے


فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے



فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے

دریدہ دل کے دامن میں اب جو ہیں

کبھی وہ پھول نہ کھلے ہوتے

کار ہائے دنیا سے جو ملے ہم کو

وہ چاک تمھاری رفاقتوں سے نہ سلے ہوتے

!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے

تو آج اس حسیں موڑ پر اجنبی جیسے

مل بیٹھتے اور اک نیا آغاز کرتے

تم اپنی مسکراہٹ سے چھیڑتی راگنی

ہم دل کو مدعا، دھڑکنوں کو آواز کرتے

فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے

تم اپنی دنیا میں گم سم 

الگ سے خواب بنا کرتی

ہم اپنے خیالوں میں گنگناتے

کوئی دور ہمیں سنا کرتی

!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے

دریدہ دل کے دامن میں اب جو ہیں

کبھی وہ پھول نہ کھلے ہوتے

تو اب جو ملال گزرے دنوں کا ہے

وہ کسی اور شخص سے منسوب ہوتا

ہم تم اجنبی ہی رہتے جو عمر بھر

تو سوچو کتنا خوب ہوتا

نہ چاہتیں ہوتیں، نہ رنجشیں بنتیں

آرذویں جو دل میں دبی رہتیں

ایسے نہ آنکھوں کی بارشیں بنتیں

نہ تمھیں کچھ ہماری خبرہوتی

نہ ہمیں کوئی تمھاری فکر ہوتی

نہ جھگڑے وفا جفا کے ہوتے

نہ ہی کوئی ہجر و وصال کے سلسلے ہوتے

!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے

Friday, 26 April 2013

وہ جل تھل ہوا کہ الاماں



سردیوں کی طویل راتوں میں

بے ربط گفتگو تا وقتِ سحر

خامشی کے سلسلوں میں کہیں

تمھاری سرگوشیوں کی لہر

بے نام آنسوؤں کے سیلِ رواں میں

سسکیوں کا موہوم سا وقفہ

مجھے اب تلک یاد ہے وہ،

 آغازِ محبت کا پہلا مرحلہ

نہ جھگڑا خرد و جنوں کا

وفا جفا کے وعدے نہ قسمیں کوئی

سیدھی سی تھی سانسوں کی ڈور

اک دوسرے سے لپٹی ہوئی

لمحوں کی جو بات تھی وہ

سالوں میں ڈھلتی رہی بڑھتی رہی

باتوں سے جو بات نکلی تھی وہ

 سانسوں کی صورت چلتی رہی

نجانے کہاں سے آیا اچانک

پھر موسم تغافل کا، رنجشوں کا

کوئی اجنبی سا بادل جو لے کر آیا

نہ ٹوٹا پھر زور بارشوں کا

وہ جل تھل ہوا کہ الاماں

سالوں کی محنت سے جو تھا بنا

اک آن میں اجڑا

اپنے خوابوں کا آشیاں

اب، تنہائی کی طویل راتوں میں

رت جگے ہیں الجھنیں ہیں تا وقتِ سحر

خامشی کے سلسلوں میں گونجتی ہے

تمھاری سرگوشیوں کی موہوم لہر


Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets