Tuesday, 26 November 2013

Ab justajuu hai terii jafaa kay javaaz kii


Ab tak to nuur-o-niKhat-o-rang-o-sadaa kahuuN 
Main tujh ko chhuu sakuuN to Khudaa jaaney kyaa kahuuN 

Lafzon sey un ko pyaar hai mafhuum sey mujhey 
Voh gul kahen jisey main teraa naqsh-e-paa kahuuN 

Ab justajuu hai terii jafaa kay javaaz kii 
Jii chaahataa hai tujh ko vafaa aashnaa kahuuN 

Sirf is kay liye keh ishq isii kaa zahuur hai 
Main terey husn ko bhii sabuut-e-vafaa kahuuN 

Tuu chal diyaa to kitney haqaa_iq badal gaye 
Najm-e-sahar ko marqad-e-shab kaa diyaa karuuN 

Kyaa jabr hai keh but ko bhii kahanaa paRRay Khudaa 
Voh hai Khudaa to merey Khudaa tujh ko kyaa kahuuN 

Jab merey muuNh men merii zubaaN hai to kyuuN na main 
Jo kuchh kahuuN yaqiin sey kahuuN barmalaa kahuuN 

Kyaa jaaney kis safar pey ravaaN huuN azal sey main 
Har intehaa ko ek na_ii ibtidaa kahuuN 

Ho kyuuN na mujh ko apney mazaaq-e-suKhan pey naaz 
Ghaalib ko kaa_inaat-e-suKhan kaa Khudaa kahuuN

اب جستجو ہے تیرے جفا کے جواز کی


اب تک تو نورونکہت و رنگ و صدا کہوں 
میں تجھ کو چھو سکوں تو خدا جانے کیا کہوں 

لفظوں سے انکو پیار ہے ؛ مفہوم سے مجھے 
وہ گل کہیں جسے ؛ میں تیرا نقش پا کہوں 

اب جستجو ہے تیرے جفا کے جواز کی 
جی چاہتا ہے تجھے وفا آشنا کہوں 

صرف اسکے لئے کہ عشق اسی کا ظہور ہے 
میں تیرے حسن کو بھی ثبوت-ے-وفا کہوں 

تو چل دیا تو کتنے حقائق بدل گئے 
نجم-ے-سحر کو مرقد-ے-شب کا دیا کہوں 

کیا جبر ہے کہ بت کو بھی کہنا پڑے خدا 
وہ ہے خدا تو ؛ میرے خدا تجھکو کیا کہوں 

جب میرے منہ میں میری زبان ہے تو کیوں نہ میں 
جو کچھ کہوں ؛ یقین سے کہوں ؛ برملا کہوں 

کیا جانے کس سفر پے روانہ ہوں ازل سے میں 
ہر انتہا کو ایک نئى ابتدا کہوں 

ہو کیوں نہ مجھکو اپنے مزاق-ے-سخن پے ناز 
غالب کو کائنات سخن کا خدا کہوں 

میرے بے خبر












محبت

تجھے کیا خبر؟

Sunday, 24 November 2013

دسمبر لوٹ آیا ہے

موسم غم بھی تو ہجرت کرتا

نہ شب و روز ہی بدلے ہیں نہ حال اچھا ہے


















نہ شب و روز ہی بدلے ہیں نہ حال اچھا ہے
کِس برہمن نے کہا تھا کہ یہ سال اچھا ہے

ہم کہ دونوں کے گرفتار رہے ، جانتے ہیں
دامِ دُنیا سے کہیں زُلف کا جال اچھا ہے

میں نے پوچھا تھا کہ آخر یہ تغافل کب تک؟
مسکراتے ہوئے بولے کہ سوال اچھا ہے

دِل نہ مانے بھی تو ایسا ہے کہ گاہے گاہے
یارِ بے فیض سے ہلکا سا ملال اچھا ہے

لذتیں قُرب و جدائی کی ہیں اپنی اپنی
مستقل ہجر ہی اچھا ، نہ وصال اچھا ہے

رہروانِ رہِ الفت کا مقدر معلوم
اُن کا آغاز ہی اچھا نہ مآل اچھا ہے

دوستی اپنی جگہ ، پر یہ حقیقت ہے فراز
تیری غزلوں سے کہیں تیرا غزال اچھا ہے

Na shab o roz hi badlay hain na Haal acha hai



















Na shab o roz hi badlay hain na Haal acha hai
Kis barahman nay kaha tha keh yeh Saal acha hai

Hum keh donon kay giraftar rahay, jaantay hain
Daam e duniya say kahin zulf ka jaal acha hai

Mein nay poocha tha keh aakhir yeh taghaful kab tak?
Muskuratay huye bolay keh Sawaal acha hai

Dil na manay bhi to aisa hai keh gaahey gaahey
Yar e be Faiz say halka sa Malaal acha hai

Lazzatein Qurb o Judaai ki hain apni apni
Mustaqil hijr hi acha na Wasaal acha hai

Rehruwaan e rah e ulfat ka muqaddar maaloom
In ka aaghaz hi acha na Ma'aal acha hai

Dosti apni jagah, par yeh haqiqat hai Faraz
Teri ghazlon say kahin tera Ghazaal acha hai


Thursday, 21 November 2013

Tum ko maloom hai?



Tum ko maloom hai keh shaam o sehar
Bas tumhen sochta rehta hai koi

Chaand aur Mein


Chaand 
Aur mein
Dono ka aik sa muqaddar
Woh falak pay tanha
Mein zameen pay akela
Woh roshni maangay suraj say
Aur mein
Muhtaaj teray chehray ka

اس کو پانا تو یوں بھی مشکل تھا



خوشبوؤں کے نزول جیسا تھا
وہ جو اک شخص پھول جیسا تھا

ہم زمانے کو لے کے کیا کرتے ؟
اس کے قدموں کی دھول جیسا تھا

اس کو پانا تو یوں بھی مشکل تھا 
آپ اپنے حصول جیسا تھا

منفرد میں بھی تھا انا کی طرح 
وہ بھی اپنے اصول جیسا تھا

ﺷﺎﻡ ﮈﮬﻠﮯ ﻧﻤﻨﺎﮎ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ


ﺷﺎﻡ ﮈﮬﻠﮯ ﻧﻤﻨﺎﮎ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ

ﺑﺮﻑ ﺳﯽ ﺭﻧﮕﺖ ﻭﺍﻟﯽ ﻟﮍﮐﯽ


ﮐﺲ ﮐﺎ ﺭﺳﺘﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ


ﮐﮭﮍﮐﯽ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﭘﻮﭼﮭﻮﮞ


ﮐﮩﮧ ﺩﮮ ﮔﯽ ﻭﮦ ﻧﯿﻦ ﭼﺮﺍ ﮐﺮ


ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺘﻨﺎ ﺷﮏ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ


ﮐﺎﻥ ﮐﺎ ﺑﺎﻻﮈﮬﻮﻧﮉ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ


Tuesday, 12 November 2013

ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں

مجھے تم یاد آتے ہو


جب آنکھیں خواب بنتی ہیں

Name:  1aankhaim.jpg
Views: 9
Size:  104.8 KB

مجھے یقین ہے تم نہ لوٹو گے

قرض

ملال کا موسم


Neel Kanwal













Log kehtay hain jinhain "neel kanwal" woh to Qateel
Shab ko in jheel si aankhon men khila kartay hain

ابھی کچھ دن لگیں گے


کل رات جانے کیا ہوا

اس دل میں سلامت ہے اب تک

Monday, 11 November 2013

پا'وں میں نارسائی کا اک آبلہ سہی

Name:  II.jpg
Views: 438
Size:  46.4 KB

شاید وفا کے کھیل سے اکتا گیا تھا وہ

Name:  AIA-1.gif
Views: 1039
Size:  16.6 KB
Name:  AIA-2.gif
Views: 1018
Size:  13.5 KB

وہ شخص زبانی یاد ہوا

Name:  noshi gh.jpg
Views: 6
Size:  119.1 KB

تمہیں میری یاد آئے تو

وہ دَمکتی ہوئی لَو کہانی ہوئی، وہ چمکدار شعلہ، فسانہ ہُوا


وہ دَمکتی ہوئی لَو کہانی ہوئی، وہ چمکدار شعلہ، فسانہ ہُوا
وہ جو اُلجھا تھا وحشی ہَوا سے کبھی، اُس دِیے کو بُجھے تو زمانہ ہُوا

ایک خُوشبو سی پھیلی ہے چاروں طرف اُسکے امکان کی اُسکے اعلان کی
رابطہ پھر بھی اُس حُسنِ بے نام سے، جس کا جتنا ہوا، غائبانہ ہُوا

باغ میں پُھول اُس روز جو بھی کِھلا اُسکے بالوں میں سجنے کو بے چین تھا
جو ستارہ بھی اُس رات روشن ہُوا، اُسکی آنکھوں کی جانب روانہ ہُوا

کہکشاں سے پَرے، آسماں سے پَرے، رہگزارِ زمان و مکاں سے پرے
مجھ کو ہر حال میں ڈھونڈنا تھا اُسے، یہ زمین کا سفر تو بہانہ ہُوا

اب تو اُسکے دِنوں میں بہت دُور تک، آسماں ہیں نئے اور نئی دُھوپ ہے
اب کہاں یاد ہو گی اُسے رات وہ جس کو گزرے ہوئے اِک زمانہ ہُوا

موسمِ وصل میں خُوب ساماں ہوئے، ہم جو فصلِ بہاراں کے مہماں ہوئے
گھاس قالین کی طرح بِچھتی گئی، سر پہ ابرِ رواں، شامیانہ ہُوا

اب تو امجد جُدائی کے اُس موڑ تک درد کی دُھند ہے اور کچھ بھی نہیں
جانِ من! اب وہ دن لَوٹنے کے نہیں، چھوڑئیے اب وہ قصّہ پرانا ہُوا

Friday, 8 November 2013

چاند میری کھڑکی میں آئے


گئی بہار کی صورت وہ لوٹ آیا ہے


تجھ سے ملے بغیر دسمبر گزر گیا

ہم ہیں متاع کوچہ و بازار کی طرح

اس بچھڑے دوست کے لوٹ آنے کا

آج ایسا کرتے ہیں

کاش تم بھی موسم ہوتے

Name:  mausam tum.jpg
Views: 34
Size:  52.3 KB

یہ عجیب میری محبتیں

گرم ہاتھ وفا کی علامت ہوتے ہیں

میرے ہمسفر تجھے کیا خبر

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets