Friday, 12 September 2014

پچھتاوا ​



کیسے کہوں ؟ کس سے کہوں ؟ 
وہ خواب جو سجایا تھا 
عذاب بن کے چھایا ہے 
دشتِ جاں کی چوکھٹ پر 
تنہائی کی وحشت نے 
پھر تیرا سوگ منایا ہے 
ہر شام کے دریچوں پہ 
تمہاری یاد کی شمعوں کو 
اِس دل نے جلایا ہے 
بعد تم سے بچھڑنے کے 
ذہن ودل کی کھیتی میں 
پچھتاؤں کو اُگایا ہے ​


Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets