Wednesday, 31 July 2013

صبح بخیر

[​IMG]

وہ عجب گھڑی تھی کہ جس گھڑی لیا درس نسخہ عشق کا

[​IMG]

اس نے ایک بار کیا تھا سوالِ محبت


جانے    کیوں  شکست  کا   عذاب  لئے  پھرتا  ہوں
میں  کیا  ہوں   اور   کیا   خواب   لئے  پھرتا  ہوں
اس   نے     ایک    بار    کیا     تھا    سوالِ     محبت
میں     ہر    لمحہ     جواب      لئے    پھرتا      ہوں
اس      نے     پوچھا     کب     سے   نہیں    سوئے
میں  تب سے رت جگوں کا حساب لئے پھرتا  ہوں
اس کی خواہش تھی کہ میری آنکھوں میں پانی دیکھے
میں اس وقت سے آنسؤں کا سیلاب لئے پھرتا ہوں
افسوس   کہ   پھر   بھی    وہ   میرا    نہ   ہوا   ساقی
میں   جس  کی  آرزو  کی  کتاب  لئے   پھرتا  ہوں

Tuesday, 30 July 2013

ہچکچا گیا میں خود کو مسلماں کہتے کہتے


گونگی ہو گئی آج زباں کچھ کہتے کہتے
ہچکچا گیا میں خود کو مسلماں کہتے کہتے

یہ بات نہیں کہ مجھ کو اس ہر یقیں نہیں
بس ڈر گیا خود کو صاحب ایماں کہتے کہتے

توفیق نہ ہوئی مجھ کو اک وقت کی نماز کی
اور چپ ہوا 
مؤذن  اذاں کہتے کہتے

کسی کافر نے جو پوچھا کہ یہ کیا ہے مہینہ
شرم سے پانی ہوا میں رمضاں کہتے کہتے

میرے شیلف میں جو گرد سے اٹی کتاب کا جو پوچھا
میں گڑھ کیا زمیں میں قرآں کہتے کہتے

یہ سن کہ چپ سادھ لی اقبال اس نے
یوں لگا جیسے رک گیا ہو مجھے حیواں کہتے کہتے


ایک خوش باش لڑکی




کبھی چور آنکھوں سے دیکھ لیا
کبھی بے دھیانی کا زہر دیا
کبھی ہونٹوں سے سرگوشی کی
کبھی چال چلی خاموشی کی
جب جانے لگے تو روک لیا
جب بڑھنے لگے تو ٹوک دیا
اور جب بھی کوئی سوال کیا
اس نے ہنس کر ہی ٹال دیا

محبت کا کریں آغاز پھر سے

2b.jpg

پرسہ دیتی ہے مجھے سرمئی شام بھی گاہے گاہے


پرسہ دیتی ہے مجھے سرمئی شام بھی گاہے گاہے
ہوا لکھتی ہے پیڑوں پہ تیرا نام بھی گاہے گاہے

رقص کرتی ھوئی خوشیوں کا تناسب کم ہے
ساتھ چلتے ہیں گردش ایام بھی گاہے گاہے

کچھ تو بادل بھی میرے شہر کا نصیبہ ٹھہرے
اور وہ چاند آتا ہے لب بام بھی گاہے گاہے

اس کے مسلک میں جفا ہے نہ شفا ہے یارو
اسی طبیب سے رہتا ہے مگر کام بھی گاہے گاہے

اتنی نازاں نہ ہو قسمت پہ ائے میری دشمن جان
خاک میں مل جاتے ہیں لالہ وگلفام بھی گاہے گاہے

اس کڑی دھوپ میں یاد آئی ہے صبح چمن
اور بدلیوں سے جھانکتی وہ شام بھی گاہے گاہے

شہر آشوب میں نقد و نظر کیا معنی انور جمال
شاعر بک جاتے یہاں بے دام بھی گاہے گاہے

ہم یاد تو آتے ہوں گے

اس کے کچھ حرفِ دل آزار بہت یاد آئے


رات کچھ یارِ طرحدار بہت یاد آئے
وہ گلی کوچے، وہ بازار بہت یاد آئے

جن کے ہونے کی تسلی سے خوشی ہوتی تھی
درد چمکا تو وہ غمخوار بہت یاد آئے

شامِ فرقت میں چمکتی ہوئی صبحوں کی طرح
اپنے گھر کے درودیوار بہت یاد آئے

سامنے دیکھ کے پرچھائیاں انسانوں کی
کسی افسانے کے کردار بہت یاد آئے

جن کے سایوں میں ہمیں نیند بہت آتی تھی
دھوپ میں ہم کو وہ اشجار بہت یاد آئے

سبھی اچھے تھے ترے شہر کے اربابِ کرم
ہاں، مگر ان میں سے دو چار بہت یاد آئے

اب جو بھیجا مجھے خط اس نے بڑے پیار کے ساتھ
اس کے کچھ حرفِ دل آزار بہت یاد آئے

Phir uski Yaad, Phir uski Talab, Phir uski Baatein




Phir uski Yaad, Phir uski Talab, Phir uski Baatein
Ay Dil, Tujhay lagta hain Sukoon Raas nahi

Kahin to khatm ho teray intezar ka mausom
















Kahin to ja kay yeh maah o saal ruken
Kahin to khatm ho teray intezar ka mausom

Monday, 29 July 2013

Tumhari yaad bhi mohsin kisi muflis ki poonji hai



Tumhari yaad bhi mohsin kisi muflis ki poonji hai
Jisay hum paas rakhtay hain jisay hum roz gintay hain

یاد

212cx35.jpg

وصال

547503_416600258409184_130855221_n.jpg

اسیران محبت

trueeee.jpg

Haath to woh chhura gaya lekin

654.jpg

Haath to woh chhura gaya lekin
ungli ungli mehak rahi hai abhi

تم اداس مت ہونا

Udas.png

اے محبت

aye_muhabbat_teri_qismat.jpg

محبت

urdu-poetry-itsmyviewsf.jpg

Tujh say bichra to kisi dar ka na raha

574456_141472206018693_997217527_n.jpg

Tujh say bichra to kisi dar ka na raha
Khushk pattay ki terha aaj bhi safar men hoon

Saturday, 27 July 2013

محبتوں کے گلاب موسم


وہ مجھ کو لکھتا تھا
اے میری جان۔۔۔۔۔۔!!

جدائیوں کی اُداس رُت میں
خفا نہ ہونا۔۔۔۔۔۔۔۔! !

میں لوٹ آیا تو قربتوں کے
حسین موسم سے
دل کے آنگن سنوار دوں گا

بہار اُس میں اُتار دوں گا
میں لے کے آؤںگا ساتھ اپنے

محبتوں کے گلاب موسم
وفا میں ڈوبے سیماب لمحے

تمہاری خاطر، تمہاری خاطر۔۔!!

مگر وہ آیا ________

تو عذر لایا ________________
جواز لایا ___________

وضاحتوں کا محاذ لایا۔

میں جن دنوں کی تھی انتہا پر

وہ پھر سے اُن کا آغاز لایا _________!!

تمہاری چشمِ حیراں میں کہیں ٹھہرا ہوا آنسو


تمہاری چشمِ حیراں میں کہیں ٹھہرا ہوا آنسو
لبوں پر ان کہی سی بات کا پھیلا ہوا جادو
بہت بے ساختہ ہنستے ہوۓ
خاموش ہو جانے کی اک ہلکی سی بے چینی
تمہارے دونوں ہاتھوں کی کٹوری میں
سنہر ے خواب کا جگنو
گلابی شام کی دھلیز پہ رکھا ہوا
اک ریشمی لمحہ
تمہاری نرم سی خوشبو سے وہ مہکا ہوا
اک شبنمی جھونکا
محبت میں یہی میرے اثاثے ہیں


Saturday, 20 July 2013

ہجر کی بد دعا نہ ہو جانا


آوارگی

کیا حرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ بھی نہیں؟

مجھے بھی یاد کر لینا

Mujhe+Bhi+Yaad+Kar+Laina.jpg

بے وفائ

تو بھی دل سے اتر نہ جائے کہیں

غم تنہائ

چاند جلتا رہا

عشق

avkfaq.jpg

دل ناداں

کنگن

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets