Friday, 2 October 2015

تو بھی رخصت ہو رہا ہے دھوپ بھی ڈھلنے کو ہے


تو بھی رخصت ہو رہا ہے دھوپ بھی ڈھلنے کو ہے 
میرے اندر اک چراغ شام غم جلنے کو ہے

کب تلک اس ہجر میں آخر کو رونا چاہیئے ؟
آنکھ بھی خون ہوگئ دامن بھی اب گلنے کو ہے

گلستاں میں پڑ گئی ہے رسم تجسیم بہار
اپنے چہرے پر ہر اک گل ،خون دل ملنے کو ہے

اجنبی سی سرزمیں ناآشنا سے لوگ ہیں
ایک سورج تھا شناسا ،وہ بھی اب ڈھلنے کو ہے

ہر نئی منزل کی جانب صورت ابر رواں
میرے ہاتھوں سے نکل کر میرا دل چلنے کو ہے

شہر پر طوفاں سے پہلے کا سناٹا ہے آج 
حادثہ ہونے کو ہے یا سانحہ ٹلنے کو ہے

اک ہوائے تند اور ہمراہ کچھ چنگاریاں
خاک سی اڑنے کو ہے اور آگ سی جلنے کو ہے

سامنے ہے نیند کی لمبی مسافت آج شب 
کاروان انجم وماہتاب بھی چلنے کو ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets