Friday, 20 November 2015

کسی بچھڑے ہوئے کا کوئی پتہ درکار ہے تجھ کو؟

taqdeer

کبھی تقدیر گر میری
مجھے رستے میں مل جائے
کبھی بھولے سے ہی گَر وہ
مری بستی میں آجائے
مرے گھر کا پتہ پوچھے
کبھی مجھ سے کہے آکر
کہ میں تقدیر ہوں تیری
بتا کیا چاہئے تجھ کو؟
خوشی درکار ہے تجھ کو؟
ہنسی درکار ہے تجھ کو؟
وفا درکار ہے تجھ کو ؟
کسی بچھڑے ہوئے کا کوئی پتہ درکار ہے تجھ کو؟
بتا تقدیر کی ماری کہ کیا درکار ہے تجھ کو ؟
کبھی تقدیر گر پوچھے تو میں کچھ بھی نہ مانگوں گی
میں اے جانِ جہاں تقدیر سے تیرا نہ پوچھوں گی
نہ تیرا پیار اور چاہت
نہ جذبوں کی کوئی حدت
نہ ہونٹوں کی کوئی لرزش
نہ ہاتھوں کی کوئی جنبش
نہ خوشبو دار سا موسم
نہ زخموں کے لئے مرہم
نہ کوئی امید مانگوں گی
نہ اس سے عید مانگوں گی
نہ میں تیری محبت کی کوئی تجدید مانگوں گی
نہ اُس بھولے ہوئے وعدے کی اب تائید مانگوں گی
بس اے جانِ جہاں تقدیر سے میں اتنا پوچھوں گی
رفاقت اور محبت کا
ریاضت اور عبادت کا
یہی انجام ہوتا ہے ؟
مسلسل ایک سجدے کا یہی انعام ہوتا ہے ؟
کسی کے نام پر کوئی اس طرح بے نام ہوتا ہے؟
مثالِ شام ہوتا ہے؟

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets