Wednesday, 25 November 2015

محبت کیوں ہو جاتی ہے



مجھے کوئی نہیں بتاتا
کہ دل جُڑنے کے بعد ٹوٹ کیوں جاتے ہیں
گھنے درختوں سے سنائی دینے والی کوئل کی کُوک،
ہُوک کیسے بن جاتی ہے
جب تنہائی منڈیروں سے آنگن میں اترنے لگتی ہے
تو اپنی ہی باہیں اپنے گلے میں ڈالنے کو جی کیوں چاہتا ہے
مجھے کوئی نہیں بتاتا
پرانے گھروں کے برآمدوں میں اداسی کیوں اونگھتی رہتی ہے
آنگنوں میں بیٹھی رہ جانے والی
لڑکیوں کے سروں میں دھوپ کیسے اتر آتی ہے
اور ان کے نیم تاریک، کمروں میں روشن
آنسوؤں کے دیپ کیوں نہیں بجھتے
مجھے کوئی نہیں بتاتا
کہ بانسری کے چھید چھید سینے سے لہو کیوں ٹپکتا ہے
ایک بار بچھڑ جانے والے دل سے کیوں نہیں جاتے
اور قربتوں کی دھوپ کن گھاٹیوں پر جا اترتی ہے
مجھے کوئی نہیں بتاتا
چڑیاں کیوں چہچہاتی ہیں
ہوا کے دوش پر پھیلتی خوشبو کس کے سندیسے لاتی ہے
مٹھی میں بند کر لینے کے باوجود
جگنو کی روشنی کیوں نہیں چھپتی
محبت کیوں ہو جاتی ہے

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets