Thursday, 20 August 2015

وہ پھول کاڑھتی رہی


خزاں کی زرد شال پر وہ پھول کاڑھتی رہی
اُجڑتے ماہ و سال پر وہ پھول کاڑھتی رہی
دِلوں کے مرغزار میں
عجب اُداس شام تھی
گزرتے پل کے ہونٹ پر
وہ منتشر سا نام تھی
دکھوں کی تند دھار پر
لہولہان انگلیاں
مگر وہ سانس سانس اپنی عمر کے لباس پر
لہو کشیدتی رہی
گلاب سینچتی رہی
خزاں کی زرد شال پر اُجڑتے ماہ و سال پر
وہ پھول کاڑھتی رہی وہ پھول کاڑھتی رہی
Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets