Monday, 7 December 2015

Janay kyun mujhay pagal sa kar deti hain yeh December ki raaten





















پھر دسمبر کی یکم آئی ہے اور وہی پرانی یخ بستہ راتیں
پھر تیری یادیں ہیں دل میں اور دسمبر کی راتیں

Phir December ki yakkam aaii hai aur whi purani yakh'basta raaten
Phir teri yaaden hain dil men aur December ki raaten

دن تو کسی طور کٹ ہی جاتا ہے اے متاع زیست
مگر مجھے سونے نہیں دیتیں یہ دسمبر کی راتیں

Din to kisi taur katt he jata hai ay mataa e zeest
Magar mujhay sonay nhi detiin yeh December ki raaten

یہ دو ہی چیزیں جاں کا عذاب بنی ہیں ہمدم
اک ہر قدم پہ رقیب دوسری یہ دسمبر کی راتیں

Yeh do he cheezain jaan ka azaab banni hain hamdam
Ik her qadam pay raqeeb doosri yeh Decemberr ki raaten

تو اسی موسم میں مجھ کو تنہا چھوڑ گیا تھا
میرا گواہ ہے یہ چاند اور دسمبر کی راتیں

Tu isi mausom men mujh ko tanha chhorr gaya tha
Mera gawah hai yeh chaand aur December ki raaten

ہر ماہ کی راتیں اترتی ہیں میرے آنگن میں
جانے کیوں مجھے پاگل سا کر دیتی ہیں یہ دسمبر کی راتیں

Her Maah ki raaten utarti hain meray aangan men
Janay kyun mujhay pagal sa kar deti hain yeh December ki raaten

میری کل محبت کا حاصل بس یہی ہے فیاض
بکھرے پھول تیز ہوائیں اور دسمبر کی راتیں

Meri kull muhabbat ka haasil bass yehi hai Fayyaz
Bikhray phool taiz hawaayen aur December ki raaten

Post a Comment
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets