Friday, 30 August 2013

Kutch din sey tera rang kahee'n jamm nahee'n raha


Kutch din sey tera rang kahee'n jamm nahee'n raha
lagta hai teri baato'n mai ab damm nahee'n raha

sho'lo'n ka roop ley liya jab sey hawaa'on ney
tab sey mera mizaj bhi shabnam nahee'n raha

zakhmo'n pey ab namak hi chhirahk dey ay chara'gar
gar terey ikhteyar mai marham nahee'n raha

kal shab chamak damak mai saitaro'n k darmiya'n
yeh zarra e haqeer bhi kutch kam nahee'n raha

kutch dair aisay ro k tabeeyat sambhal gayee
ab jaisay zindagi mai koi gham nahee'n raha

mai kya karoo'n NAEEM keh ab mera jazb e dill
manzil ki justajoo mai kahee'n ka nahee'n raha

Wednesday, 28 August 2013

بھول جانے دو

دسمبر اب بھی تیرا منتظر ہے

سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں



اے موج ہوا

سودا ہے عمر بھر کا کوئی کھیل تو نہیں

میں تو شامل ہوں محبت کے گنہگاروں میں

غم ہجراں

سنو اے محرم ہستی

paas jab tak wo rahay dard thama rehta hai


phir meray shehr sey guzra hai wo badal ki tarah
dast e gul phaila huwa hai meray aanchal ki tarah

keh raha hai kisi mausam ki kahani abb tak
jism barsaat mai bheegay huway jangal ki tarah

oonchi aawaz mai us nay tau kabhi baat na ki
khafgiyo'n mai bhi wo lehja raha komal ki tarah

mil k uss shakhs sey main laakh khamoshi say chaloo'n
bol utth'tee hai nazar paao'n ki chhagal ki tarah

paas jab tak wo rahay dard thama rehta hai
phailta rehta hai phir aankh k kaajal ki tarah

abb kisi taur sey ghar janay ki soorat hi nahee'n
raastay merey liye ho gaye daldal ki tarah

jism kay teeraa o aasaib zada mandar mai
dil sar e shaam sulag utth'ta hai sandal ki tarah

پاس جب تک وہ رہے ،درد تھمارہتا ہے


پھر مرے شہر سے گزرا ہے وہ بادل کی طرح
دست گُل پھیلا ہُوا ہے مرے آنچل کی طرح

کہہ رہا ہے کسی موسم کی کہانی اب تک
جسم برسات میں بھیگے ہُوئے جنگل کی طرح

اُونچی آواز میں اُس نے تو کبھی بات نہ کی
خفگیوں میں بھی وہ لہجہ رہا کومل کی طرح

مِل کے اُس شخص سے میں لاکھ خموشی سے چلوں
بول اُٹھتی ہے نظر، پاؤں کی پائل کی طرح

پاس جب تک وہ رہے ،درد تھمارہتا ہے
پھیلتا جاتا ہے پھر آنکھ کے کاجل کی طرح

اب کسی طور سے گھر جانے کی صُورت ہی نہیں
راستے میرے لیے ہوگئے دلدل کی طرح

جسم کے تیرہ وآسیب زدہ مندرمیں
دل سِر شام سلگ اُٹھتا ہے صندل کی طرح

Tu bohat dair say mila hai mujhay


















Zindagi say yehi gila hai mujhay
Tu bohat dair say mila hai mujhay

Hai ik sauda agar maano to,dono mil kay taey kar lain










Hai ik sauda agar maano to,dono mil kay taey kar lain
Qaraar e zindagi lay lo,jawaaz e zindagi day do

Tuesday, 27 August 2013

ﺭﺍﺗﯿﮟ ﺍُﺩﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﮍﮮ ﮨﯿﮟ


ﺭﺍﺗﯿﮟ ﺍُﺩﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﮍﮮ ﮨﯿﮟ
ﺍﮮ ﺩﻝ ﺗﯿﺮﮮ ﺣﻮﺻﻠﮯ ﺑﮍﮮ ﮨﯿﮟ

ﺍﮮ ﯾﺎﺩِ ﺣﺒﯿﺐ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﻨﺎ
ﮐﭽﮫ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﺳﺨﺖ ﺁ ﭘﮍﮮ ﮨﯿﮟ

ﺭُﮐﻨﺎ ﮨﻮ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺳﻮ ﺑﮩﺎﻧﮯ
ﺟﺎﻧﺎ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺑﮍﮮ ﮨﯿﮟ

ﺍﺏ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﻭﺟﮧ ﮔﺮﯾﮧ
ﺟﺐ ﺁﭖ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﻭ ﭘﮍﮮ ﮨﯿﮟ

ﺍﺏ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﻧﺼﯿﺐ ﻟﮯ ﺟﺎﮰ
ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻓﺮﺍﺯ ﭼﻞ ﭘﮍﮮ ﮨﯿﮟ

محبت ہمسفر میری

ہم اُس کی یاد کی چادر کو خود پہ تان لیتے ہیں


ہوائیں سرد ہو جائیں
یا لہجے برف ہو جائیں
ہم اُس کی یاد کی چادر کو
خود پہ تان لیتے ہیں
سُنو! درویش لوگوں کی
کوئی دنیا نہیں ہوتی
ملے جو خاک رستے میں
اُسی کو چھان لیتے ہیں
اگر وہ روٹھ جاتا ہے
ہماری جان نکلتی ہے
یہ سانسیں جاری رکھنے کو
ہم اُس کی مان لیتے ہیں

Monday, 26 August 2013

ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﭼﺎک ﮔﺮﯾﺒﺎں ﮨﻮﺋﮯ ﻧﺎﭘﯿﺪ اب ﮐﮯ


ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﭼﺎک ﮔﺮﯾﺒﺎں ﮨﻮﺋﮯ ﻧﺎﭘﯿﺪ اب ﮐﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺿﺒﻂ ﮐﯽ ﺗﺎﮐﯿﺪ اب ﮐﮯ

ﻟﻄﻒ ﮐﺮ، اے نگہ ﯾﺎر ، کہ ﻏﻢ واﻟﻮں ﻧﮯ
ﺣﺴﺮتِ دل ﮐﯽ اُﭨﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟﺗﻤﮩﯿﺪ اب ﮐﮯ

ﭼﺎﻧﺪ دﯾﮑﮭﺎ ﺗﺮی آﻧﮑﮭﻮں ﻣﯿﮟ ، نہ ﮨﻮﻧﭩﻮں پہ
ﺷﻔﻖ
ﻣﻠﺘﯽ ﺟﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﺷﺐِ ﻏﻢ ﺳﮯ ﺗﺮی دﯾﺪ اب ﮐﮯ

دل دﮐﮭﺎ ﮨﮯ نہ وﮦ ﭘﮩﻼ ﺳﺎ، نہ ﺟﺎں ﺗﮍﭘﯽ ﮨﮯ
ﮨﻢ ﮨﯽ ﻏﺎﻓﻞ ﺗﮭﮯ کہ آﺋﯽ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻋﯿﺪ اب ﮐﮯ

ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺠﮫ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﯽ ﺷﻤﻌﯿﮟ ﺟﻮ ﮨﻮا ﺗﯿﺰ
ﭼﻠﯽ
ﻻ ﮐﮯ رﮐﮭﻮ ﺳﺮِ ﻣﺤﻔﻞ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮرﺷﯿﺪ اب ﮐﮯ

Wednesday, 14 August 2013

Merey Gumshuda


Abhi Waqt Hai
Abhi Saans Hay
Abhi Loat Aa
Merey Gumshuda
Mujhey Naaz Hai
Barey Zabt Ka 
Mujhey Khoob Rula 
Merey Gumshuda
Yeh Nahi Keh Terey Firaaq Men
Main Ujar Gaii Ya Bikhar Gaii
Han! Muhabaton Pey Jo Maan Tha,
Wo Nahi Raha 
Merey Gumshuda
Mujhey Ilam Hai Keh Tu
Chand Hai Kisi Aur Ka
Magar Ik Pal 
Merey Aasman-E-Hayaat Pey 
Zara Jagmaga
Merey Gumshuda
Terey Itfaat Ki Barishen 
Jo Meri Nahi To Bata Mujhey
Tere Dasht-E-Chah Mein 
Kis Liye Mera Dil Jala 
Merey Gumshuda
Ghaney Jangalon Men Ghiri Huun Main
Bara Ghuup Andhera Hai Chaar Soo
Koi Ik Chiragh To Jal Uthay
Zara Muskura
Merey Gumshuda

دِل کی سنسان حویلی میں‌چُھپایئں‌کب تک


اِک تری یاد ہٹانے سے نِکل آتا ہے
ہجر کا سانپ خزانے سے نِکل آتا ہے

دِل کی سنسان حویلی میں‌چُھپایئں‌کب تک ۔۔۔۔!!۔۔۔
شب کو ہر درد ٹھِکانے سے نِکل آتا ہے

چشم ِ‌نمناک سُلگتی ہے، سُلگ جانے دو۔۔۔!!۔۔
کُچھ دُھواں‌ آگ بُجھانے سے نِکل آتا ہے

پا بہ زنجیر بنایا ہے مگر پہلو سے
دِل تری اوَر، بہانے سے نِکل آتا ہے

پچھلی تعبیر کے چھالے ہیں‌ ابھی پیروں‌ میں‌ ۔۔!!۔۔
پھر نیا خواب سرھانے سے نِکل آتا ہے

یہ کسی کی بزمِ نشاط ہے یہاں قطرہ قطرہ پگھل کے رو


 تُو کہ شمعِ شامِ فراق ہے دلِ نامراد سنبھل کے رو
یہ کسی کی بزمِ نشاط ہے یہاں قطرہ قطرہ پگھل کے رو

کوئی آشنا ہو کہ غیر ہو نہ کسی سے حال بیان کر
یہ کٹھور لوگوں کا شہر ہے کہیں دُور پار نکل کے رو

کسے کیا پڑی سرِ انجمن کہ سُنے وہ تیری کہانیاں
جہاں کوئی تجھ سے بچھڑ گیا اُسی رہگزار پہ چل کے رو

یہاں اور بھی ہیں گرفتہ دل کبھی اپنے جیسوں سے جا کے مِل
ترے دکھ سے کم نہیں جن کے دکھ کبھی اُن کی آگ میں جل کے رو

ترے دوستوں کو خبر ہے سب تری بے کلی کا جو ہے سبب
تُو بھلے سے اُس کا نہ ذکر کر تُو ہزار نام بدل کے رو

غمِ ہجر لاکھ کڑا سہی پہ فرازکچھ تو خیال کر
مری جاں یہ محفلِ شعر ہے تو نہ ساتھ ساتھ غزل کے رو

ابھي لوٹ آ ميرےگمشدہ


ابھي لوٹ آ ميرےگمشدہ
مجھےناز ہےميرے ضبط پر
مجھے پھر رلا مير ے گمشدہ
يہ نہيں کہ_ تيرے فراق ميں 
ميں اجڑگيا يا بکھر گيا
ہاں محبتوں پہ جو مان تھا
وہ نہيں رہا ميرے گمشدہ
مجھے علم ہے کہ تو چاند ہے
کسي اور کا، مگر ايک پل
ميرے آسمان حيات پہ
ذرا جگمگا _ ميرے گمشدہ
تيرے التفات کي بارشيں
جو ميري نہيں تو بتا مجھے
تيرے دشت چاہ ميں کس ليے
ميرا دل جلا ميرے گمشدہ
گھنے جنگلوں ميں گھرا ہوں ميں
بڑا گھپ اندھير اہےچار سو
کوئ اک چراغ تو جل اٹھے
ذرا مسکرا ميرے گم شدہ

بھیڑ میں بچھڑے ہوۓ لوگ کہاں ملتے ہیں



وقت کی کائی زدہ جھیل میں
گر چہ اب تک 
تیری خوائش کے کنول کھلتے ہیں 
بھیڑ میں بچھڑے ہوۓ لوگ کہاں ملتے ہیں

وہم


وہ نہیں ہے 
تو اُ س کی چاہت میں
کس لیے 
رات دن سنورتے ہو
خود سے بے ربط باتیں کرتے ہو
اپنا ہی عکس نوچنے کے لیے
خود اُلجھتے ہو، خود سے ڈرتے ہو
ہم نہ کہتے تھے
ہجر والوں سے، آئینہ گفتگو نہیں کرتا

ھم شہر محبت کے فقیروں کی طرح تھے


شاہوں کی طرح تھے نہ امیروں کی طرح تھے
ھم شہر محبت کے فقیروں کی طرح تھے

دریاؤں میں ھوتے تھے جزیروں کی طرح ھم
صحراؤں میں پانی کے ذخیروں کی طرح تھے

افسوس کہ سمجھا نہ ھمیں اھل نظر نے
ھم وقت کی زنبیل میں ھیروں کی طرح تھے

حیرت ھے کہ وہ لوگ بھی اب چھوڑ چلے ھیں
جو میری ھتھیلی پہ لکیروں کی طرح تھے

سوچی نہ بری سوچ کبھی ان کے لۓ بھی
پیوست میرے دل میں جو تیروں کی طرح تھے

بسا ہوا تھا مرے دل میں ، درد جیسا تھا


بسا ہوا تھا مرے دل میں ، درد جیسا تھا
وہ اجنبی تھا مگر گھر کے فرد جیسا تھا

کبھی وہ چشمِ تصوّر میں عکس کی صورت
کبھی خیال کے شیشے پہ گرد جیسا تھا

جدا ہوا نہ لبوں سے وہ ایک پل کے لیے
کبھی دعا تو کبھی آہِ سرد جیسا تھا

سفر نصیب مگر بے جہت مسافر تھا
وہ گرد باد سا ، صحرا نورد جیسا تھا

جنم کا ساتھ نبھایا نہ جا سکا عاجز
وہ شاخِ سبز تو میں برگِ زرد جیسا تھا

Sunday, 11 August 2013

Wo Dard Woh Wafa Woh Muhabbat Tamaam Shud


Wo Dard Woh Wafa Woh Muhabbat Tamaam Shud...
Ley Dil Men Terey Qurb Ki Hasrat Tamaam Shud...

Yeh Baad Men Khuley Ga K Kiss Kiss Ka Khoon Hua..??
Her Eik Bayaan Khatam, Adaalat Tamaam Shud...

Tu Ab To Dushmani K Bhi Qabil Nahi Raha..
Uth'ti Thi Jo Kabhi Woh Adaawat Tamaam Shud...

Ab RAbt Eik Naya Mujhey Awaargi Sey Hai...
Paband-E-Khayaal Ki Aadat Tamaam Shud..

Jaayez Thi Ya Nahi Thi Terey Haq Mae Thi MAgar..
Karta Tha Jo Kabhi Woh Waqaalat Tamaam Shud...

Woh Roz Roz Marney KA QIssa Hua Tamaam...
Woh Roz Dil Ko Cheerti Wehshat Tamaam Shud..

Mohsin Main Kunja-E-Zeest Men Chup Chaap PAra Hun..
Majnoon Si Woh Khaslat-O-HaAllat Tamaam Shud....!!

"تکمیل"


وہ کہتی تھی
تم ہنس کر
کوئی بات کرو تو
اپنا اپ
مکمل لگنے لگ جاتا ہے
میں نے بھی محسوس کیا کہ
اس سے باتیں کرکے میں بھی
اور سے اور ہوا جاتا ہوں
اور پھر اک دن
جانے کیسے
مجھ سے باتیں کرکے اپنا آپ مکمل کرنے والی
مجھے ادھورا چھوڑ گئی ہے

چہرہ مگر ضرور کسی آشنا کا تھا


وارفتگی میں دل کا چلن انتہا کا تھا
اب بت پرست ہے جو نہ قائل خدا کا تھا

مجھ کو خود اپنے آپ سے شرمندگی ہوئی
وہ اس طرح کہ تجھ پہ بھروسہ بلا کا تھا

وار اس قدر شدید کہ دشمن ہی کر سکے
چہرہ مگر ضرور کسی آشنا کا تھا

اب یہ کہ اپنی کشتِ تمنا کو روئیے
اب اس سے کیا گلہ کہ وہ بادل ہوا کا تھا

تو نے بچھڑ کر اپنے سر الزام لے لیا
ورنہ فراز کا تو یہ رونا سدا کا تھا

Saturday, 10 August 2013

کبھی جھانکا تری آنکھوں میں تو ہم ہی ہم تھے


تیری گفتار میں تو پیار کے تیور کم تھے
کبھی جھانکا تری آنکھوں میں تو ہم ہی ہم تھے

لمس کے دم سے بصارت بھی، بصیرت بھی ملی
چُھو کے دیکھا تو جو پتھر تھے نرے ریشم تھے

تیری یادیں کبھی ہنستی تھیں، کبھی روتی تھیں
میرے گھر کے یہی ہیرے تھے، یہی نیلم تھے

برف گرماتی رہی، دھوپ اماں دیتی رہی
دل کی نگری میں جو موسم تھے، ترے موسم تھے

مری پونجی مرے اپنے ہی لہو کی تھی کشید
زندگی بھر کی کمائی میرے اپنے غم تھے

آنسوؤں نے عجب انداز میں سیراب کیا
کہیں بھیگے ہوئے آنچل، کہیں باطن نم تھے

جن کے دامن کی ہوا میرے چراغوں پہ چلی
وہ کوئی اور کہاں تھے وہ مرے ہمدم تھے

میں نے پایا تھا بس اتنا ہی صداقت کا سُراغ
دُور تک پھیلتے خاکے تھے، مگر مبہم تھے

میں نے گرنے نہ دیا مر کے بھی معیارِ وقار
ڈوبتے وقت مرے ہاتھ مرے پرچم تھے

میں سرِ عرش بھی پہنچا تو سرِ فرش رہا
کائناتوں کے سب امکاں مرے اندر ضم تھے

عمر بھر خاک میں جو اشک ہوئے جذب ندیم
برگِ گل پر کبھی ٹپکے تو وہی شبنم تھے

Suljhay suljhay baalon wali larki say mein poochoon ga


Suljhay suljhay baalon wali larki say mein poochoon ga
      uljha uljha rehnay wala larka kesa lagta hai

سلجھے سلجھے بالوں والی لڑکی سے میں پوچھوں گا
       الجھا الجھا رہنے والا لڑکا کیسا لگتا ہے 

سانس کے ساتھ جو زندہ تھا کبھی


ایک منظر کو بکھرتا دیکھوں
چڑھتے سورج کو اترتا دیکھوں

خواب آنکھوں میں سنورتا دیکھوں
پھر وھی خواب بکھرتا دیکھوں

روز خوشبو کی گزر گاھوں پر
کتنی یادوں کو میں مرتا دیکھوں

دھوپ کے شہر میں لوگوں کو کبھی
اپنے سائے سے بھی ڈرتا دیکھوں

ایک آواز کا چہرہ ڈھونڈوں 
ایک آھٹ کو گزرتا دیکھوں

سانس کے ساتھ جو زندہ تھا کبھی 
اپنے اندر اسے مرتا دیکھوں

Friday, 9 August 2013

کسی شام اے میرے بے خبر


جو اُتر گیا ، تیرے دھیان سے ، کِسی خواب سا
سرِ دشتِ غم
کِسی بنتے مِٹتے سراب سا
کِسی اُجڑے گھر میں دھری ہوئی
کِسی بے پڑھی سی کتاب سا
... میں ہوں گم اُسی کی مثال ، گردِ سوال میں
کِسی زیرِ لب سے جواب سا
مُجھے دیکھ ، مُجھ پہ نگاہ کر
کہ میں جی اُٹھوں تیرے دھیان میں
مُجھے راستوں کی خبر ملے اِسی دشت ریگِ روان میں
تُو پڑھے جو مجھ کو ورق ورق
مرا حَرف حَرف چمک اُٹھے
تو دمک اُٹھے وہ حدیثِ دل جو نہاں ہے عرضِ بیان میں
کسی شام اے میرے بے خبر
وُہی رنگ دے میری آنکھ کو، وہی بات کہہ میری کان میں
کسی شام اے میرے بے خبر
وُہی رنگ دے میری آنکھ کو ، وہی بات کہہ میری کان میں

شمعِ کوئے جاناں


شمعِ کوئے جاناں
ہے تیز ہوا ، مانا
لَو اپنی بچا رکھنا ۔ رستوں پر نگاہ رکھنا

ایسی ہی کِسی شب میں
آئے گا یہاں کوئی ، کُچھ زخم دکھانے کو
اِک ٹوٹا ہوا وعدہ ، مٹی سے اُٹھانے کو

پیروں پہ لہو اُس کے
آنکھوں میں دھواں ہوگا
چہرے کی دراڑوں میں
بیتے ہوئے برسوں کا
ایک ایک نشاں ہوگا
بولے گا نہ کُچھ لیکن ، فریاد کُناں ہوگا
اے شمعِ کوئے جاناں
وہ خاک بسر راہی ، وہ سوختہ پروانہ
جب آئے یہاں اُس کو مایوس نہ لوٹانا
ہو تیز ہوا کِتنی ، لَو اپنی بچا رکھنا
رستوں پہ نگاہ رکھنا ، راہی کا پتہ رکھنا
اِس بھید بھری چُپ میں اِک پھول نے کھلنا ہے !!
اُس نے انہی گلیوں میں ، اِک شخص سے ملنا ہے

تمھاری یاد کا موسم


تمھاری یاد کا موسم
جو ہر اک دکھ سے گہرا ہے
نہ جانے کتنی مدت سے
ہمارے من میں ٹھہرا ہے
مگر تم نے نہیں جانا ، مگر تم نے نہیں سوچا


تمھارے پیار کا موسم
جو ہر موسم سے پیارا ہے
میرے ان بےکراں لمحوں کا
وہ واحد سہارا ہے
مگر تم نے نہیں سوچا ، مگر تم نے نہیں سمجھا


تمھارے بعد کا موسم
اس کالی گھات جیسا ہے
نہ جیتی اور نہ ہاری ہو
ایک ایسی مات جیسا ہے
مگر تم نے نہیں دیکھا ، مگر تم نے نہیں جانا

Wednesday, 7 August 2013

گیا وہ شخص تو پھر لوٹ کر نہیں آیا


کہیں وہ چہرہ زیبا نظر نہیں آیا
گیا وہ شخص تو پھر لوٹ کر نہیں آیا

کہوں تو کس سے کہوں آ کے اب سرِ منزل
سفر تمام ہوا ، ہم سفر نہیں آیا

صبا نے فاش کیا رمزِ بوئے گیسوئے دوست
یہ جرم اہلِ تمنا کے سر نہیں آیا

پھر ایک خوابِ وفا بھر رہا ہے آنکھوں میں
یہ رنگ ہجر کی شب جاگ کر نہیں آیا

کبھی یہ زعم کہ خود آ گیا تو مل لیں گے
کبھی یہ فکر کہ وہ کیوں ادھر نہیں آیا

میں وہ مسافرِ دشتِ غمِ محبت ہوں
جو گھر پہنچ کے بھی سوچے کہ گھر نہیں آیا

مرے لہو کو مری خاکِ ناگزیر کو دیکھ
یونہی سلیقہ عرضِ ہُنر نہیں آیا

فغاں کہ آئینہ و عکس میں بھی دنیا کو
رفاقتوں کا سلیقہ نظر نہیں آیا

مآلِ ضبطِ تمنا سحر پہ کیا گزری
بہت دنوں سے وہ آشفتہ سر نہیں آیا

Us shakhs ki aankhen hain kisi raat ki maanind


Mein un men bhatkay huay jugnu ki tarha hoon
Us shakhs ki aankhen hain kisi raat ki maanind

میں ان میں بھٹکے ہوئے جگنو کی طرح ہوں
اس شخص کی آنکھیں ہیں کسی رات کی مانند

Shaam hotay he teray hijr ka dukh



Shaam hotay he teray hijr ka dukh
Dil men khaima laga kay beth gaya

Kisi ki yaad say taskeen e jaan hai wabasta


Kisi ki yaad say taskeen e jaan hai wabasta
kisi ka zikr chalay aur baar baar chalay

کسی کی یاد سے تسکینِ جاں ہے وابستہ
کسی کا ذکر چلے اور بار بار چلے

داؤ پہ اپنی ساری کرامات مت لگا


داؤ پہ اپنی ساری کرامات مت لگا
دل دشت ہے ۔۔۔۔۔ تو دشت میں باغات مت لگا

بنتی نہیں ہے بات تو سب رنگ پھینک دے
تصویر مت بگاڑ ۔۔۔۔۔ علامات مت لگا

سائے میں میرے بیٹھ مگر احتیاط سے
دیوارِ خستگی ہوں ۔۔۔۔۔ مجھے ہاتھ مت لگا

کیا اعتبار ہے ترے آگے دلیل کو
اپنے بیاں کے ساتھ ۔۔۔۔۔ حکایات مت لگا

اے راہبر تو جان لے ۔۔۔۔۔ نیت پہ ہے مراد
مقصد کے ساتھ اپنے ۔۔۔۔۔ مفادات مت لگا

اے سعد ۔۔۔۔۔ اپنے کان کسی بات پر نہ دھر
اے سعد ۔۔۔۔۔ اپنے دل کو کوئی بات مت لگا

چلو تم کو ملاتا ہوں میں اس مہمان سے پہلے


چلو تم کو ملاتا ہوں میں اس مہمان سے پہلے
جو میرے جسم میں رہتا تھا، میری جان سے پہلے

مجھے جی بھر کے اپنی موت کو تو دیکھ لینے دو
نکل جائے نہ میری جان، میرے ارمان سے پہلے

کوئی خاموش ہو جائے تو اسکی خاموشی سے ڈر
سمندر چپ ہی رہتا ہے، کسی طوفان سے پہلے

میری آنکھوں میں آبی موتیوں کا سلسلہ دیکھو
یہ مالا روز جبتا ہوں میں، اک مسکان سے پہلے

ہمدم ہوں تیرا، یہ میرا فرض بنتا ہے
تجھے ہوشیار کر دوں میں، تیرے نقصان سے پہلے

Phri palat aaii hain sawan ki suhani raaten



Phir palat aaii hain sawan ki suhani raaten
Phir teri yaad men jalnay kay zamanay aaye

Wahi wehshat,wahi hairat,wahi tanhai raqsaan hai




Wahi wehshat,wahi hairat,wahi tanhai raqsaan hai
Teri aankhen meray khawabon say kitni milti julti hain

وہی وحشت، وہی حیرت، وہی تنہائی رقصاں ہے
تری آنکھیں میرے خوابوں سے کتنی ملتی جلتی ہیں

آوارگی میں ہم نے اس کو بھی ہنر جانا


آوارگی میں ہم نے اس کو بھی ہنر جانا
اقرار _ وفا کرنا پھر اس سے مکر جانا

گر خواب نہیں کوئی پھر زیست کا کیا کرنا؟
ہر صبح کو جی اٹھنا ہر رات کو مر جانا

شب بھر کے ٹھکانے کو اک چھت کے سوا کیا ہے؟
کیا دیرسے گھر جانا ، کیا وقت پہ گھر جانا

ایسا نہ ہو دریا میں تم بار _ گراں ٹھہرو
جب لوگ زیادہ ہوں کشتی سے اتر جانا

سقراط کے پینے سے کیا مجھ پہ عیاں ہوتا ؟
خود زہر پیا میں نے تب اس کا اثرجانا

جب بھی نظر آؤ گے ہم تم کو پکاریں گے
چاہو تو ٹھہر جانا چاہو تو گزر جانا

سب اداس لوگوں کی ایک سی کہانی ہے


ایک جیسے لہجے ہیں ، ایک جیسی تانیں ہیں
شہر یار پر سب کی ایک سی اڑانیں ہیں
سب اداس لوگوں کے بے مراد ہاتھوں پر
ایک سی لکریں ہیں
سب کے زرد ہونٹوں پر
قرب کی مناجاتیں ، وصل کی دعائیں ہیں
بے چراغ راتوں میں ، بے شمار شکنوں کے
ایک سے فسانے ہیں
کھکھلاتے لمحوں میں بے وجہ اداسی کے
ایک سے بہانے ہیں
اشک آنکھ میں رکھ ، کھل کے مسکرانے کی
ایک جیسی تشریحیں ، ایک سی وضاحت ہے
ایک جیسے شعلوں میں سب کے خواب جلتے ہیں
ایک جیسی باتوں پر سب کے دل دھڑکتے ہیں

ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻋﺠﺐ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ


!.....ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻋﺠﺐ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﺍﻥ ﮐﮩﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺳﺘﺎﻧﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉ
ﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺍﯾﮏ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﮐﻮ ﺍﺛﺎﺛﮧﺀﺣﯿﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ
ﻟﯿﮟ ﮔﯽ
ﮨﯿﮟ ﻋﺎﺩﺗﯿﮟ ﻋﺠﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ
ﺑﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﺟﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﮐﻮ ﺍﺧﺬ ﮐﺮﻧﮯ
ﻣﯿﮟ
ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﻨﺎ
ﺑﺎﺭﺵ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻗﻄﺮﮮ ﺳﮯ ﻗﻮﺱ ﻗﺰﺡ ﺑﻨﺎ
ﻟﯿﻨﺎ
ﺫﺭﺍ جھنجھلائے ﻟﮩﺠﮯ ﭘﺮ ﭨﻮﭦ ﮐﺮ ﺑﮑﮭﺮ
ﺟﺎﻧﺎ
ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﮐﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﮑﯿﮯ ﺑﮭﮕﻮ ﺩﯾﻨﺎ
ﭨﻮﭨﺘﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﻮ ﺧﻮﺵ ﮔﻤﺎﻧﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﺠﺎ
ﺩﯾﻨﺎ
ﭘﮭﺮ ..ﺍﯾﮏ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﭘﺮ ﺳﺐ ﺗﻠﺨﯿﺎﮞ ﺑﮭﻼ
ﺩﯾﻨﺎ
ﺍﻣﯿﺪ ﻧﺌﯽ ﭘﮭﺮ ﺟﮕﺎ ﻟﯿﻨﺎ
ﺍﻭﺭ ﮐﮭﻞ ﮐﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﺩﯾﻨﺎ
ﮨﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﯿﮟ ﻋﺠﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ
ﺫﺍﺕ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮭﻼ ﺩﯾﮟ ﮔﯽ
ﺩﻋﺎ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺗﮫ ﺟﺐ ﺍﭨﮭﺎﯾﮟ ﮔﯽ
ﺭﻭﺭﻭ ﮐﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺎﻧﮕﯿﮟ ﮔﯽ
 ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺎﻧﮓ ﻣﺎﻧﮓ ﮐﺮ ﺭﻭ ﺩﯾﮟ ﮔﯽ
ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺳﺐ ﻟﻤﺤﮯ
ﺍﭘﻨﮯ ﭘﯿﺎﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺩﺍﻥ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ
ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻋﺠﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ
ﺳﺘﻢ ﺳﺎﺭﮮ ﺧﻮﺩ ﭘﺮ ﺟﮭﯿﻞ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﯽ
ﺁﻧﺴﻮ ﺳﺐ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﻧﮯ ﮐﯽ
ﮨﯿﮟ ﺭﺍﺣﺘﯿﮟ ﻋﺠﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ
ﺍﮎ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﺎﻥ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﯽ
ﺷﺮﯾﮏ ﺭﻭﺡ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ
ﭘﮭﺮ ﻣﺮ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﺒﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ
ﮨﯿﮟ ﺧﻮﺍﮨﺸﯿﮟ ﻋﺠﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ
ﺳﭻ ﮐﮩﺎ !.............
ﺳﻤﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﯾﮧ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻋﺠﺐ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ

میں تری آنکھ سے ڈھلکا ہوا اک آنسو ہوں


شاخِ مژگانِ محبت پہ سجا لے مجھ کو 
برگِ آوارہ ہوں صرصر سے بچا لے مجھ کو 

رات بھر چاند کی ٹھنڈک میں سلگتا ہے بدن 
کوئی تنہائی کے دوزخ سے نکالے مجھ کو

میں تری آنکھ سے ڈھلکا ہوا اک آنسو ہوں 
تو اگر چاہے، بکھرنے سے بچا لے مجھ کو 

شب غنیمت تھی کہ یہ زخمِ نظارہ تو نہ تھا 
ڈس گئے صبحِ تمنا کے اجالے مجھ کو 

میں منقش ہوں تری روح کی دیواروں پر 
تو مٹا سکتا نہیں بھولنے والے ، مجھ کو 

تہ بہ تہ موجِ طلب کھینچ رہی ہے محسن 
کوئی گردابِ تمنا سے نکالے مجھ کو


January ki sardiyon men aik aatish'daan kay paas



January ki sardiyon men aik aatish'daan kay paas
ghanton tanha bethna....bujhtay sharaaray dekhna

Gar kabhi fursat milay to gosha e tanhai men
Yaad e maazi kay puranay goshwaray dekhna

جنوری کی سردیوں میں ایک آتش داں کے پاس 
گھنٹوں تنہا بیٹھنا ۔ ۔ ۔ ۔ بجھتے شرارے دیکھنا 

گۤــــر کبھی فرصت ملے تو گوشہء تنہائی میں 
یادِ ماضی کے پرانے گوشوارے دیکھنا

Raat chupkay say december nay yeh sargoshi ki


Raat chupkay say december nay yeh sargoshi ki
Phir say ik baar rula doon tujhay jatay jatay

رات چپکے سے دسمبر نے یہ سرگوشی کی
پھر سے اک بار ’رلا دوں تجھے جاتے جاتے ؟

Tuesday, 6 August 2013

میرے چمن میں بہاروں کے پُھول مہکیں گے


میرے چمن میں بہاروں کے پُھول مہکیں گے 
مجھے یقیں ہے شراروں کے پُھول مہکیں گے 

کبھی تو دیدئہ نرگس میں روشنی ہو گی 
کبھی تو اُجڑے دیاروں کے پُھول مہکیں گے 

تمہاری زلفِ پریشاں کی آبرو کے لیے 
کئی ادا سے چناروں کے پُھول مہکیں گے 

چمک ہی جائے گی شبنم لہُو کی بوندوں سے 
روش روش پہ ستاروں کے پُھول مہکیں گے 

ہزاروں موجِ تمنّا صدف اُچھالے گی 
تلاطموں سے کناروں کے پُھول مہکیں گے 

یہ کہہ رہی ہیں فضائیں بہار کی ساغر 
جِگر فروز اشاروں کے پُھول مہکیں گے

ملیں پھر آکے اسی موڑ پر دعا کرنا


ملیں پھر آکے اسی موڑ پر دعا کرنا 
کڑا ہے اب کے ہمارا سفر دعا کرنا 

دیارِ خواب کی گلیوں کا جو بھی نقشہ ہو 
مکینِ شہر نہ بدلیں نظر دعا کرنا 

چراغ جاں پہ اس آندھی میں خیریت گزرے 
کوئی امید نہیں ہے مگر دعا کرنا 

تمہارے بعد مرے زخمِ نارسائی کو 
نہ ہو نصیب کوئی چارہ گر دعا کرنا 

مسافتوں میں نہ آزار جی کو لگ جائے 
مزاج داں نہ ملیں ہم سفر دعا کرنا 

دکھوں کی دھوپ میں دامن کشا ملیں سائے 
ہر ے رہیں یہ طب کے شجر دعا کرنا 

نشاطِ قرب میں آئی ہے ایسی نیند مجھے 
کھلے نہ آنکھ میری عمر بھی دعا کرنا 

کڑا ہے اب کے ہمارا سفر دعا کرنا 
دیارِ خواب کی گلیوں کا جو بھی نقشہ ہو 

مکینِ شہر نہ بدلیں نظر دعا کرنا 
چراغ جاں پہ اس آندھی میں خیریت گزرے 

کوئی امید نہیں ہے مگر دعا کرنا 
تمہارے بعد مرے زخمِ نارسائی کو 

نہ ہو نصیب کوئی چارہ گر دعا کرنا 
مسافتوں میں نہ آزار جی کو لگ جائے 

مزاج داں نہ ملیں ہم سفر دعا کرنا 
دکھوں کی دھوپ میں دامن کشا ملیں سائے 

ہر ے رہیں یہ طب کے شجر دعا کرنا 
نشاطِ قرب میں آئی ہے ایسی نیند مجھے 

کھلے نہ آنکھ میری عمر بھر دعا کرنا

افسانے جدائی کے سنائے گا بہت وہ


معلوم نہ تھا ہم کو ستائے گا بہت وہ 
بچھڑے گا تو پھر یاد بھی آئے گا بہت وہ 

اب جس کی رفاقت میں بہت خندہ بہ لب ہیں 
اس بار ملے گا تو رلائے گا بہت وہ 

چھوڑ آئے گا تعبیر کے صحرا میں اکیلا 
ہر چند ہمیں خواب دکھائے گا بہت وہ 

وہ موج ہوا بھی ہے ذرا سوچ کے ملنا 
امید کی شمعیں تو جلائے گا بہت وہ 

ہونٹوں سے نہ بولے گا پر آنکھوں کی زبانی 
افسانے جدائی کے سنائے گا بہت وہ

اب کسی اور کے ہاتھوں میں ترا ہاتھ سہی


پھول تھے رنگ تھے لمحوں کی صباحت ہم تھے 
ایسے زندہ تھے کہ جینے کی علامت ہم تھے 

سب خرد مند بنے پھرتے ہیں ہر محفل میں 
اس ترے شہر میں اک صاحبِ وحشت ہم تھے 

اب کسی اور کے ہاتھوں میں ترا ہاتھ سہی 
یہ الگ بات کبھی اہلِ رفاقت ہم تھے 

رتجگوں میں تری یاد آئی تو احساس ہوا 
تیری راتوں کا سکوں نیند کی راحت ہم تھے 

اب تو خود اپنی ضرورت بھی نہیں ہے ہم کو 
وہ بھی دن تھے کہ کبھی تیری ضرورت ہم تھے

تو کھو گیا تو اپنا پتہ بھی نہیں رہا


تھی جس سے روشنی ، وہ دیا بھی نہیں رہا 
اب دل کو اعتبارِ ہوا بھی نہیں رہا 

تو بجھ گیا تو ہم بھی فروزاں نہ رہ سکے 
تو کھو گیا تو اپنا پتہ بھی نہیں رہا 

کچھ ہم بھی ترے بعد زمانے سے کٹ گئے 
کچھ ربط و ضبط خدا سے بھی نہیں رہا 

گویا ہمارے حق میں ستم در ستم ہوا 
حرفِ دعا بھی ، دستِ دعا بھی نہیں رہا 

کیا شاعری کریں کہ ترے بعد شہر میں 
لطف کلام ، کیفِ نوا بھی نہیں رہا

یوں دل میں تیری یاد اتر آتی ہے جیسے


پردیس میں غم ناک خبر آتی ہے جیسے 

آتی ہے تیرے بعد خوشی بھی تو کچھ ایسے 
ویران درختوں پہ سحر آتی ہے جیسے 

لگتاہے ابھی دل نے تعلق نہیں توڑا 
یہ آنکھ تیرے نام پہ بھر آتی ہے جیسے 

خود آپ ہوا روز ا ٹھاتی ہے دعائیں 
اور آپ کہیں دفن بھی کر آتی ہے جیسے 

اک قافلۂ ہجر گذرتا ہے نظر سے 
اور روح تلک گرد سفر آتی ہے جیسے 

جلتا ہے کوئی شہر کبھی دامن دل میں 
سانسوں میں کبھی راکھ اتر آتی ہے جیسے

آنکھوں میں ایک چہرہ مرقوم ہو چکا ہے


اس کا بھی غم بہت اب معدوم ہو چکا ہے 
وہ خوش ہے کھو کے ہم کو معلوم ہو چکا ہے 

ہر سوچ میں وہ میری کچھ ایسے بس گیا ہے 
ہر فعل میرا اس سے موسوم ہو چکا ہے 

کیا بات ہو گئی ہے بادل نہیں برستا 
وہ حال پر تو میرے مغموم ہو چکا ہے 

رہتا ہے وہ نظر میں چاہے کہیں بھی جائے 
آنکھوں میں ایک چہرہ مرقوم ہو چکا ہے 

اک بار لوگ پھر سے دیوانے ہو رہے ہیں 
کہتے ہیں وہ دوبارہ معصوم ہو چکا ہے 

ہر شخص کہہ رہا ہے میرا اداس چہرہ 
اس بے وفا کے غم کا مفہوم ہو چکا ہے 

جو زندگی کے سارے دُکھ درد بانٹتا تھا 
اس سائے سے صفی اب محروم ہو چکا ہے

مزاج يار کا عالم شراب جيسا ہے


ہر ايک زخم کا چہرہ گلاب جيسا ہے 
مگر يہ جاگتا منظر بھي خواب جييسا ہے 

يہ تلخ تلخ سا لہجہ، يہ تيز تيز سي بات 
مزاج يار کا عالم شراب جيسا ہے 

مرا سخن بھي چمن در چمن شفق کي پھوار 
ترا بدن بھي مہکتے گلاب جيسا ہے 

بڑا طويل، نہايت حسيں، بہت مبہم 
مرا سوال تمہارے جواب جيسا ہے 

تو زندگي کےحقائق کي تہہ ميں يوں نہ اتر 
کہ اس ندي کا بہاؤ چناب جيسا ہے 

تري نظر ہي نہيں حرف آشنا ورنہ 
ہر ايک چہرہ يہاں پر کتاب جيسا ہے 

چمک اٹھے تو سمندر، بجھے تو ريت کي لہر 
مرے خيال کا دريا سراب جيسا ہے 

ترے قريب بھي رہ کر نہ پا سکوں تجھ کو 
ترے خيال کا جلوہ حباب جيسا ہے

کب کی پتھر ہو چکی تھیں منتظر آنکھیں مگر


آج ہم بچھڑے تو پھر کتنے رنگیلے ہو گئے
میری آنکھیں سرخ تیرے ہاتھ پیلے ہو گئے

اب تری یادوں کے نشتر بھی ہوئے جاتے ہیں کند
ہم کو کتنے روز اپنے زخم چھیلے ہو گئے

کب کی پتھر ہو چکی تھیں منتظر آنکھیں مگر
چھو کے دیکھا جو انھیں تو ہاتھ گیلے ہو گئے

جانے کیا احساس سازِ حسن کی تاروں میں ہے
جن کو چھوتے ہی مرے نغمے رسیلے ہو گئے

اب کوئی امید ہے شاہد نہ کوئی آرزو
آسرے ٹوٹے تو جینے کے وسیلے ہو گئے

صدیوں کا بن باس لکھے گی اب کے برس بھی


صدیوں کا بن باس لکھے گی اب کے برس بھی
تنہائی اتہاس لکھے گی اب کے برس بھی

اب کے برس بھی جھوٹ ہمارا پیٹ بھرے گا
سچائی افلاس لکھے گی اب کے برس بھی

اب کے برس بھی دنیا چھینی جائے گی ہم سے
مجبوری سنیاس لکھے گی اب کے برس بھی

آس کے سورج کو لمحہ لمحہ ڈھونڈیں گے
اور تاریکی یاس لکھے گی اب کے برس بھی

پہلے بھی دریا دریا برسی تھی برکھا
صحرا صحرا پیاس لکھے گی اب کے برس بھی

جس میں وش کا واس ہوا کرتا ہے آذر
جان وہی وشواس لکھے گی اب کے برس بھی

Terey lams-e-dast-e-hasiin kii dil aavez Khushbuu


teray lams-e-dast-e-hasiin kii

dil aavez Khushbuu

terii ungaliyon say

merii ungaliyon men guzaratii huii jab

hathelii men utrii to main nay

isay dasht-e-tishnaa

men kuchh is tarah sey sameTaa

keh mahfuuz kar luuNgaa shaayad abad tak

main apnay liye 

sirf apnay liye

teraa husn-e-shaGuftaa jamaal-e-daraKhshaaN

gumaaN sey hasiin Khvaab tak 

main nay mahfuuz tujh ko kiyaa

paaon say sar talak ho gayaa main munawar

Yun To Waqt Ka Marham Saray Zakhm Bharta Hay


Shash-Jehaat Larnay Men Ehtiyaat Lazim Hay
Aag Say Guzarnay Men Ehtiyaat Lazim Hay

Ungliyo'n Pey Kachay Rang Naqsh Chhorr Jaati Hain
Titliyaa'n Pakarnay Men Ehtiyaat Lazim Hay

Munjamid Kinaro'n Par, Aitbaar Mat Karna
Naa'o Say Utarnay Men Ehtiyaat Lazim Hay

Yun To Waqt Ka Marham Saray Zakhm Bharta Hay
Zakham-E-Hijar Bharnay Men Ehtiyaat Lazim Hay

Lehjay Say Bhi Lafzo'n Ki Haee'atain Badalti Hain
Us Say Baat Karnay Men Ehtiyaat Lazim Hay

خوشی کو ڈھونڈ کے لائے ملال کھو بیٹھے


تمہارے کھوج میں اپنا کمال کھو بیٹھے

جواب ڈھونڈ کے لائے سوال کھو بیٹھے

عجب ہجوم تھا بے چینیوں کا سینے میں

ہم اپنی بھیڑ میں تیرا خیال کھو بیٹھے

جگہ جگہ پہ عجب بے کسی کا منظر ہے

نگر کے لوگ نگر کا جمال کھو بیٹھے

کبھی یہ لگتا ہے مجھکو میں ایسا تاجر ہوں

جو راستے میں ہی سب اپنا مال کھو بیٹھے

ہمارا وقت تیرے وقت سے ز یادہ تھا

تیرے دنوں میں تو ہم اپنے سال کھو بیٹھے

کوئی نہ کوئی زیاں ساتھ ساتھ تھا ا پنے

خوشی کو ڈھونڈ کے لائے ملال کھو بیٹھے

زندہ رہنا سیکھ لیا ہو، سارے دکھوں سے ہار کے جب


کڑی دھوپ میں چلتے چلتے، سایہ،اَگر مل جائے ۔۔۔تو
اک قطرے کو ترستے ترستے، پیاس، اگر بجھ جائے ۔۔۔تو

برسوں سے ،خواہش کے جزیرے ویراں ویراں اُجڑے ہوں
اور سپنوں کے ڈھیر سجا کر، کوئی اگر رکھ جائے ۔۔۔تو

بادل ،شکل بنائیں جب، نیل آکاش پہ رنگوں کے
اُن رنگوں میں اس کا چہرہ، آ کے اگر رُک جائے ۔۔۔۔تو

خاموشی ہی خاموشی ہو، دل کی گہری پاتالوں میں
کچھ نہیں کہتے کہتے گر، کوئی سب کہہ جائے ۔۔۔تو

زندہ رہنا سیکھ لیا ہو، سارے دکھوں سے ہار کے جب
بیتے سپنے ، پا کے خوشی سے ،کوئی اگر ۔۔۔مر جائے ،تو۔۔۔

Monday, 5 August 2013

عشق پیچاں کی صندل پر جانے کس دن بیل چڑھے


عشق پیچاں کی صندل پر جانے کس دن بیل چڑھے
کیاری میں پانی ٹھہرا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیواروں پر کائی ہے

حسن کے جانے کتنے چہرے حسن کے جانے کتنے نام
عشق کا پیشہ حسن پرستی ۔۔۔۔۔۔ عشق بڑا ہرجائی ہے

آج بہت دن بعد میں اپنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کمرے تک آ نکلا تھا
جوں ہی دروازہ کھولا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اس کی خوشبو آئی ہے

ایک تو اتنا حبس ہے پھر میں سانسیں روکے بیٹھا ہوں
ویرانی نے جھاڑو دے کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔گھر میں دھول اڑائی ہے

Un ki aankhon men meray zikr say aansu aaye?



Kaya kaha tu nay zara phir say to kehna qasid
Un ki aankhon men meray zikr say aansu aaye?

کیا کہا تُو نے ذرا پھر سے تو کہنا قاصد
ان کی آنکھوں میں میرے ذکر سے آنسُو آئے؟

وعدہ




مرا یہ وعدہ ہے تم سے
تمہیں اتنا میں چاہوں گا
کہ دنیا میں کہیں پر بھی
محبت کے حوالے سے کبھی
کبھی جو بات نکلے گی
ہمارا نام آئے گا۔۔۔۔

تہمتیں تو لگتی ہیں


تہمتیں تو لگتی ہیں
روشنی کی خواہش میں
گھر سے باہر آنے کی کُچھ سزا تو ملتی ہے
لوگ لوگ ہوتے
ان کو کیا خبر جاناں !
آپ کے اِرادوں کی خوبصورت آنکھوں میں
بسنے والے خوابوں کے رنگ کیسے ہوتے ہیں
دل کی گود آنگن میں پلنے والی باتوں کے
زخم کیسے ہوتے ہیں
کتنے گہرے ہوتے ہیں
کب یہ سوچ سکتے ہیں
ایسی بے گناہ آنکھیں
گھر کے کونے کھدروں میں چھُپ کے کتنا روتی ہیں
پھر بھی یہ کہانی سے
اپنی کج بیانی سے
اس قدر روانی سے داستان سنانے
اور یقین کی آنکھیں
سچ کے غمزدہ دل سے لگ کے رونے لگتی ہیں
تہمتیں تو لگتی ہیں
روشنی کی خواہش میں
تہمتوں کے لگنے سے
دل سے دوست کو جاناں
اب نڈھال کیا کرنا
تہمتوں سے کیا ڈرنا

دیپک، جگنو، چاند، ستارے ایک سے ہیں


دیپک، جگنو، چاند، ستارے ایک سے ہیں
یعنی سارے عشق کے مارے ایک سے ہیں

ہجر کی شب میں دیکھ تو آ کے میرے چاند
میرے آنسو اور یہ تارے ایک سے ہیں

کچھ اپنے اور کچھ بیگانے اور میں خود
میری جان کے دشمن سارے ایک سے ہیں

اب بتلاؤ ہم کس سے فریاد کریں
قاتل، حاکم، منصف سارے ایک سے ہیں

Sunday, 4 August 2013

سیل گریہ ہے کوئی جو رگ جاں کھینچتا ہے


سیل گریہ ہے کوئی جو رگ جاں کھینچتا ہے
رنگ چاہت کے وہ آنکھوں پہ کہاں کھینچتا ہے

دل کہ ہر بار محبت سے لہو ہوتا ہے
دل کو ہر بار یہی کار زیاں کھینچتا ہے

شاید اب کے بھی مری آنکھ میں تحریر ہے وہ
لمحۂ یاد کوئی حرف گماں کھینچتا ہے

ایک بے نام سی آہٹ پہ دھڑکتا ہوا دل
عکس تیرا ہی سر شیشۂ جاں کھینچتا ہے

جا چکا ہے وہ مرے حال سے باہر پھر بھی
اپنی جانب مرے ماضی کے نشاں کھینچتا ہے

تیر نکلے گا تو سوچیں گے، ابھی تو خالد
وہ فقط میری طرف اپنی کماں کھینچتا ہے 

وہ درد وہ وفا وہ محبت تمام شُد


وہ درد وہ وفا وہ محبت تمام شُد
لے دل میں تیرے قُرب کی حسرت تمام شُد

یہ بعد میں کھُلے گا کے کس کس کا خوں ھوا
ھر اِک بیان ختم، عدالت تمام شُد

تُو اب تو دشمنی کے بھی قابل نہیں رھا
اُٹھتی تھی جو کبھی وہ عداوت تمام شُد

اب ربط اِک نیا مجھے آوارگی سے ھے
پابندیِ خیال کی عادت تمام شُد

جائز تھی یا نہیں تھی، تیرے حق میں تھی مگر
کرتا تھا جو کبھی وہ وکالت تمام شُد

وہ روز روز مرنے کا قِصہ ھوا تمام
وہ روز دل کو چیرتی وحشت تمام شُد

محسن میں کُنج ِ زیست میں چُپ چاپ ھوں پڑا
مجنُوں کی سی وہ خصلت و حالت تمام شُد

Saturday, 3 August 2013

پڑھی ہے میں نے محبت کی یہ کتاب بہت


سوال ایک تھا، لیکن مِلے جواب بہت
پڑھی ہے میں نے محبت کی یہ کتاب بہت

گئی بہار تو پھر کون حال پوچھے گا
کرو نہ چاہنے والوں سے اِجتناب بہت

یہ آسمان و زمیں سب تمہیں مبارک ہوں
مرے لئے ہے یہ ٹُوٹا ہوا رباب بہت

یہاں پہ دیکھو ذرا اِحتیاط سے رہنا
مِلے ہیں پہلے بھی اس خاک میں گُلاب بہت

میں جانتا ہوں انہیں، وقت کے حواری ہیں
جو لوگ خُود کو سمجھتے ہیں کامیاب بہت

رہِ جنوں میں اکیلا نہیں میں خوار و زبُوں
مری طرح سے ہوئے ہیں یہاں خراب بہت

کسی نے کاسۂ سائل میں کچھ نہیں ڈالا
سمندروں سے میں کرتا رہا خطاب بہت

کُھلی ہوئی ہیں دُکانیں کئی نگاہوں کی
طلب ہو دل میں تو پینے کو ہے شراب بہت

خدا کرے وہ مرا آفتاب آ نکلے
دلوں میں آگ لگاتا ہے ماہتاب بہت

سُنا کے قصّہ تمہیں کس لئے اُداس کریں
کہ ہم پہ ٹُوٹے ہیں اس طرح کے عذاب بہت

تلاشِ یار میں نکلے تھے جاں سے ہار گئے
خبر نہ تھی کہ وہ ظالم ہے دیریاب بہت

کبھی وہ بُھول کے بھی اس طرف نہیں آیا
اگرچہ آتے ہیں آنکھوں میں اُس کے خواب بہت

اسی لئے ترے کُوچہ میں اب وہ بِھیڑ نہیں
کہ لُطف کم ہے تری آنکھ، میں عتاب بہت

یہاں رہے گا ترے اِقتدار کو خطرہ
کہ آتے رہتے ہیں اس دل میں اِنقلاب بہت

کسی کو بھیج کے احوال تو کیا معلوم
مرے لئے تو یہی لُطف ہے جناب بہت

سمجھ ہی میں نہیں آتا کچھ ایسے دلربا تم ہو


سمجھ ہی میں نہیں آتا کچھ ایسے دلربا تم ہو

قیامت ہو، غضب ہو، قہر ہو، آفت ہو، کیا تم ہو؟

اندھیرے میں وہ آ لپٹے تھے پہلے کس کے دھوکے میں

کہ جب آخر مجھے دیکھا تو شرما کر کہا، تم ہو!

زمانے میں اگر کوئی نہیں اپنا تو کیا پروا

کسی سے کیا غرض مجھ کو کہ میرا آسرا تم ہو

رگِ جاں سے بھی ہو نزدیک لیکن وائے محرومی

ابھی تک جانتے ہیں سب یہی تم کو، جدا تم ہو

ندامت کیوں نہ ہو حسرت غرورِ پادشاہی کو

سمجھنا چاہیے تھا کس کے کوچے کے گدا تم ہو

Haan! yaad aaya us kay aakhri alfaaz yehi thay


Haan! yaad aaya us kay aakhri alfaaz yehi thay
Ab jee sako to jee lena, par mar jaao to behtar hai

ہاں! یاد آیا اُس کے آخری الفاظ یہی تھے
اب جی سکو تو جی لینا، پر مر جاؤ تو بہتر ہے

کبھی یادیں کبھی سپنے سہانے بھیج دیتا ھے


کبھی یادیں کبھی سپنے سہانے بھیج دیتا ھے
مجھے اکثر وہ یادوں کے خزانے بھیج دیتا ھے

میں جب گزرے دنوں کی تلخیوں کو بھول جاتا ھوں
مجھے پھر سے کوئی بیتے زمانے بھیج دیتا ھے

کبھی قسمیں کبھی عہد وفا کے حوصلے دے کر
ھمیں وہ زندہ رھنے کے بہانے بھیج دیتا ھے

سر پہ جھکتا ہوا بادل ہے کہ اک یاد کوئی


کب چراغوں کی ضرورت ہے ملاقاتوں میں
روشنی ہوتی ہے کچھ اور ہی ان راتوں میں

سر پہ جھکتا ہوا بادل ہے کہ اک یاد کوئی 
اور بھی گہری ہوئی جاتی ہے برساتوں میں

ایک خوشبو سی کسی موسمِ نادیدہ کی
آخری چیز بچی عشق کی سوغاتوں میں

یہ جو بنتا ہے اجڑتا ہے کسی خواب کے ساتھ
ہم نے اک شہر بسا رکھا ہے ان ہاتھوں میں

نقش کچھ اور بنائے گئے سب چہروں پر
بھید کچھ اور چھپائے گئے سب ذاتوں میں

شاعری، خواب، محبت، ہیں پرانے قصے
کس لیے دل کو لگائے کوئی ان باتوں میں

ہفت خواں یوں تو ملے عشق کے اس رستے پر
ہجر ہی منزلِ مقصود ہوئی، ساتوں میں

دست بردار ہوئے ہم تو تمناؤں سے
عمر گزری چلی جاتی تھی مناجاتوں میں

وعدہ نہ سہی یونہی چلے آؤ کسی دن


وعدہ نہ سہی یونہی چلے آؤ کسی دن
گیسو مرے دالان میں لہراؤ کسی دن

سن سن کے حریفوں کے تراشے ہوئے الزام

معیارِ حریفاں پہ نہ آ جاؤ کسی دن

یارو! مجھے منظور ، تغافل بھی جفا بھی

لیکن کوئی اس کو تو منا لاؤ کسی دن

کیوں ہم کو سمجھتا ہے وہ دو قالب و یکجاں

خوش فہم زمانے کو تو سمجھاؤ کسی دن

گتھی طلب و ترک کی کھلتی ہی رہے گی

اس عقدہء ہستی کو تو سلجھاؤ کسی دن

کچھ سوچ کے آپس کی شکایت کو بڑھاؤ

دنیا میں اکیلے ہی نہ رہ جاؤ کسی دن

بیکار پڑے ہیں نگہِ شوق کے بجرے

اس بحر میں طوفان بھی لاؤ کسی دن

ہیں جبکہ مہ و مہرِضیا خواہ تمہیں سے

لو میرے دئیے کی بھی تو اکساؤ کسی دن

یہ خشک جزیرے کہیں پتھر ہی نہ بن جائیں

آنکھیں جو عطا کی ہیں نظر آؤ کسی دن

یہ زخمِ طلب ، کاوشِ ناخن پہ نہ آجائے
اس گھاؤ کو مرہم سے بھی سلگاؤ کسی دن

دانش ہی کے اشعار ہیں دانش ہی کے افکار
ایسا نہ ہو دانش ہی کے ہو جاؤ کسی دن

اک خلش کو حاصلِ عمرِ رواں رہنے دیا


اک خلش کو حاصلِ عمرِ رواں رہنے دیا
جان کر ہم نے انھیں نا مہرباں رہنے دیا

آرزوِ قرب بھی بخشی دلوں کو عشق نے
فاصلہ بھی میرے ان کے درمیاں رہنے دیا

کتنی دیواروں کے سائے ہاتھ پھیلاتے رہے
عشق نے لیکن ہمیں بے خانماں رہنے دیا

اپنے اپنے حوصلے اپنی طلب کی بات ہے
چن لیا ہم نے تمھیں سارا جہاں رہنے دیا

کون اس طرزِ جفائے آسماں کی داد دے
باغ سارا پھونک ڈالا آشیاں رہنے دیا

یہ بھی کوئی جینے میں جینا، بغیر انکے ادیب
شمع گُل کر دی گئی باقی دھواں رہنے دیا

Friday, 2 August 2013

ﺟﺴﮯ ﭘﺎﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺍُﺳﮯ ﮐﮭﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﮈﺭ ﮐﯿﺴﺎ


ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﯾﮧ
ﮐﺴﯽ ﺳﻨﺴﺎﻥ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﭘﺮ
ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺠﺎﻥ ﭼﮩﺮﮮ ﺳﮯ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺁﺷﻨﺎﺋﯽ ﮐﻮ
ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺧﺎﺹ ﻟﮑﮫ ﮈﺍﻟﻮ
ﮐﮩﯿﮟ ﺩﻭ ، ﭼﺎﺭ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﻮ
ﺑﮩﺖ ﭘﯿﺎﺭﺍ ﺳﺎ ﺗﻢ ﺩﻟﮑﺶ
ﺣﺴﯿﻦ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻟﮑﮫ ﮈﺍﻟﻮ
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﯾﮧ
ﺳﻨﻮ !ﺍﮮ ﻣﻮﻡ ﮐﯽ ﮔﮍﯾﺎ
ﺍﺏ ﺍﺱ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ
ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺠﻨﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻨﺘﺎ
ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﻧﺠﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ
ﻗﺪﻡ ﺩﻭ ، ﭼﺎﺭ ﭼﻠﻨﮯ ﺳﮯ
ﺳﻔﺮ ﺳﺎﻧﺠﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ
ﺗﻮ ﺍﻥ ﺑﮯ ﮐﺎﺭ ﺳﻮﭼﻮﮞ ﭘﮧ
ﺳﻨﻮ ! ﺭﻭﻧﮯ ﮐﺎ ﮈﺭ ﮐﯿﺴﺎ
ﺟﺴﮯ ﭘﺎﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ
ﺍُﺳﮯ ﮐﮭﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﮈﺭ ﮐﯿﺴﺎ...!

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets