Friday, 28 August 2015

ay dais say aanay walay bata

ay dais say aanay walay bata
woh shehar jo hum say chhoota hai,woh shehar hamara kesa hai
sab dost hamain pyaray hain magar woh jaan say pyara kesa hai

shab bazm e hareefaan sajti hai ya shaam dhalay so jatay hain
yaaron ki basar auqaat hai kaya,har anjuman aara kesa hai

jab bhi mai'khanay bnd he thay aur waa dar e zindaan rehta tha
ab mufti e deen kaya kehta hai,mausom ka ishara kesa hai

mai'khanay ka pindaar gaya,paimaanay ka mayaar kahan
kal talkhi e mai khalti thi,ab zehar gawara kesa hai

woh paas nhi,ehsaas to hai,,ik yaad to hai,ik aas to hai
darya e judaai men dekho tinkay ka sahara kesa hai

mulkon mulkon ghoomay hain bohat,jaagay hain bohat,roye hain bohat
ab tum ko bataayen kaya yaro,duniya ka nazaara kesa hai

yeh sham e sitam kat'ti he nhi,yeh zulmat e shab ghat'ti he nhi
meray bd'qismat logon ki qismat ka sitara kesa hai

kaya kooye nigaaran men ab bhi ushaaq ka mela lagta hai
ahal e dil nay qatil kay liye maqtal ko sanwaara kesa hai

kaya ab bhi hamaray gaaon men ghunghru hain hawa kay paaon men
ya aag lagi hai chhaaon men,ab waqt ka dhaara kesa hai

qaasid kay labon par kaya ab bhi aata hai hamara naam kabhi
woh bhi to khabar rakhta ho ga yeh jhagra sara kesa hai

her aik kasheeda qamat par kaya ab bhi kamandain parti hain
jab say woh maseeha daar hua, her dard ka maara kesa hai

kehtay hain keh ghar ab zindaan hain,suntay hain keh zindaan matal hain
yeh jabr khuda kay naam pay hai,yeh zulm khuda ra kesa hai

pindaar salamat hain keh nhi,bas yeh dekho,yeh mat dekho
jaan kitni reza reza hai,dil para para kesa hai

ay dais say aanay walay magar tum nay to na itna bhi poocha
woh kawi jisay bnbaas mila,woh dard ka maara kesa hai

                                      اے دیس سے آنے والے بتا 
وہ شہر جو ہم سے چھوٹا ہے، وہ شہر ہمارا کیسا ہے
سب دوست ہمیں پیارے ہیں مگر وہ جان سے پیارا کیسا ہے
شب بزمِ حریفاں سجتی ہے یا شام ڈھلے سو جاتے ہیں
یاروں کی بسر اوقات ہے کیا، ہر انجمن آرا کیسا ہے
جب بھی میخانے بند ہی تھے اور وا درِ زنداں رہتا تھا
اب مفتیِ دیں کیا کہتا ہے، موسم کا اشارہ کیسا ہے
میخانے کا پندار گیا، پیمانے کا معیار کہاں
کل تلخیَ مے بھی کھلتی تھی، اب زہر گوارا کیسا ہے
وہ پاس نہیں، احساس تو ہے، اک یاد تو ہے، اک آس توہے
دریائے جدائی میں دیکھو، تنک کا سہارا کیسا ہے
ملکوں ملکوں گھومے ہیں بہت، جاگے ہیں بہت، روئے ہیں بہت
اب تم کو بتائیں کیا یارو، دنیا کا نظارا کیسا ہے
یہ شامِ ستم کٹتی ہی نہیں، یہ ظلمتِ شب گھٹتی ہی نہیں
میرے بد قسمت لوگوں کی قسمت کا ستارہ کیسا ہے
کیا کوئے نگاراں میں اب بھی عشاق کا میلہ لگتا ہے
اہلِ دل نے قاتل کے لئے مقتل کو سنوارا کیسا ہے
کیا اَب بھی ہمارے گاؤں میں گھنگھرو ہیں ہَوا کے پاؤں میں
یا آگ لگی ہے چھاؤں میں، اَب وقت کا دھارا کیسا ہے
قاصد کے لبوں پر کیا اب بھی آتا ہے ہمارا نام کبھی
وہ بھی تو خبر رکھتا ہو گا، یہ جھگڑا سارا کیسا ہے
ہر ایک کشیدہ قامت پر کیا اب بھی کمندیں پڑتی ہیں
جب سے وہ مسیحا دار ہُوا، ہر درد کا مارا کیسا ہے
کہتے ہیں کہ گھر اَب زنداں ہیں، سنتے ہیں کہ زنداں مقتل ہیں
یہ جبر خدا کے نام پہ ہے، یہ ظلم خدارا کیسا ہے
پندار سلامت ہے کہ نہیں، بس یہ دیکھو، یہ مت دیکھو
جاں کتنی ریزہ ریزہ ہے، دل پارا پارا کیسا ہے
اے دیس سے آنے والے مگر تم نے تو نہ اتنا بھی پوچھا
وہ کوی جسے بن باس ملا، وہ درد کا مارا کیسا ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets