Friday, 2 October 2015

چراغِ عِشق جلانے کی رات آئی ہے



چراغِ عِشق جلانے کی رات آئی ہے
کسی کو اپنا بنانے کی رات آئی ہے

فلک کا چاند بھی شرما کے مُنہ چھپائے گا
نقاب رُخ سے اُٹھانے کی رات آئی ہے

نِگاہِ ساقی سے پیہم چھلک رہی ہے شراب
پیو ! کہ پینے پلانے کی رات آئی ہے 

وہ آج آئے ہیں محفل میں چاندنی لے کر
کہ روشنی میں نہانے کی رات آئی ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets