Wednesday, 29 April 2015

Yeh kesa nafraton ka ghuup andhera


                                                 

                                                   Yeh Kaisa Nafraton Ka Ghuup Andhera !
                                                    Hamaray Darmiyaan Thehra Hua Hai

دو قیدی



Dukhon ka devta



Dukhon ka devta kitnay dinon say
Meray ghar mehmaan thehra hua hai

Tuesday, 28 April 2015

sab mohabbat ka ik pehar hai



yeh ko palkon pay rimJhim sitaaro'n ka maila sa hai
yeh jo teray bina koii itna akaila sa hai
"Zindagi" Teri yaadon say mehka hua shehar hai
sab mohabbat ka ik pehar hai...

saahilo'n pay gharonday banaaey thay Hum nay, Tumhe'n yaad hai?
rang barish men kaisay uraae'y thay Hum nay, Tumhe'n yaad hai..?
jaanay kis k liay ghar sajaa'ey thay Hum nay , Tumhe'n yaad hai..?
koi khushboo ka jhonka idhar aa nikalta kahii'n
guum hai neendo'n k sehra men khawabo'n ka rasta kahii'n
har khushi aatay jaatay huay waqt ki lehar hai
sab Mohabbat ka ik pehar hai...

Zindagii dhoop chaao'n ka ik khail hai, bheer chat'ti nahi
aur isi khail min din guzarta nahi, raat kat'ti nahi
pyaar kartay huay aadmi ki kabhi, umr ghat'ti nahi
dil kee dehleez par aks raoshan Teray naam say
ratJagay aaeeno'n men khile'n hain kahin shaam say
aik darya hai chaaro'n taraf, darmyaa'n behar hai...
sab mohabbat ka ik pehar hai...

سب محبت کا اک پہر ہے



یہ جو پلکوں پہ رِم جھِم ستاروں کا میلہ سا ہے​

یہ جو تیرے بنا کوئی اتنا اکیلا سا ہے​

زندگی تیری یادوں سے مہکا ہوا شہر ہے​

سب محبت کا اک پہر ہے



ساحلوں پہ گھروندے بنائے تھے ہم نے، تمہیں یاد ہے

رنگ بارش میں کیسے اڑائے تھے ہم نے، تمہیں یاد ہے

جانے کس کے لیے گھر سجائے تھے ہم نے، تمہیں یاد ہے

​کوئی خوشبو کا جھونکا ادھر آ نکلتا کہیں​

گم ہے نیندوں کے صحرا میں خوابوں کا رستہ کہیں​

ہر خوشی آتے جاتے ہوئے وقت کی لہر ہے​



زندگی دھوپ چھاؤں کا اک کھیل ہے، بھیڑ چھَٹتی نہیں​

اور اسی کھیل میں دن گزرتا نہیں، رات کٹتی نہیں​

پیار کرتے ہوئے آدمی کی عمر، کبھی گھٹتی نہیں​

​دل کی دہلیز پر عکسِ روشن تیرے نام سے​

رت جگے آئینوں میں کھلے ہیں کہیں شام سے​

ایک دریا ہے چاروں طرف، درمیاں لہر ہے ​

سب محبت کا اک پہر ہے

Friday, 17 April 2015

شب فراق


کتنی بدل چکی ہے رت جزبے بھی وہ نہیں رہے

بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا

[​IMG]

کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مرجاؤں گا


کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مرجاؤں گا

میں تو دریا ہوں سمندر میں اتر جاؤں گا

تیرے پہلو سے جو اٹھوں گا تو مشکل یہ ہے

صرف اک شخص کو پاؤں گا جدھر جاؤں گا

اب ترے شہر میں آؤں گا مسافر کی طرح

سایۂ ابر کی مانند گزر جاؤں گا

تیرا پیماں وفا راہ کی دیوار بنا

ورنہ سوچا تھا کہ جب چاہوں گا، مرجاؤں گا

چارہ سازوں سے الگ ہے مرا معیار کہ میں

زخم کھاؤں گا تو کچھ اور سنور جاؤں گا

اب تو خورشید کو ڈوبے ہوئے صدیاں گزریں

اب اسے ڈھونڈنے میں تابہ سحر جاؤں گا

زندگی شمع کی مانند جلاتا ہوں ندیم

بجھ تو جاؤں گا مگر صبح تو کرجاؤں گا

درد پھولوں کی طرح مہکیں، اگر تُو آئے

jessica lynn hepner,violin,alone,girl,loneliness,sad

رنگ باتیں کریں اور باتوں سے خوشبو آئے

درد پھولوں کی طرح مہکیں، اگر تُو آئے

بھیگ جاتی ہیں اس امید پر آنکھیں ہر شام

شاید اس رات وہ مہتاب، لبِ جُو آئے

ہم تیری یاد سے کترا کے گزر جاتے، مگر

راہ میں پھولوں کے لب، سایوں کے گیسو آئے

وہی لب تشنگی اپنی، وہی ترغیبِ سراب

دشتِ معلوم کی، ہم آخری حد چھو آئے

سینے ویران ہوئے، انجمن آباد رہی

کتنے گل چہرے گئے، کتنے پری رُو آئے

آزمائش کی گھڑی سے گزر آئے تو ضیا

جشنِ غم جاری ہوا، آنکھ میں آنسو آئے

بڑا ویران موسم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

sad,sadness,sad girl,pain,cry,crying,tears

بڑا ویران موسم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

ہر اک جانب تیرا غم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

ہمارا دل کسی گہری جدائی کے بھنور میں ہے

ہماری آنکھ بھی نم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

مرے ہم راہ اگرچہ دور تک لوگوں کی رونق ہے

مگر جیسے کوئی کم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

تمہیں تو علم ہے میرے دل وحشی کے زخموں کو

تمہارا وصل مرہم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

اندھیری رات کی گہری خموشی اور تنہا دل

دیئے کی لو بھی مدھم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

تمہارے روٹھ جانے سے ہم کو ایسا لگتا ہے

مقدر ہم سے برہم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

ہواؤں اور پھولوں کی نئی خوشبو بتاتی ہے

ترے آنے کا موسم ہے کبھی ملنے چلے آؤ

وہ دل کہ تیرے لیے بیقرار اب بھی ہے


تیرے خوشبو میں بسے خط میں جلاتا کیسے


تیری آنکھیں

[​IMG]

بھولی لڑکی


غم عشق کتنا عجیب ہے


بیتی ہے اک عمر تمہیں ڈھونڈتے ہوے

[​IMG]

ان جھیل سی گہری آنکھوں میں


حقیقت کو بنا دیتی ہیں افسانے تری آنکھیں



متاع کوثر و زمزم کے پیمانے تری آنکھیں
فرشتوں کو بنا دیتی ہیں دیوانے تری آنکھیں

جہان رنگ و بو الجھا ہوا ہے ان کے ڈوروں میں 
لگی ہیں کاکل تقدیر سلجھانے تری آنکھیں

اشاروں سے دلوں کو چھیڑ کر اقرار کرتی ہیں
اٹھاتی ہیں بہارِ نو کے نذرانے تری آنکھیں

وہ دیوانے زمام لالہ و گل تھام لیتے ہیں
جنہیں منسوب کر دیتی ہیں ویرانے تری آنکھیں

شگوفوں کو شراروں کا مچلتا روپ دیتی ہیں
حقیقت کو بنا دیتی ہیں افسانے تری آنکھیں

تیرے آنے کی جب خبر مہکے



تیرے آنے کی جب خبر مہکے
تیری خوشبو سے سارا گھر مہکے

شام مہکے تیرے تصور سے
شام کے بعد پھر سحر مہکے

رات بھر سوچتا رہا تجھ کو
ذہن و دل میرے رات بھر مہکے

یاد آئے تو دل منور ہو
دید ہو جائے تو نظر مہکے

تو گھڑی دو گھڑی جہاں بیٹھے
وہ زمیں مہکے وہ شجر مہکے

اب عمر نہ موسم نہ وہ رستے کہ وہ بلٹے



خوش چشم وخوش اطوار و خوش آور و خوش آندام



وہ یار پری چہرہ کہ کل شب کو سدھارا
طوفاں تھا، طلاطم تھا چھلاوہ تھا شرارا

گل بیز و گہر ریز و گہر و گہر تاب
کلیوں نے جسے رنگ دیا گل نے سنواراہ

نو خستہ و نورس و نو طلعت و نو خیز
وہ نقش جسے خود یدِ قدرت نے ابھارا

خوں ریز کم آمیز و دل آویز و جنوں خیز
ہنستا ہوا مہتاب ، دمکتا ہو تارا

خوش چشم وخوش اطوار و خوش آور و خوش آندام 
ایک خال پہ قرباں سمر قندو بخارا

گل پیرہن و گل بدن و گل رخ و گل رنگ
ایمان شکن، آئینہ جبیں انجمن آرا

سرشار جوانی تھی کہ امڈے ہوئے بادل
شاداب تبسم تھا کہ جنت کا نظارا

زلفیں تھیں کہ ساون کی مچلتی ہوئی راتیں
شوخی تھی کہ سیلاب کا مڑتا ہوا دھارا​

مرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا



مرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا 
ایسا لگتا ہے جو یہ ہاتھ دعا کو اٹھیں 
خود فرشتے چلے آتے ہوں زمیں کی جانب 
سونپ کر مرمریں ہاتھوں کی ہتھیلی کو حناء 
جو بھی مانگا ہو وہ چپ چاپ دیے جاتے ہوں 
میرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا

ان کی خوشبو سے معطر ہے مرا سارا وجود 
انہی ہاتھوں میں مرے خواب چُھپے ہیں مولا 
اُنگلیاں مجھ کو محبت میں بھگو دیتی ہیں 
انہی پوروں نے مرے درد چُنے ہیں مولا 
ان کی رگ رگ میں محبت ہی محبت رکھنا 
میرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا 

اِنہی ہاتھوں کی لکیروں میں مقدر ہے مرا 
یہ جو کونے میں ستارہ ہے سکندر ہے مرا 
خواب سے نرم خیالوں کی طرح نازک ہیں 
ان کے ہر لَمس میں میرے لئے چاہت رکھنا 
مرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا 
مرے مولا یہ حسیں ہاتھ سلامت رکھنا 

آخر شب کے ہمسفر


Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets