Wednesday, 11 June 2014

ہمارے پاس گزرے موسموں کی چند یادیں ہیں

Image

مجھے تیری محبت نے بہت بزدل بنا ڈالا

Image

وہ جو ایک خواب سی رات تھی


دعائے سال نو

Image

اِک تازہ حکایت ہے

Sad Lovers - OpinionatedMale.com

اِک شخص کو دیکھا تھا
تاروں کی طرح ہم نے
اِک شخص کو چاہا تھا
اپنوں کی طرح ہم نے
وہ شخص قیامت تھا
کیا اُس کی کریں باتیں
کب ملتا کِسی سے تھا
ہم سے تھیں ملاقاتیں
آنکھیں تھیں کہ جادو تھا
پلکیں تھیں کہ تلواریں
دشمن بھی اگر دیکھے
سو جان سے دل ہارے
کچھ تم سے وہ ملتا تھا
ہاں ! تم سا ہی لگتا تھا
وہ شخص ہمیں اِک دن
اپنوں کی طرح بھولا
تاروں کی طرح ڈوبا
پھر ہاتھ نہ آیا وہ
ہم نے تو بہت ڈھونڈا
تم کس لیے چونکے ہو ؟؟
کب ذکر تمھارا ہے ؟
کب تم سے تقاضہ ہے ؟
کب تم سے شکایت ہے ؟
اِک تازہ حکایت ہے 
سُن لو تو عنایت ہے​

مکالماتی نظم

Image

Sunday, 8 June 2014

Umr Guzri Hai Teri Yaad Ka Nasha Kartay



Umr Guzri Hai Teri Yaad Ka Nasha Kartay

Ab Tera Zikr Na Chhairain To Badan Toot'ta Hai

عمر گزری ہے تیری یاد کا نشہ کرتے 
اب تیرا ذکر نہ چھیڑیں تو بدن ٹوٹتا ہے



Suno Jaanaan!


Suno Jaanaan!
Tumhari Shabnami Aahat Meray Ander Dharakti Hai
Magar Jab Khaamshi Say Tum Koi Maani Nhi Laitiin
To Yeh Dil Rooth Jata Hai
Meray Ander Kahin Par Kuch Achanak Toot Jata Hai

رقص زنجیر پہن کر بھی کیا جاتا ہے


Bichra tha koi raat ko khawabon kay safar men



Uljhay huye hain palkon men shabnam kay qatray
Bichra tha koi raat ko khawabon kay safar men

تیرے عشق نچایا



Your love has made me dance.

Your love has made a place in my heart;
See how I have drained the cup of hemlock
Do not tarry now o Physician !, or I am lost!

Your love has made me dance.


The sun has set, dusk settles on the sky;
My life!, My life for another glimpse of your countenance.
I erred when you called me and I did not follow you.

Your love has made me dance.


Mother, do not deter me from my obsession;
No one can bring back to shore, a boat that has been swept away by the current.
My mind had deserted me when I decided not to go with my beloved.

Your love has made me dance.

A peacock sings in the garden of my love;
I see my Ka'aba, my Qibla in the countenance of my beloved.
The one who wounded my heart and left me, never to look back.

Your love has made me dance.

My Lord finally brought me to Shah Inayat's door;
Who robed me in garments of green and red.
As soon as I began my dance, Lo ! I found my beloved.

Your love has made me dance.

Janay kis ka ho betha hoon



Sudh budh apni kho betha hoon
Janay kis ka ho betha hoon

آنکھ گلابی مست نظر ہے

دل نے دہرایا کوئی حرف وفا آہستہ

Mein woh saayal hoon jisay koi sadaa yaad nhi



Mein nay palkon say dar e yaar pay dastak di hai
Mein woh saayal hoon jisay koi sadaa yaad nhi

تیرے بدلنے پہ کیا گلہ

شہر کی آوارہ گلیوں میں



چوک سے چل کر، منڈی سے ہو کر
لال گلی سے گزری ہے کاغذ کی کشتی
بارش کے لاوارث پانی پر بیٹھی بیچاری کشتی
شہر کی آوارہ گلیوں میں سہمی سہمی گھوم رہی ہے
پوچھ رہی ہے
ہر کشتی کا ساحل ہوتا ہے کیا میرا بھی کوئی ساحل ہوگا
بھولے بھالے اک بچے نے
بےمعنی کو معنی دے کر
ردی کے کاغذ پر کیسا ظلم کیا

Saturday, 7 June 2014

اب کے برس بھی



اب کے برس بھی نینوں میں رتجگے بسے رہے
اب کے برس بھی اندھیروں میں سحر ڈھونڈتے رہے
اب کے برس بھی فضا تعصب سے پُر تھی
اب کے برس بھی خنجر آستینوں میں چھپے رہے
اب کے برس بھی بھروسہ ہم دوستوں پر کرتے رہے
اب کے برس بھی ترے آنے کی ہم کو آس تھی
اب کے برس بھی انتظار میں جلتے رہے
اب کے برس بھی سندیسے ہوا لاتی رہی
اب کے برس بھی نرگس کے پھول کمرہ بھرتے رہے۔

اب یہ سوچیں تو آنکھ بھر آئے



ان دنوں شہر بھر کے رستوں میں
تھم گئی ہے بلا کی ویرانی
عکس در عکس ڈستی رہتی ہے
بے صدا آئینوں کو حیرانی
سارے چہروں کے رنگ پھیکے ہیں
ساری آنکھیں اُجاڑ لگتی ہیں
سارے دن آہٹوں کی گنتی میں
ساری راتیں پہاڑ لگتی ہیں
بُجھتی جاتی ہیں یاد کی شمعیں
اپنی پلکوں سے آنسوؤں کے نگین
ٹُوٹتے ہیں تو دل نہیں چُنتا
جیسے شاخوں سے زرد رو پتّے
ٹُوٹتے ہیں، کوئی نہیں چُنتا
تُو کہاں ہے، کہاں نہیں ہے تُو
ہم سے کیا پوچھنا مزاجِ حیات
ہم تو بس اک دریدہ دامن میں
بھر کے خاکسترِ دیارِ وفا
لے کے صدیوں کی باس پھرتے ہیں
اِن دنوں شہر بھر کے رستوں میں
ہم اکیلے اُداس پھرتے ہیں
اب یہ سوچیں تو آنکھ بھر آئے
اِن اکیلے اُجاڑ رستوں میں
تو بھی شاید کہیں نظر آئے

بے موسم کی بارش



بے موسم کی بارش میں
سوئی محبت جاگ جاتی ہے
کل جو ہوئی
اچانک شہر میں بارش
تو جھٹ سے تیرا خیال
ساتھ لے آئی
ایسے لگا جیسے خزاں میں
جھونکا ہوا کا آیا ہے
سوکھے سوکھے
بے بو پتوں میں
خوشبو کا احساس لایا ہے
پھر کیا
قطرہ قطرہ تیری یادیں
من کو مہکاتی رہیں
گرج چمک بار بار
دل کی دہلیزیں ہلاتی رہیں
تمیں پتہ ہے
مجھے بے موسمی بارش
ذرا اچھی نہیں لگتی
یہ جب برستی ہے
سنبھلنا بہت مشکل ہو جاتا ہے
تیرے بن میں خوش ہوں
یہ بھانڈا پھوٹ جاتا ہے

Friday, 6 June 2014

Asaasa



aik aanchal say bandha hai sab kuch

aik tasweer aur tasweer peh bheegay huye hont

aik sandal ki unaabi pencil

aik bey'rabt sa ukhra hua khat

aik adad card

jis ko chooney say teri yaad chali aati hai

aur is card men rakhi hui akloti palak

jis say maanoos duaaon ki mehak aati hai

kisi gumnaam say shaayar ka adhura misra

aik paazaib say bichra hua ujla mauti

aik murjhai hui zard chanbeli ki kali

jis men ab bhi teri zulfon kay bhanwar liptay hain

aik boseeda sa question paper

jis kay konay peh likha naam abhi taaza hai

sharbati kaanch ki tooti hui naazuk choori

aik toota hua halka sa gulabi naakhun

aik gadla sa tissue paper bhi

jis peh mehkay huye ashkon kay nishaan zinda hain

yahi daulat hai yahi kuch hai asaasa mera

yahi daulat hai yahi kuch hai asaasa mera

aik aanchal say bundha hai sab kuch!

aik bheegay huye aanchal say bundha hai sab kuch!!!


Mannat

















Jab Tum Shaam-E-Widaa Ka
Aakhri Manzar

Meri Aankho'N Ko Sonp Ker
Duur Ja Chukey Thay

Tou Main Ney Dekha Keh

Meri Qameez K Daaman Per

Tumhari Zulfo'N Ka Ek Baal
Reh Gaya Hay

Main Wo Baal Chuum Ker

Wahi'N Kisi Jhuki Hui Shaakh
Mein Baandh Ker

Apney Tareek Shikast-Khorda
Muqaddar K Saath Laut Aaya Tha

Ab Suna Hay Keh Log

Us Pairr Ki Tehniyo'N Pey

Siyaah Rang K Dhaagey Baandh Ker

Jaaney Walo'N Ki Wapsi Ki Mannat
Maangtay Hain ... !!

اُس گھڑی یوں لگا



کپکپاتے لبوں سے جو اُس 

نے کہا

اب یہ طے ہے کہ ہم کو بچھڑ جانا ہے

اُس گھڑی یوں لگا

یہ اَنا بھی کسی ایسے حاکم سے کم تو نہیں

جس کے دربار میں بات جیسی بھی ہو

اُس کی تائید میں ہاتھ اُٹھانا پڑے

سر جھکانا پڑے

Thursday, 5 June 2014

آئینہ خانہ



مقید ہوں میں اِک آئینہ خانے میں
یہ کیسا آئینہ خانہ ہے
جس میں میرے چہرے کی جگہ
اب ہر طرف تیرا ہی چہرہ ہے
رہائی کی کوئی صورت نہیں ممکن
بدن سے روح تک پھیلے
سفالِ جاں کے ذرّے ذرّے پر جاناں
عجب رُخ سے
ترے شوریدہ چشم و لب کا پہرا ہے

ﻗﺴﻤﺖ



ﺗُﻮ ﻣﺠﮭﮯﮐﮩﺎﮞ ﺭﮐﮫ ﮐﮯﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﯽ
ﻣﯿﻠﮯ ﮐﭙﮍﻭﮞ ﮐﯽ ﮔﭩﮭﮍﯼ ﻣﯿﮟ
ﺑﺮﺗﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻟﻤﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ
ﻗﺪ ﺳﮯ ﺍﻭﻧﭽﯽ ﺷﯿﻠﻒ ﭘﺮ
ﻣﻘﻔّﻞ ﺩﺭﺍﺯ ﻣﯿﮟ

ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﮐﺴﯽ ﺩﻝ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﺩﺭﺍﺯ ﮔﻮﺷﮯ ﻣﯿﮟ
ﻗﺴﻤﺖ! ﮐﭽﮫ ﯾﺎﺩ ﮐﺮ
ﺗُﻮ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﮈﺍﻻ ﺗﮭﺎ
ﺍﭼﺎﺭ ﮐﮯ ﻣﺮﺗﺒﺎﻥ ﻣﯿﮟ
ﻣﺮﭼﻮﮞ ﮐﮯ ﮈﺑّﮯ ﻣﯿﮟ
ﻣﺎﭼﺲ ﮐﯽ ﮈﺑﯿﺎ ﻣﯿﮟ
ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﮐﯿﺲ ﻣﯿﮟ
ﻗﺴﻤﺖ! ﯾﺎﺩ ﮐﺮ
ﺗُﻮ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ؟
ﭼﻮﻟﮭﮯ ﮐﯽ ﺭﺍﮐﮫ ﻣﯿﮟ
ﯾﺎ ﭘﮭﺮ
ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﭘﯿﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺧﺎﮎ ﻣﯿﮟ....!!

تُجھ سے ھاریں کہ، تُجھے مات کریں


تُجھ سے خوشبو کے مراسم ھیں، تُجھے کیسے کہیں
میری سوچوں کا اُفق، تیری محبت کا فسوں
میرے جذبوں کا دل، تیری عنایت کی نظر
کیسے خوابوں کے جزیروں کو ہم تاراج کریں
تُجھ کو بھولیں کہ، تُجھے یاد کریں

اب کوئی اور نہیں میری تمنا کا دل
اب تو باقی ھی نہیں کچھ، جسے برباد کریں
تیری تقسیم کسی طور ہمیں منظور نہ تھی
پھر سرِبزم جو آئے تو، تہی داماں آئے
چُن لیا دردٍ مسیحائی، تیری دلدار نگاہی کے عوض
ہم نے جی ھار دیئے، لُٹ بھی گئے
کیسےممکن ھے بھلا،خود کو تیرے سحر سے آزاد کریں
تُجھ کو بھولیں کہ، تُجھے یاد کریں

اِس قدر سہل نہیں میری چاھت کا سفر
ھم نے کانٹے بھی چُنے روح کے آزار بھی سہے
ھم سے جذبوں کی شرح ھو نہ سکی، کیا کرتے
بس تیری جیت کی خواہش نے کیاھم کونڈھال
اب اِسی سوچ میں گذریں گے مہ و سال میرے
تُجھ سے ھاریں کہ، تُجھے مات کریں

Wednesday, 4 June 2014

اور پھر میری ہستی راکھ ہو کر تیرے قدم چھوئے گی













یہ تیری محبت تھی
جو اس پیکر میں ڈھلی
اب پیکرسلگے گا
تو ایک دھواں سا اٹھے گا
دھوئیں کا لرزاں بدن
آہستہ سے کہے گا
جو بھی ہوا بہتی ہے
درگاہ سے گذرتی ہے
تیری سانسوں کو چھوتی ہے
سائیں..!! آج مجھے
اس ہوا میں ملنا ہے
سائیں..!! تو اپنی چلم سے
تھوڑی سی آگ دے دے

میں تیری اگر بتی ہوں
اور تیری درگاہ پر مجھے
ایک گھڑی جلنا ہے۔ ۔ ۔
جب بتی سلگ جا ئے گی
ہلکی سی مہک آئے گی
اور پھر میری ہستی
راکھ ہو کر
تیرے قدم چھوئے گی
اسے تیری درگاہ کی
مٹی میں ملنا ہے۔ ۔ ۔

سائیں..!! تو اپنی چلم سے
تھوڑی سی آگ دے دے
میں تیری اگر بتی ہوں
اور تیری درگاہ پر مجھے
ایک گھڑی جلنا ہے۔ ۔

ﺍﺯﻝ ﺳﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ


ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﺮﺩﮮ
ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮫ ﭘﺎﺅ ﮔﮯ
ﻭﮦ ﺳﺐ ﭼﯿﺰﯾﮟ
ﺟﻮ ﺗﺎﺭﯾﮑﯽ ﮐﮯ ﮔﮩﺮﮮ ﺍﺳﻮﺩﯼ
ﻣﺤﻠﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﮔﻢ ہیں
ﺳﺮﺍﭘﺎ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ
ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﭼﮩﺮﺍ
ﺍﺩﺍﺳﯽ ﮐﺎ ﺑﺪﻥ
ﺁﻭﺍﺯ ﮐﮯ ﻟﺐ
ﺩﺭﺩ ﮐﮯ ﮈﻣﭙﻞ
ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﻣﺮﻣﺮﯾﮟ ﭘﺎﺅﮞ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﺣﻨﺎﺋﯽ ﺍﻧﮕﻠﯿﺎﮞ
ﺁﻓﺎﻕ ﺯﻟﻔﻮﮞ ﮐﮯ
ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﺳﺮﻣﺪﯼ ﺳﺎﯾﮧ....

ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﺮ ﺩﮮ
ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮫ ﭘﺎﺅ ﮔﮯ
ﺍﺑﺪ ﮐﯽ ﺩﮬﻨﺪ ﻣﯿﮟ ﻟﭙﭩﯽ
ﺍﺯﻝ ﺳﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ
ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ.....!!

بن تیرے ہر سانس گھائل ہے











میں تیری سانسوں کی تاروں میں ہوں
آسماں پر چمکتے ہوئے سب ستاروں میں ہوں
میں ۔ ۔ ۔ سمندر کی ہر اک لہر میں
ترے گزرے ہر پہر میں ہوں
تری آنکھ میں تیرتی سب گلابی
مرے نام کی ہے
ترے لہجے کی سب تھکن
میری ہی یاد کی ہے ‘‘
مرے ہم نشیں
تُو یہ کہتا ہے
’بن تیرے ہر سانس گھائل ہے
پر کیا کروں
بیچ میں زمانہ یہ حائل ہے‘‘
اے ہم نشیں سچ بتا
کیا ترا دل بھی قائل ہے
کہ بیچ اپنے زمانہ ہی حائل ہے؟

ہم دشتِ جنوں کے سودائی



ہم دشتِ جنوں کے سودائی۔۔۔ ۔۔۔ ۔
ہم گردِ سفر، ہم نقشِ قدم۔۔
ہم سوزِطلب، ہم طرزِ فغاں---
ہم رنج چمن، ہم فصل خزاں ۔۔۔ 
ہم حیرت و حسرت و یاس و الم---
ہم دشت جنوں کے سودائی

یہ دشتِ جنوں، یہ پاگل پن ۔۔
یہ پیچھا کرتی رسوائی---
یہ رنج و الم، یہ حزن و ملال۔۔۔ 
یہ نالہء شب، یہ سوزِ کمال---
دل میں کہیں بے نام چبھن۔۔
اور حدِ نظر تک تنہائی ---
ہم دشتِ جنوں کے سودائی---

اب جان ہماری چُھوٹے بھی۔۔
یہ دشتِ جنوں ہی تھک جائے --
جو روح و بدن کا رشتہ تھا۔۔
کئی سال ہوئے وہ ٹوٹ گیا --
اب دل کا دھڑکنا رک جائے۔۔
اب سانس کی ڈوری ٹوٹے بھی --
ہم دشتِ جنوں کے سودائی۔۔۔

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets