Monday, 28 September 2015

Hum teray baray men bohat sochtay hain

















Jis terha loag khasaray men bohat sochtay hain
Is terha hum teray baray men bohat sochtay hain

Wednesday, 23 September 2015

آنکھوں کو اب نہ ڈھانپ مجھے ڈوبتا بھی دیکھ


اے عشق تیری توقیر ہے کیا


اپنے آپ نال گل٘اں


ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں


بارش میں کیا تنہا بھیگنا لڑکی



بارش میں کیا تنہا بھیگنا لڑکی

اسے بلا، جس کی چاہت میں


تیرا تن من بھیگا ہے


پیار کی بارش سے بڑھ کر کیا بارش ہوگی؟

 
اور جب اس بارش کے بعد


ہجر کی پہلی دھوپ کھلے گی


تجھ پر رنگ کے اسم کھلیں گے

Yeh kesa khawab tha dharka sa lag gaya dil ko

















Yeh kesa khawab tha dharka sa lag gaya dil ko
Ik shakhs pareshaan meri talaash men hai

زندگی کی راہوں میں رنج و غم کے میلے ہیں


میں پا سکا نہ کبھی اس خلش سے چھٹکارا


Sunday, 20 September 2015

Taveez
















Koi taveez do radd e bla ka
Meray peechay muhabbat parr gaee hai

Ishq jab hadd say guzarta hai,amar hota hai



Mein nay maana keh yeh taqdeer ka likha hai attal
Mera emaan hai, duaaon men asar hota hai
Tujh ko maanguun ga khuda say junoon ke hadd tak
Ishq jab hadd say guzarta hai,amar hota hai

میـں نے مانـا کـہ یـہ تقـدیـر کـا لـکھـا ہـے اٹـل

میـــرا ایـمــان ہـــے، دعاؤں میں اثـر ہـوتــا ہـے


تجھ کو مانگوں گا خدا سے جنوں کی حد تک


عشــق جـب حــد سے گزرتا ہے، امَر ہوتا ہـے

نقشِ خیال دل سے مٹایا نہیں ہنوز


نقشِ خیال دل سے مٹایا نہیں ہنوز
بے درد میں نے تجھ کو بھلایا نہیں ہنوز

تیری ہی زلفِ ناز کا اب تک اسیر ہوں
یعنی کسی کے دامِ میں آیا نہیں ہنوز

یادش بخیر جس پہ کبھی تھی تری نظر
وہ دل کسی سے میں نے لگایا نہیں ہنوز

محرابِ جاں میں تونے جلایا تھا خود جسے
سینے کا وہ چراغ بجھایا نہیں ہنوز

بے ہوش ہو کے جلد تجھے ہوش آگیا
میں بد نصیب ہوش میں آیا نہیں ہنوز

تو کاروبارِ شوق میں تنہا نہیں رہا
میرا کسی نے ہاتھ بٹایا نہیں ہنوز

گردن کو آج بھی تری بانہوں کی یاد ہے
یہ منتوں کا طوق بڑھایا نہیں ہنوز

مرکر بھی آئے گی یہ صدا قبرِ جوشؔ سے
بے درد میں نے تجھ کو بھلایا نہیں ہنوز

کل یوں ہی تیرا تذکرہ نکلا


کل یوں ہی تیرا تذکرہ نکلا
پھر جو یادوں کا سلسلہ نکلا

لوگ کب کب کے آشنا نکلے
وقت کتنا گریز پا نکلا

عشق میں بھی سیاستیں نکلیں
قربتوں میں بھی فاصلہ نکلا

رات بھی آج بیکراں نکلی
چاند بھی آج غمزدہ نکلا

سُنتے آئے تھے قصہء مجنوں
اب جو دیکھا تو واقعہ نکلا

ہم نے مانا وہ بے وفا ہی سہی
کیا کرو گے جو با وفا نکلا

مختصر تھیں فراق کی گھڑیاں
پھیر لیکن حساب کا نکلا

کہو، کیا داستاں لائے ہو دل والوں کی بستی سے


غزل کو پھر سجا کے صُورتِ محبوب لایا ہوں
سُنو اہلِ سُخن! میں پھر نیا اسلُوب لایا ہوں

کہو، دستِ محبت سے ہر اِک در پر یہ دستک کیوں
کہا ، سب کے لیے میں پیار کا مکتُوب لایا ہوں

کہو، کیا داستاں لائے ہو دل والوں کی بستی سے
کہا، اِک واقعہ میں آپ سے منسُوب لایا ہوں

کہو ، یہ جسم کِس کا، جاں کِس کی، رُوح کِس کی ہے
کہا، تیرے لیے سب کچھ مرے محبُوب لایا ہوں

کہو، کیسے مٹا ڈالوں انا، میں التجا کر کے
کہا ، میں بھی تو لب پر عرضِ نامطلُوب لایا ہوں

کہو، سارا جہاں کیسے تمہارے گھر کے باہر ہے
کہا، سب جس کے دیوانے ہیں، وہ محبُوب لایا ہوں

کہو، پنہاں کِیا ہے کیا دلِ پردہ نشیں ہم سے
کہا، وصلِ نہاں کی خواہشِ محجُوب لایا ہوں

کہو،ٹُوٹے ہوئے شیشے پہ شبنم کی نمی کیسی
کہا، قلبِ شکستہ، دیدہٴ مرطُوب لایا ہوں

کہو، غم لائے ہو کتنا محبت میں بچھڑنے کا
کہا، بس یہ سمجھ لو گریہٴ یعقُوب لایا ہوں

کہا ، تکلیف لایا ہوں، نہیں ہے اِنتہا جس کی
کہا ، میں بھی وہیں سے دامنِ ایوب لایا ہوں

کہو، غواص کیا لائے ہو بحر ِدل کے غوطے سے
کہا، لایا ہوں جو کچھ بھی، بہت ہی خُوب لایا ہوں

کہا، کیا لے کے آئے ہو جہانِ بیوفائی سے
کہا، اِک چشم حیراں، اِک دلِ مضرُوب لایا ہوں

کہو، تحفہ، عدیم اشعار میں کیا لے کے آئے ہو
کہا، شعروں کی سُولی پر دلِ مصلُوب لایا ہوں

تیری انجمن، تیرا ھر کرم،تیری چاھتیں تو چھن گئیں



یوں ماتمی سے لباس میں کوئی آہ و فغاں ھے آج بھی
جیسے چشم تر میں خواب کوئی پریشاں ھے آج بھی

میں زندگی کی راہ گزر پر در بدر ھوں اس لیے
کہ محبتوں کے شھر میں دل بے مکاں ھے آج بھی

تیری آرزو ھے بہت مگر،میری پہنچ نھیں ھے اس قدر
میری خواھشوں کے واسطے تو آسماں ھے آج بھی

میں توحید کے ھر نصاب سے ویسے تو مسلمان ھوں
پر تجھے پوجنے کی بات ھے تو دل بے ایمان ھے آج بھی

تیری انجمن،تیرا ھر کرم،تیری چاھتیں تو چھن گئیں
مگر درد جو میرا نصیب تھا وہ مھربان ھے آج بھی

تیری اذیتوں کا سوال ھے تو مجھے کل بھی ضبط پہ ناز تھا
تجھے کوسنے کی بات ھے تو دل بے زباں ھے آج بھی

کبھی درد حد سے بڑھا بھی تو میں تیری حد سے بڑھا نھیں
میری سانس کی تسبیحوں میں اک تو ھی رواں ھے آج بھی

سو بادلوں کے سلسلے میری چھت پہ برس کے چلے گئے
پر جلا جلا دھواں دھواں میرا آسماں ھے آج بھی

مجھے کل ملے تھے کچھ گلاب جو تیرے لیے یہ کہہ گئے
تیرے انتظار میں سوگوار گلشن کا سامان ھے آج بھی


اب لگن لگی کیہہ کریئے


اب لگن لگی کیہہ کریئے

نہ جی سکیئے نہ مریئے

ایہہ اگن برہوں دی بھاری

کوئی ہماری پریت نیاری

بن درشن کیسے تریئے

اب لگن لگی کیہہ کریئے

نہ جی سکیئے نہ مریئے

تم سنو ہماری بیناں

موہے رات دنے ناہیں چیناں

ہُن پی بن پلک نہ سریئے

اب لگن لگی کیہہ کریئے

نہ جی سکیئے نہ مریئے

بلھا پئی مصیبت بھاری

کوئی کرو ہماری کاری

ایہو جیہے دکھ کیسے جریئے

اب لگن لگی کیہہ کریئے

نہ جی سکیئے نہ مریئے

Wednesday, 16 September 2015

تمہاری یاد کی خوشبو، کمال کرتی ہے


تمہاری یاد کی خوشبو، کمال کرتی ہے
خلوصِ دل سے مری دیکھ بھال کرتی ہے

مجھے یہ جوڑ کے رکھتی ہے ہجر میں تجھ سے
یہ زندگی مرا کتنا خیال کرتی ہے

اکیلا گھومنے نکلوں تو راستے کی ہوا
تمہارے بارے میں مجھ سے سوال کرتی ہے

تمہارے غم میں سسکتی ہوئی یہ تنہائی
تمام رات بڑی قیل و قال کرتی ہے

توقعات ، مجھے توڑ پھوڑ دیتی ہیں
اُمید ، مجھ کو ہمیشہ نڈھال کرتی ہے

خُدا گواہ ، میں زندہ بدست مردہ ہوں
شبِ فراق ، بُرا میرا حال کرتی ہے

اگر یہ سچ ہے ، محبّت ہے زندگی مسعودؔ
تو پھر یہ کیوں میرا جینا محال کرتی ہے

Friday, 11 September 2015

یادوں کی گُونج دشتِ محبت میں اب بھی ہے`



یادوں کی گُونج دشتِ محبت میں اب بھی ہے
یہ دل گئے دنوں کی رفاقت میں اب بھی ہے

اِک یاد ہے جو نقش ہے لوحِ دماغ پر
اِک زخم ہے جو دل کی حِفاظت میں اب بھی ہے

رُکتے نہیں ہیں آنکھ میں آنسُو کِسی طرح
یہ کاروانِ شوق ، مُسافت میں اب بھی ہے

ترکِ تعلقات کو اِک عمر ہو چکی!
دل ہے کہ بے قرار محبت میں اب بھی ہے

سب دوست مصلحت کی دُکانوں پہ بِک گئے
دشمن تو پُرخلوص عداوت میں اب بھی ہے

آثارِ حشر سارے نمُودار ہو چکے
کہتے ہیں لوگ دیر قیامت میں اب بھی ہے

مجبُوریوں نے برف بنا دی اَنا، مگر
شعلہ سا ایک اپنی طبیعت میں اب بھی ہے

جس نے کیا تھا جرم وہ کب کا بَری ہوا
جو بےقصُور ہے، وہ عدالت میں اب بھی ہے

برسوں ہوئے جو زخمِ شناسائی سے ملا
وہ درد میری، اُس کی شراکت میں اب بھی ہے

مل جائے وہ کہیں تو اُسے کہنا اے ہوا
باقی ترا غموں کی حراست میں اب بھی ہے

Sunday, 6 September 2015

نغمہءِ عشق


نغمہ جو ختم بھی ہوا

ختم نہ ہو گی نغمگی

پھول جو سوکھ بھی گئے

یاد رہیں گی خوشبوئیں

پھول تو توڑے جاتے ہیں

تا کہ سجائی جا سکے

راحتِ یار کے لیے

پھولوں کی پتیوں سے سیج

تم تو چلے گئے مگر

یاد تمہاری رہ گئی

اور تمہاری یاد کی

خوشبوؤں میں بسی ہوئی

نرم و گداز سیج پر

سویا ہوا ہے میرا دل

میں تیرے شہر محبت میں ہوں وہ بیگانہ


نظر میں ڈھل کے ابھرتے ہیں دل کے افسانے 
یہ اور بات ہے ، دنیا نظر نہ پہچانے

وہ بزم دیکھی ہے میری نگاہ نے کہ جہاں 
بغیر شمع بھی جلتے رہے ہیں پروانے

یہ کیا بہار کا جوبن ، یہ کیا نشاط کا رنگ 
فسردہ میکدے والے ، اداس میخانے

مرے ندیم ! تری چشم التفات کی خیر 
بگڑ بگڑ کے سنورتے گیے ہیں افسانے

یہ کس کی چشم فسوں ساز کا کرشمہ ہے 
کہ ٹوٹ کر بھی سلامت ہیں دل کے بت خانے

نگاہ ناز میں دلسوزی نیاز کہاں 
یہ آشنائے نظر ہیں دلوں سے بیگانے

میں تیرے شہر محبت میں ہوں وہ بیگانہ
کہ آشنا بھی جسے دیکھ کر نہ پہچانے

وہ دیکھتی ہے تبسم میرے لبوں کی ہنسی 
جو میرے دل پہ گزرتی ہے ، کوئی کیا جانے

Thursday, 3 September 2015

میری محبت میں کہیں کوئی کمی تھی



پھر تم نے میری زیست میں ہلچل سی مچا دی

مشکل سے تو حالات کی رفتار تھمی تھی

حالات نے جب مجھ کو بنا ڈالا تھا پتھر 

پھر میرے لیے کوئی خوشی تھی نہ غمی تھی

اب کیسے کہیں کیسا تھا وہ ضبط کا عالم

ہونٹو ں پہ تبسم تھا تو آنکھوں میں نمی تھی

یا اُس کے ارادوں میں کوئی کھوٹ تھا عذرا 

یا میری محبت میں کہیں کوئی کمی تھی

یہ کس نے دستِ بریدہ کی فصل بوئی تھی


زوالِ شب میں کسی کی صدا نکل آئے
ستارہ ڈوبے ستارہ نما نکل آئے

عجب نہیں کہ یہ دریا نظر کا دھوکا ہو
عجب نہیں کہ کوئی راستہ نکل آئے

وہ حبس ہے کہ دعا کررہے ہیں سارے چراغ
اب اس طرف کوئی موجِ ہوا نکل آئے

یہ کس نے دستِ بریدہ کی فصل بوئی تھی
تمام شہر میں نخلِ دعا نکل آئے

خدا کرے صف سر دادگاں نہ ہو خالی
جو میں گروں تو کوئی دوسرا نکل آئے۔

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets