Friday, 14 August 2015

میں نے برسوں عشق نماز پڑھی



میں نے برسوں عشق نماز پڑھی
تسبیحِ محبت ہاتھ لئے

چلی ہجر کی میں تبلیغ کو اب
تری چاہت کی آیات لئے

اک آگ وہی نمرود کی ہے
میں اشک ہوں اپنے ساتھ لئے

مجذوب ہوا دل بنجارہ
بس زخموں کی سوغات لئے

دل مسجد آنکھ مصلیٰ ہے
بیٹھی ہوں خالی ہاتھ لئے


اے کاش کہیں سے آجائے
وہ وعدوں کی خیرات لئے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets