Thursday, 23 January 2014

شیشۂ جاں میں بس اک شخص کا چہرا دیکھا



عمر بھر شامِ غمِ خواب کا راستہ دیکھا 
شیشۂ جاں میں بس اک شخص کا چہرا دیکھا 

خواب کی آب ستاروں کی طرح بجھنے لگی 
نیند میں ڈوبے ہوئے شہر کا نقشہ دیکھا 

بے نوائی تیری صورت میری آواز میں تھی 
لفظ در لفظ اک آواز کا رشتہ دیکھا 

چار جانب تھا اندھیرا میری بینائی کا 
پسِ دیوارِ وفا، دن کا اُجالا دیکھا 

زخم در زخم اک انگشتِ حنائی دیکھی 
ریگ در ریگ چمکتا ہوا شیشہ دیکھا

تابشِ تیغ سے چندھیا گئیں آنکھیں خاور
دیکھنے والوں نے کب قتل کیا حیلہ دیکھا

Tuesday, 21 January 2014

یہ ہجر و وصال بھی عجب ہیں



آئینوں میں خواب ایک سے ہیں
موسم سرِ آب ایک سے ہیں

ہر شخص کے دکھ الگ الگ ہیں
پڑھیے تو نصاب ایک سے ہیں

آنکھیں ہوں، ستارہ ہو کہ جگنو
یہ سارے شہاب ایک سے ہیں

یہ ہجر و وصال بھی عجب ہیں
دونوں کے عذاب ایک سے ہیں

اس کوفۂ تشنگی میں خاور
دریا و سراب ایک سے ہیں

Monday, 20 January 2014

درد کی بارش

مجھ کو جینے کی دعا دو گے تو مر جا'ونگی

دل ٹوٹے تو پھر کب جسم سنبھلتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ؟

 

جیسے پہاڑ پھسلتا ہے 
دھیرے دھیرے اور پھر یکدم جیسے پہاڑ پھسلتا ہے 
اِک مدَّت تک دُکھ کا شعلہ اندر اندر جلتا ہے
کوئی شے آسائش کو آزار بناتی رہتی ہے 
کھوکھلی خواہش جینے کو دشوار بناتی رہتی ہے
تنھائی چھپ چھپ کر دل میں خار بناتی رہتی ہے
مٹی مٹتے مٹتے بھی آثار بناتی رہتی ہے
گدلا چشمہ قطرہ قطرہ آنسو آنسو ڈھلتا ہے 
سارے کاہی خاکی بندھن اک اک کرکے ٹوٹتے ہیں
گیلی مٹی رفتہ رفتہ حوصلہ چھوڑتی جاتی ہے
اور پھر ایک دن 
خاک کا تودہ چلتا ہے
منظر رنگ بدلتا ہے 
دل ٹوٹے تو پھر کب جسم سنبھلتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ؟

موسم ہجر ٹھہر جائے تو کیا ہوتا ہے؟

Friday, 10 January 2014

میں خیال ہوں کسی اور کا مجھے سوچتا کوئی اور ہے

مجھے یہ ڈر ہے تیری آرزو نہ مٹ جائے

ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺁﺅ ﺗﻮ ﺗﻢ ﺍﺱ ﺷﮩﺮِ ﺗﻤﻨﺎ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻻﻧﺎ


ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺁﺅ ﺗﻮ

ﺗﻢ ﺍﺱ ﺷﮩﺮِ ﺗﻤﻨﺎ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻻﻧﺎ

ﮐﮧ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﻨﻮﺅﮞ ﮐﯽ

ﮐﮩﮑﺸﺎﺋﯿﮟ ﺟﮭﻠﻤﻼﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﺟﮩﺎﮞ ﺗﺘﻠﯽ ﮐﮯ ﺭﻧﮕﻮﮞ ﺳﮯ

ﻓﻀﺎﺋﯿﮟ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﻭﮨﺎﮞ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﻃﺮﻑ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻭﻓﺎ ﮐﯽ

ﮨﮯ

ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﻭﮞ ﺳﮯ

ﻧﻈﺮ ﺳﮯ ﭼﮭﻮ ﮔﯿﺎ ﭘﻞ ﺑﮭﺮ ﻣﮩﮏ

ﺍﭨﮭﺎ

ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺁﺅ ﺗﻮ

ﺗﻢ ﺍﺱ ﺷﮩﺮِ ﺗﻤﻨﺎ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻻﻧﺎ

ﺟﮩﺎﮞ ﺭﯾﺖ ﮐﮯ ﺫﺭﮮ ﺳﺘﺎﺭﮮ ﮨﯿﮟ

ﮔﻞ ﻭ ﺑﻠﺒﻞ، ﻣﺎﻭ ﮦ ﺍﻧﺠﻢ ﻭﻓﺎ ﮐﮯ

ﺍﺳﺘﻌﺎﺭﮮ ﮨﯿﮟ

ﺟﮩﺎﮞ ﺩﻝ ﻭﮦ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ

ﮐﺌﯽ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﮨﯿﮟ

ﺟﮩﺎﮞ ﻗﺴﻤﺖ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﯼ ﻣﭩﮭﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ

ﺟﮕﻤﮕﺎﺗﯽ ﮨﮯ

ﺟﮩﺎﮞ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﮐﯽ ﻟﮯ ﭘﺮ ﺑﮯ

ﺧﻮﺩﯼ 
نغمے ﺳﻨﺎﺗﯽ ﮨﮯ

ﺩﺳﻤﺒﺮ ﮨﻢ ﺳﮯ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮭﻮ

ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺑﺎﺑﺖ

ﯾﮩﺎﮞ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭﮮ ﮐﺎﺭﻭﺍﮞ

ﮐﯽ ﮔﺮﺩ ﭨﮭﺮﯼ ﮨﮯ

ﻣﺤﺒﺖ ﺑﺮﻑ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﻭﺭ

ﺩﮬﻮﭖ ﮐﮯ ﮐﮭﯿﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﮔﺘﯽ ﮨﮯ

ﯾﮩﺎﮞ ﺟﺐ ﺻﺒﺢ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺷﺐ

ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﺳﭙﻨﮯ

ﺭﺍﮐﮫ ﮐﮯ ﮈﮬﯿﺮ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ

ﮈﮬﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﯾﮩﺎﮞ ﺟﺰﺑﻮﮞ ﮐﯽ ﭨﻮﭨﯽ ﮐﺮﭼﯿﺎﮞ

ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﺒﺘﯽ ﮨﯿﮟ

ﯾﮩﺎﮞ ﺩﻝ ﮐﮯ ﻟﮩﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﻠﮑﻮﮞ

ﮐﻮ ﮈﺑﻮ ﮐﺮ ﮨﻢ ﺳﻨﮩﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ

ﺑﻨﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﭘﮭﺮ ﺍﻥ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﺩﺭﯾﺪﮦ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﯿﻨﺎ،

ﮔﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻤﮑﻦ

ﻣﮕﺮ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺁﺅ

ﺗﻮ

ﺗﻢ ﺍﺱ ﺷﮩﺮِ ﺗﻤﻨﺎ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻻﻧﺎ

میں نے اس جان بہاراں کو بہت یاد کیا

تم سر راہ وفا دیکھتے رہ جا'و گے

Name:  zalim%20ab%20k%20bhi.jpg
Views: 347
Size:  76.0 KB
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets