Tuesday, 27 January 2015

حوصلہ مجھ میں بھی بَلا کا تھا


حوصلہ مجھ میں بھی بَلا کا تھا
راستہ غالبًا وَفا کا تھا

جل بجھیں تتلیاں محبت کی 
دَشت بپھرا ہُوا اَنا کا تھا

میں دَلائل پہ تکیہ کر بیٹھا
آہ ! وُہ وَقت اِلتجا کا تھا

کل جسے عُمر بھر کو چھوڑ دِیا
پیار بھی اُس سے اِنتہا کا تھا

ہر دُعا دی جدائی پر اُس نے
لیکن اَنداز بد دُعا کا تھا

سانس روکے کھڑا تھا مَلَکُ الموت
سامنا دیپ کو ہَوا کا تھا

بھولنے والا لوٹ تو آیا
وَقت مغرب کا یا عشا کا تھا

رُک گیا میں سزا سے کچھ پہلے
اُس کو اِحساس خُود خطا کا تھا

بُت کدے میں مرا تو پھر کیا ہے ؟
ماننے والا تو خدا کا تھا

سَب خزانے منگا لیے رَب نے
فیصلہ عشق کی جزا کا تھا 

قیس تھا لاجواب ، لیلیٰ بھی
جب سوال ایک کی بقا کا تھا

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets