Friday, 11 December 2015

zard december ki sard shaameN agar sataayeN to loat aana



Kabhi yeh aaNkheN udaas ho kar bheeg jaayeN to loat aana 
zard december ki sard shaameN agar sataayeN to loat aana

hum isi jagah par roz aa kar tumhaara rasta takaa kareN gay 
tumhen naye shehar ki naii hawaayeN raas na aayeN to loat aana

kisi ki baateN buri lageN to suno wahaN pay zara na rukna 
kisi ki aaNkheN agar tumhaari haNsi urraayeN to loat aana

naye sapnay lageN na apney to puranay sapnay oarrh lena 
par dooriyoN ki taveel raateN har roz jagaayeN to loat aana

mehak ki rut meN behak kay humdum raastoN ko kho na dena 
wafaa kay jugnu jab bhi tum ko sadaa lagaayeN to loat aana

baadloN meN ghir gaye to hamaari yaadeN tang kareN gi 
jab baarishoN kay shareer mosam dil jalaayeN to liat aana

naey dinoN ki nai khushbu bohat mubaarak ho tum ko lekiN 
gaey dinoN ki puraani yaadeiN lahu rulaaeiN to laot aana

jism aur rooh ka ajeeb bandhan na-jaaney kis dum toot jaaye
suno tumheN hum jo aik pal ko kabhi bulaayeN to loat aana!

دسمبر میں چلے آؤ

‪deceber sad girl‬‏ کیلئے تصویری نتیجہ

دسمبر میں چلے آؤ۔ ۔ ۔
قبل اس کے۔ ۔ ۔
دسمبر کی ہواؤں سے رگوں میں خون کی گردش
ٹھہر جائے
جسم بے جان ہو جائے
تمہاری منتظر پلکیں جھپک جائیں
بسا جو خواب آنکھوں میں ہے وہ ارمان ہوجائے
برسوں کی ریاضت سے
جو دل کا گھر بنا ہے پھر سے وہ مکان ہو جائے
تمہارے نام کی تسبیح بھلادیں دھڑکنیں میری
یہ دل نادان ہو جائے
تیری چاہت کی خوشبو سے بسا آنگن جو دل کا ہے
وہ پھر ویران ہوجائے
قریب المرگ ہونے کا کوئی سامان ہوجائے
قبل اس کے۔ ۔ ۔
دسمبر کی یہ ننھی دھوپ کی کرنیں
شراروں کی طرح بن کر، میرا دامن جلا ڈالیں
بہت ممکن ہے
پھر دل بھی برف کی مانند پگھل جائے
ممکن پھر بھی یہ ہے جاناں۔ ۔ ۔
کہ تیری یاد بھی کہیں آہ بن کر نکل جائے
موسمِ دل بدل جائے ۔ ۔ ۔
یا پہلے کی طرح اب پھر دسمبر ہی نہ ڈھل جائے
!قبل اس کے۔ ۔ ۔
دسمبر اور ہم تیری راہوں میں بیٹھے تم کو یہ آواز
دیتے ہیں
کہ تم ملنے چلے آؤ
دسمبر میں چلے آؤ

Thursday, 10 December 2015

Is bar bhi kisi say december nahin ruka



Lambay safar ki oat men pal bar nahin ruka
Mein waqt k fareb men aa kar nahin ruka

Phir aa gaya aik naya sal dosto
Is bar bhi kisi say december nahin ruka

Lay kar kisi nay haath men kashkol-e-waqt
Aisa safar kiya keh kahin par nahin ruka

Manzar kay aks men koi chehra chatakh gaya
Sheshay kay pas aa kay jo pathar nahin ruka

Chalta raha adoo ki safain rondta huwa
Laakhon ka khoon-e-jigar kar k bhi lashkar nahin ruka

Bas yeh huwa keh Aakhri lamha bhi aa gaya
Dil ka tawaaf e koocha-e-dilbar nahin ruka

Monday, 7 December 2015

ﻟﮑﮫ ﺩﯾﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺭ ﭘﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺟﮕﮧ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻨﻊ ﮨﮯ



ﻟﮑﮫ ﺩﯾﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺭ ﭘﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ
ﺍﺱ ﺟﮕﮧ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻨﻊ ﮨﮯ

ﭘﯿﺎﺭﺍ ﮔﺮ ﮨﻮ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﮰﮐﺴﯽ ﮐﻮ
ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻨﻊ ﮨﮯ

ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺤﻔﻞ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﺎﮰ
ﭘﮩﻠﮯ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮭﮑﺎﮰ

ﻭﮦ ﺻﻨﻢ ﺟﻮ ﺧﺪﺍ ﺑﻦ ﮔﮱ ﮨﯿﮟ
ﺍﻥ ﮐﺎ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻨﻊ ﮨﮯ


جاگ اٹھے تو آہیں بھریں گے
حسن والوں کو رسوا کریں گے

سو گئے ہیں جو فرقت کے مارے
ان کو بیدار کرنا منع ہے

ہم نے کی عرض اے بندہ پرور
کیوں ستم ڈھا رہے ہو ہم پر

بات سن کر ہماری وہ  بولے
ہم سے تکرار کرنا منع ہے

سامنے جو کھلا ہے جھروکا
کھا نہ جانا قتیل ان کا دھوکا

اب بھی اپنے لیے اس گلی میں
شوقِ دیدار کرنا منع ہے

ﻟﮑﮫ ﺩﯾﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺭ ﭘﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ

ﺍﺱ ﺟﮕﮧ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻨﻊ ﮨﮯ

Janay kyun mujhay pagal sa kar deti hain yeh December ki raaten





















پھر دسمبر کی یکم آئی ہے اور وہی پرانی یخ بستہ راتیں
پھر تیری یادیں ہیں دل میں اور دسمبر کی راتیں

Phir December ki yakkam aaii hai aur whi purani yakh'basta raaten
Phir teri yaaden hain dil men aur December ki raaten

دن تو کسی طور کٹ ہی جاتا ہے اے متاع زیست
مگر مجھے سونے نہیں دیتیں یہ دسمبر کی راتیں

Din to kisi taur katt he jata hai ay mataa e zeest
Magar mujhay sonay nhi detiin yeh December ki raaten

یہ دو ہی چیزیں جاں کا عذاب بنی ہیں ہمدم
اک ہر قدم پہ رقیب دوسری یہ دسمبر کی راتیں

Yeh do he cheezain jaan ka azaab banni hain hamdam
Ik her qadam pay raqeeb doosri yeh Decemberr ki raaten

تو اسی موسم میں مجھ کو تنہا چھوڑ گیا تھا
میرا گواہ ہے یہ چاند اور دسمبر کی راتیں

Tu isi mausom men mujh ko tanha chhorr gaya tha
Mera gawah hai yeh chaand aur December ki raaten

ہر ماہ کی راتیں اترتی ہیں میرے آنگن میں
جانے کیوں مجھے پاگل سا کر دیتی ہیں یہ دسمبر کی راتیں

Her Maah ki raaten utarti hain meray aangan men
Janay kyun mujhay pagal sa kar deti hain yeh December ki raaten

میری کل محبت کا حاصل بس یہی ہے فیاض
بکھرے پھول تیز ہوائیں اور دسمبر کی راتیں

Meri kull muhabbat ka haasil bass yehi hai Fayyaz
Bikhray phool taiz hawaayen aur December ki raaten

Sunday, 6 December 2015

December Poetry


Please visit this page for the best collection of December poetry,


https://www.facebook.com/All.about.december/

محبت ریت جیسی تھی

میری چیزیں گم ہو جاتی ہیں

استعارہ ہوں میں منتظر آانکھ کا

مجھے آج بھی تم سے باتیں کرنا اچھا لگتا ھے



جانتی ھو میرا دل چاھتا ھے میں پھر کسی

فیک آئی ڈی سے تم سے عشق,کروں 

ہم پہروں باتیں کریں


مجھے آج بھی تم سے باتیں کرنا اچھا لگتا ھے یارا 


لیکن اب شاید اس کھیل میں مزا نہیں آئے گا


کیونکہ اب میں تمہاری ھر چال جانتا ھوں 


اب تم ھار جاؤ گی ____اور یہ مجھے قبول نہیں 


اب کے مجھے پتہ ھے 


وعدے تم جتنے کرو گی زباں سے کرو گی 

دل کا تو کہیں عمل دخل ھی نہیں 


نہیں 


نہیں 

مجھے اس کرب سے پھر نہیں گزرنا 
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...
Blogger Wordpress Gadgets